مندرجات کا رخ کریں

الکسکری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
محدث
الکسکری
معلومات شخصیت
پیدائش 1 اپریل 934ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بین النہرین   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 17 دسمبر 1023ء (89 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
صوبہ ہرات ،  افغانستان   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات طبعی موت
رہائش ہرات
شہریت خلافت عباسیہ
کنیت ابو فتح
لقب الکسکری
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
عملی زندگی
پیشہ محدث
شعبۂ عمل روایت حدیث

الکسکری (414ھ - 1023ء) ابو الفتح، ہلال بن محمد بن جعفر الکسکری، [1] الحفار، آپ حدیث کے راوی تھے۔ آپ اصل فارس میں کسکر سے [2] تھے۔ آپ کی پیدائش ربیع الآخر ( 322ھ ) میں ہوئی اور آپ کا نام کسکر کے نام پر رکھا گیا، جو عراق کا ایک قدیم گاؤں تھا ، جو مقام ذی قار کے قریب واقع ہے، آپ کی وفات عید کے دن [3] صفر چودہ سو چودہ ہجری ( 414ھ ) میں ہوئی [1] اور آپ کی عمر بانوے سال تھی۔ [4]

شیوخ[ترمیم]

اس نے احمد بن مقدام عجلی کے ساتھی حسین بن یحییٰ بن عباس القطان سے سنا، جو ان کے آخری اصحاب میں سے تھے، اور اسماعیل صفار، علی بن محمد واعظ ، عثمان بن احمد الدقاق، اسماعیل بن علی خزاعی، ابو حسین احمد بن عثمان الادمی، اور ابو قاسم اسماعیل بن اخی، دعبل خزائی، ابن بختری، اور دیگر محدثین کا ایک گروہ .

تلامذہ[ترمیم]

راوی: ابو بکر خطیب، ابو نصر عبید اللہ ابن سعید سجزی، صدر ابو عبد اللہ ثقفی، علی ابن احمد ابن بصری، ابو فضل عمر عبید اللہ باقل، عاصم ابن باقل حسن، طاہر ابن حسین قواس، محمد ابن محمد ابن مسلمہ، اور حسن بن محمد بن زینہ، ہبۃ اللہ بن عبدالرزاق انصاری، ابو فضل علی بن حسین فلقی، ابو فضل بکر احمد بن علی بن ثابت خطیب الحافظ، ابو قاسم عبد الکریم بن ہوازن قشیری، ابو بکر بیحقی، خطیب البغدادی، اور دوسرے محدثین، اور ان سے روایت کرنے والے آخری شخص۔ ابو فوارس تارد بن محمد بن علی زینبی ہاشمی۔ [5] [1] .[4]

الکسکری سے روایت کرنے والے محدثین[ترمیم]

اسماعیل بن محمد الصفار: نحو کا عالم اور اہل کسکر سے اس کی شاعری مشہور ہے، اور شاہد علی (546/5) کے مخطوطات میں کتاب حدیث الصفار کا حصہ ہے۔ آپ کی وفات 341ھ میں بغداد میں ہوئی۔اور جس نے کسکری کی سند سے روایت کیا: خطیب بغدادی: وہ احمد بن علی بغدادی ہیں، جنہیں الخطیب کہا جاتا ہے، ان کی پیدائش 392 ہجری میں کوفہ اور مکہ کے درمیان ہوئی تھی۔ ادب کا ماہر تھا، اور پڑھنے اور لکھنے کا شوق رکھتا تھا، اس نے 56 کتابوں کے نام لکھے، جن میں سے سب سے اچھی کتاب "تاریخ بغداد" ہے۔ ان کی وفات (463ھ) میں ہوئی۔ ابوبکر البیہقی: وہ احمد حسین بن علی بیہقی ہیں۔ آپ کی ولادت 384ھ میں نیشاپور میں ہوئی، آپ نے تقریباً ایک ہزار جلدیں لکھیں، جن میں "السنن الکبری"، دس جلدوں میں "السنن الصغرا"، "المعارف" اور دیگر کتب شامل ہیں۔ ، اور مخطوطات کا ایک اشاریہ جس میں "معرفۃ السن ولاثار " شامل ہے، جس کی دوسری جلد بیروت میں شائع ہوئی۔ اور ایک کتاب «القراءة خلف الإمام» شامل ہے۔ [6] [7] [8]

وفات[ترمیم]

آپ کی وفات صفر کے مہینے میں سنہ 414ھ میں ہرات میں ہوئی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ الذهبي، شمس الدين، سير أعلام النبلاء، مؤسسة الرسالة: بيروت،1983،ط1،ج17 ترجمة 178، ص293
  2. الزركلي، خير الدين، سير الأعلام على الأعوام، دار القلم للطباعة النشر: بيروت، 1990،م1،ص313
  3. الذهبي، شمس الدين، تاريخ الإسلام ووفيات المشاهير والأعلام، دار الكتاب العرب:بيروت، 1987،ط1، ج28،ص4361
  4. ^ ا ب السمعاني، الأنساب، ج5، ص 70
  5. الذهبي، شمس الدين، تاريخ الإسلام ووفيات المشاهير والأعلام، دار الكتاب العرب:بيروت، 1987،ط1، ج28،ص4361
  6. الحنبلي، شذرات الذهب في أخبار من ذهب، دار الآفاق الجديدة:بيروت، 1980، ج3، ص201
  7. الزركلي، خير الدين، سير الأعلام على الأعوام، دار القلم للطباعة النشر: بيروت، 1990،م1، ص172
  8. الزركلي، خير الدين، سير الأعلام على الأعوام، دار القلم للطباعة النشر: بيروت، 1990،م1،ص116