امبیکاپور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
امبیکاپور
شہر
امبیکاپور، چھتیس گڑھ
امبیکاپور، چھتیس گڑھ
ملک Flag of India.svg بھارت
ریاست چھتیس گڑھ
ضلع سرگوجا
بلندی 623 میل (2,044 فٹ)
آبادی (2011)[1]
 • شہر 214,575
 • میٹرو[2] 243,173
زبانیں
 • دفتری ہندی، چھتیس گڑھی
منطقۂ وقت بھارتی معیاری وقت (UTC+5:30)
پن کوڈ 497001
گاڑی کی نمبر پلیٹ CG 15 or MP 27
ویب سائٹ surguja.nic.in

امبیکاپور چھتیس گڑھ کے سرگوجا ضلع کا دار الحکومت ہے۔ اس کا نام ہندو دیوی امبیکا کے نام پر رکھا گیا ہے۔ عوامی کہاوتوں کے مطابق امبیكاپور کا پرانا نام بیکنٹھ پور تھا۔ سرگوجا ضلع کے دیگر شہر ہیں رام گڑھ، مہیش پور، كدر گڑھ، بھیاتھان، مینپاٹ، ٹاٹاپانی، ٹنٹنی پہاڑ وغیرہ۔

قیام[ترمیم]

اس ضلع کا قیام 1 جنوری 1948ء کو ہوا تھا جو 1 نومبر 1956ء کو صوبہ مدھیہ پردیش کی تعمیر کے تحت مدھیہ پردیش میں شامل کر دیا گیا۔ اس کے بعد 25 مئی 1998ء کو اس ضلع کی پہلا انتظامی تقسیم کرکے کوریا ضلع بنایا گیا۔ جس کے بعد موجودہ سرگوجا ضلع کا رقبہ 16359 مربع کلومیٹر ہے۔ 1 نومبر 2000ء جب صوبہ چھتیس گڑھ صوبہ مدھیہ پردیش سے الگ ہوا تب سرگوجا ضلع کو چھتیس گڑھ ریاست میں شامل کر دیا گیا۔

آب و ہوا[ترمیم]

آب و ہوا وہ جغرافیائی حالت ہے جو تمام مقامی کیفیات کو متاثر کرتی ہے۔ سرگوجا ضلع بھارت کے مرکزی حصے میں واقع ہے جس کی وجہ سے یہاں کی آب و ہوا گرم - موسمی ہے۔ سرگوجا ضلع میں موسم خزاں کے تین موسم ہوتے ہیں جو مندرجہ ذیل ہے۔

موسم گرما خزاں

یہ خزاں مارچ سے جون ماہ تک ہوتی ہے چونکہ خط سرطان ضلع کے وسط میں پرتاب پور سے ہو کر گزرتا ہے اس لیے گرمیوں میں سورج کی کرنیں یہاں براہ راست پڑتی ہیں۔ اس لیے یہاں کا درجہ حرارت گرمیوں میں بلند ہوتا ہے۔ اس خزاں میں ضلع کے پتھریلی علاقوں میں موسم گرما ٹھنڈ اور خوشگوار ہوتا ہے۔ اس دوران سرگوجا ضلع کے مین پاٹ جسے چھتیس گڈھ کے شملہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، اس کا درجہ حرارت نسبتا کم ہوتا ہے جس سے وہاں کا موسم بھی خوشگوار رہتا ہے۔

موسم باراں

یہ خزاں جولائی سے اکتوبر تک ہوتی ہے، اس ضلع میں جولائی اور اگست میں سب سے زیادہ بارش ہوتی ہے۔ ضلع کے مغربی علاقے میں بارش سب سے زیادہ ہوتی ہے۔ یہاں کی بارش موسمی ہوتی ہے۔

موسم سرما

یہ خزاں کی شروعات نومبر میں ہوتی ہے اور فروری تک رہتی ہے، جنوری یہاں کا سب سے زیادہ سرد مہینہ ہوتا ہے۔ ضلع کے کوہستانی علاقوں جیسے مین پاٹ، سامری پاٹ میں درجہ حرارت 5.0 سے کم چلا جاتا ہے۔ کبھی کبھی ان علاقوں میں ژالہ باری بھی ہوتی ہے۔

سیاحتی مقامات[ترمیم]

چندرا گرام[ترمیم]

