الیاس عشقی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ڈاکٹر الیاس عشقی
معلومات شخصیت
عرفیت الیاس عشقی
نسل مہاجر
عملی زندگی
صنف شاعری، ترجمہ، تنقید
تعليم پی ایچ ڈی مقالہ اُردو شاعری پر مغرب کے اثرات
پیشہ شاعر، ادیب، مترجم، براڈکاسٹر، نقاد
اعزازات
ستارہ امتیاز
P literature.svg باب ادب

ڈاکٹر الیاس عشقی (پیدائش: 25 دسمبر،1922ء - وفات: 12 جنوری، 2007ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے فارسی اور اردو کے ممتاز شاعر، ادیب، مترجم، براڈکاسٹر اور نقاد تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

الیاس عشقی 25 دسمبر،1922ء کو جے پور، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ ان کا اصل نام محمد الیاس خان تھا۔[1][2]۔ انہوں 1982ء میں سندھ یونیورسٹی سے 1982ء میں ڈاکٹر غلام مصطفیٰ خان کی نگرانی میں اُردو شاعری پر مغرب کے اثرات پر مقالہ لکھ کر پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ الیاس عشقی طویل عرصے تک ریڈیو پاکستان سے وابستہ رہے اور کنٹرولر آف پروگرامز کے عہدے سے ریٹائر ہوئے۔[1]

ادبی خدمات[ترمیم]

الیاس عشقی اردو اور فارسی زبانوں میں شاعری کرتے تھے۔ ان کی تصانیف میں شعر آشوب (فارسی شاعری)، دوہا ہزاری، گنبدِ بے در (غزلیں)، سندھی شاعری کے تراجم پر مشتمل موج موج مہران اور شاہ عبداللطیف بھٹائی کی شاعری پر تحقیقی و تنقیدی کتاب آوازِ لطیف شائع ہوچکی ہیں۔[1]

اعزازات[ترمیم]

حکومت پاکستان نے الیاس عشقی کی ادبی و فنی خدمات کے اعتراف میں 2000ء کو ستارہ امتیاز سے نوازا۔[1]

تصانیف[ترمیم]

  • 1979ء - شعر آشوب (فارسی شاعری)
  • 2003ء - دوہا ہزاری
  • 2006ء -گنبدِ بے درد (غزلیں)
  • 1973ء -موج موج مہران (سندھی شاعری کے تراجم)
  • 2014ء -آوازِ لطیف

وفات[ترمیم]

ڈاکٹر الیاس عشقی 12 جنوری، 2007ء کو سعودی عرب میں انتقال کر گئے اور حیدرآباد، سندھ کے علاقے لطیف آباد نمبر 9 کے میر فضل ٹاؤن قبرستان میں سپرِ خاک ہوئے۔[1][2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ص 981، پاکستان کرونیکل، عقیل عباس جعفری، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء
  2. ^ ا ب ڈاکٹر الیاس عشقی،سوانح و تصانیف ویب، پاکستان