امبیکاپور- رایگڈھ شاہراہ پر 15 کلومیٹر کی دوری پر چندرا گرام واقع ہے۔ اس گرام سے شمالی سمت میں تین کلومیٹر کی دوری پر پانی کا آبشار واقع ہے۔ اس جھرنے کے پاس ہی محکمہ جنگلات کی ایک نرسری ہے، جہاں مختلف قسم کے درخت - پودوں کی نمائش کا اہتمام کیا گیا ہے۔ سال بھر سیاح اس جھرنے کے قدرتی حسن سے لطف اندوز ہونے جاتے ہیں۔ یہاں پر ایک تتلی پارک بھی تیار کیا جا رہا ہے۔

ٹھنٹھنی پتھر[ترمیم]

امبیکاپور شہر سے 12 کلومیٹر کی دوری پر دریما ہوائی اڈاہے۔ دریما ہوائی اڈے کے پاس بڑے بڑے پتھروں کا ڈھیر ہے۔ ان پتھروں کو کسی ٹھوس چیز سے ٹھوكنے پر آواز آتی ہے۔ سب سے زیادہ حیرت کی بات یہ ہے کہ یہ آواز مختلف دھاتوں کی آتی ہے۔ ان میں سے کسی کسی پتھر کو ٹھوكنے پر کھلے برتن کی طرح آواز آتی ہے۔ ان پتھروں میں بیٹھ کر یا لیٹ کر بجانے سے بھی اس آواز میں کوئی فرق نہیں پڑتا ہے۔ ایک ہی پتھر کے دو ٹكڑے الگ الگ آواز پیدا کرتے ہیں۔ اسی وجہ ان پتھروں کو لوگ ٹھنٹھنی پتھر کہتے ہے۔

ستمہلا[ترمیم]

امبیکاپور کے جنوب میں لکھن پور سے تقریباً دس کلومیٹر دور كلچا گرام واقع ہے، یہیں پر ستمہلا نامی مقام ہے۔ یہاں سات مقامات پر کھنڈر ہیں۔ یہ مانا جاتا ہے کہ یہاں پر قدیم دور میں سات بڑے شیو مندر تھے، جبکہ قبائل کا کہنا ہے کہ اس مقام پر قدیم دور میں کسی بادشاہ کا سات میدان والا محل تھا۔ یہاں کے سیاحتی مقامات شیو مندر، شٹبھجاكار کنواں اور سورج مورتی ہے۔

مہامایا مندر[ترمیم]

سرگوجا ضلع کے دار الحکومت امبیکاپور کی مشرقی پہاڑی پر قدیم مہامایا دیوی کا مندر واقع ہے۔ انہی مہامایا یا امبیکا دیوی کے نام پر ضلع کے دار الحکومت کا نام امبیکاپور رکھا گیا۔ ایک قول کے مطابق امبیکاپور میں واقع مہامایا مندر میں مہامایا دیوی کا جسم موجود ہے اور ان کا سر بلاسپور ضلع کے رتن پور کے مہامایا مندر میں ہے۔ اس مندر کی تعمیر مہامایا رگھوناتھ شرن سنگھ دیو نے کرائی تھا۔ چیتر (پہلا ہندی مہینہ) اور شردی نوراتری (مخصوص نو راتوں) میں خصوصاً بے شمار معتقدین اس مندر میں جا کر پوجا کرتے ہے۔

تکیا[ترمیم]

امبیکاپور شہر کے شمال-مشرقی سرے پر تکیہ گرام واقع ہے اسی گرام میں بابا مراد شاہ، بابا محمد شاہ اور انہی کے پاؤں کی طرف ایک چھوٹی مزار ان کے طوطے کی ہے یہاں پر تمام مذاہب اور فرقہ کے لوگ جمع ہوتے ہیں، مزار پر چادر چڈھاتے ہیں اور منتیں مانگتے ہے۔ بابا مرادشاه اپنے "مراد" شاہ نام کے مطابق سب کی مرادیں پوری کرتے ہیں۔ اسی مزار کے پاس ہی ایک دیوی کا بھی مقام ہے اس طرح اس مقام پر ہندو دیوی دیوتا اور مزار کا ایک ہی مقام پر ہونا مذہبی اور سماجی ہم آہنگی کی زندہ مثال ہے۔

بلدوار غار[ترمیم]

یہ غار شیوپور کے قریب امبیکاپور سے ایک گھنٹے کے فاصلے پر ہے۔ اس میں کئی قدیم مجسمے ہیں۔ اس میں مہان نامی ایک دریا کا پانی نکلتا رہتا ہے، وہیں اس دریا کا آغاز بھی ہے۔ اس غار کا دوسرا سرا مہامایا مندر کے قریب نکلتا ہے۔

بانك پانی تالاب[ترمیم]

براہ امبیکاپور اسی کلومیٹر کی دوری پر اوڈگی ترقیاتی بلاک ہے، یہاں سے 15 کلومیٹر کی دوری پر پہاڑیوں کے دامن میں بانك گرام بسا ہے۔ اسی گرام کے پاس رهند دریا محکمہ جنگلات کے مہمان خانہ کے پاس نیم چندراكار بہتی ہوئی ایک بہت بڑا پانی کا تالاب بناتا ہے۔ اسے ہی بانك پانی تالاب کہا جاتا ہے۔ یہ پانی کا تالاب انتہائی گہرا ہے، جس میں مچھلیاں پائی جاتی ہے۔ یہاں سال بھر سیاحوں کی مچھلیوں کا شکار کرنے اور گھومنے آتے ہیں .

قریبی مقامات[ترمیم]

سیدم آبشار[ترمیم]

امبیکاپور - رائے گڈھ راستے پر امبیکاپور سے 45 کلومیٹر کی دوری پر سیدم نام کا گاؤں ہے۔ اس کے جنوبی سمت میں دو کلومیٹر دور پہاڑیوں کے درمیان ایک خوبصورت آبشار بہتا ہے۔ اس آبشار کے گرنے والے مقام پر ایک پانی کا تالاب بنا ہوا ہے۔ یہاں پر ایک شیو مندر بھی ہے۔ شوراتری پر سے دم گاؤں میں میلہ لگتا ہے۔ اس آبشار کو رام آبشار کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ یہاں سیاحوں سال بھر جاتے ہیں۔

مین پاٹ[ترمیم]

مین پاٹ امبیکاپور سے 75 کلومیٹر دوری پر ہے اسے چھتیس گڑھ کا شملہ کہا جاتا ہے۔ مین پاٹ وندھ پہاڑ مالا پر واقع ہے جس کی سمندر کی سطح سے اونچائی 3781 فٹ ہے اس کی لمبائی 28 کلومیٹر اور چوڈای 10 سے 13 کلو میٹر ہے امبیکاپور سے مین پاٹ جانے کے لیے دو راستے ہے پہلا راستہ امبیکاپور - سیتاپور روڈ سے ہو کر جاتا اور دوسرا گرام دریما ہوتے ہوئے مین پاٹ تک جاتا ہے۔ قدرتی وسائل سے بھرپور یہ ایک خوبصورت مقام ہے۔ یہاں سربھنجا تالاب، ٹایگر پواں ئیٹ اور مچھلی پواں ئیٹ اہم سیاحتی مقامات ہیں۔ مین پاٹ ہی رہند اور مانڈ دریا کا سنگم ہوا ہے۔

اسے چھتیس گڑھ کا تبت بھی کہا جاتا ہے۔ یہاں تبتی لوگوں کی زندگی اور بودھ مندر توجہ کا مرکز ہے۔ یہاں پر ایک فوجی اسکول کی تعمیر کا بھی منصوبہ ہے۔ یہ قالین اور پامیرین کتوں کے لیے مشہور ہے۔

شیوپور[ترمیم]

امبیکاپور سے پرتاب پور کی دوری 45 کلومیٹر ہے۔ پرتاب پور سے 04 کلومیٹر فاصلے پر شیوپور گرام کے پاس ایک پہاڑی کے دامن میں انتہائی دلکش قدرتی ماحول میں ایک قدیم شیو مندر ہے۔ اس پہاڑی سے ایک چشمہ جھرنے کی طرح بہتا ہے۔ یہ آبشار شیو لنگ پر گنگادھارا کے طور پر بہہ ہوتا ہوا نیچے کی طرف بہتا ہے۔ اس دلکش منظرکو دیکھ کر روحانی لطف محسوس ہوتا ہے۔ اسے لوگ شیوپور طرہ بھی کہتے ہیں۔ یہ مقام مقدس مانا جاتا ہے اور بڑے پیمانے پر پوجا کی جاتی ہے۔ یہاں پر مہاشیو راتری پر میلہ لگتا ہے۔ شیوپور طرہ کو 1992ء میں حکومت کی طرف سے محفوظ قرار دیا گیا ہے۔

دیو گڑھ[ترمیم]

امبیکاپور سے لکھن پور28 کلومیٹر کی دوری پر ہے اور لكھنپر سے 10 کلومیٹر۔ دور دے وگڈھ واقع ہے۔ دے وگڈھ قدیم دور میں بابا یمدگن کی سادھنا ستھل رہی ہے۔ اس شولگ کے مدھیبھاگ پر طاقت پ رہی زگار پاروتی جی عورت طور پر اكت ہے۔ اس شولگ کو شاسترو میں نیم ناریشور کی ڈگری دی گئی ہے۔ اس گوری شنکر مندر بھی کہتے ہے۔ دے وگڈھ میں رے كا دریا کے کنارے اے كادش رددھ مندروں کے بھگناوشے ش بکھرے پڑے ہے۔ دے وگڈھ میں گولپھی خانقاہ کی ساخت شیو فرقے سے متعلق مانی جاتی ہے۔ اس کے ظاہر سائٹ، مدرو کے بھگناوشے ش، گوری شنکر مندر، آئتاکار بھوگت سٹائل شو مندر، گولپھی خانقاہ، آثار قدیمہ فنکارانہ مجسمے اور قدرتی خوبصورتی ہے۔

سیمرسوت[ترمیم]

1978ء میں قائم سے مرسوت ابھیاری سرگوجا جلے کے مشرقی ونمڈل میں واقع ہے۔ اس کا رقبہ 430.361 مربع کہ۔ میٹر۔ ہے۔ ضلع ہیڈکوارٹر امبیکاپور سے 58 کلومیٹر کی دوری پر یہ بلرام پور، راجپر، پرتاب پور ترقی جلدوں میں وسیع ہے۔ ابھیاری میں سیندور، سے مرسوت، شعور اور ساسو دریاؤں کا پانی بہہ ہوتا ہے۔ ابھیاری کے زیادہ تر علاقے میں سے مر سوت دریا بہتی ہے اس لیے اس کا نام سے مرسوت پڑا۔ اس توسیع مشرق سے مغرب 115 کلومیٹر اور شمال سے جنوب میں 20 کلومیٹر ہے۔ یہاں پر شیر، تے ندا، سانبھر، چیتل، نیل، واركگڈیر، چوسها، چكرا، كوٹری جنگلی کتا، جنگلی سور، ریچھ، مور، بندر، بھے ڈیا وغیرہ پائے جاتے ہیں۔

تمور پنگلا[ترمیم]

1978 میں قائم امبیکاپور - وارانسی ہائی وے کے 72 کہ۔ میٹر۔ پر تمور پگلا ابھیاری ہے جہاں پر ڈاڈكروا بس سٹاپ ہے۔ 22 کلومیٹر مغرب میں رمكولا ابھیاری پركشے تر کا دار الحکومت ہے۔ یہ ابھیاری 608.52 مربع کلومیٹر رقبہ پر بنایا گیا ہے جو واڈرپھنگر علاقے شمالی سرگوجا ونمڈل میں واقع ہے۔ اس کے قیام 1978 میں کی گئی۔ اس میں خاص طور شیر تے ندا، سانبھر، چیتل، نیل، وركڈیر، چكارا، غور، جنگلی سور، ریچھ، سونكتتا، بندر، خرگوش، گلهری، سیار، نے ولا، لومڈی، تیتر، بٹیر، چمگادڈ، وغیرہ ملتے ہیں .

کیلاش غار[ترمیم]

امبیکاپور شہر سے مشرقی سمت میں 60 کلومیٹر۔ پر واقع سامربار نامی مقام ہے، جہاں پر قدرتی جنگل کے درمیان کیلاش غار واقع ہے۔ اسے حتمی قابل پرستش سنت رامیشور گہرا گرو جی نیں پہاڑی چٹٹانو کو تراشكر تعمیر کروایا ہے۔ مهاشوراتر پر وسیع مے لا لگتا ہے۔ اس کے ظاہر سائٹ غار تعمیر شو پاروتی مندر، شیر ماڈا، بدھدرت بیر، یشتھ مڈپ، پانی پرپات، گروكل سنسکرت اسکول، گہرا گرو آشرم ہے۔

تاتاپانی[ترمیم]

امبیکاپور - رامانجگج راستے پر امبیکاپور سے تقریباً 80 کلومیٹر۔ در ہائی وے سے دو پھلاگ مغربی سمت میں ایک گرم پانی کا چشمہ ہے۔ اس مقام سے آٹھ سے دس گرم پانی کے كنڈ ہے۔ یہ گرم پانی کے كنڈو کو سرگجیا بولی میں شامل تاتاپانی کہتے ہے۔ تاتا کا مطلب ہے - گرم۔ ان گرم جلكڈو میں شامل مقامی لوگ اور سیاح چاول طرف ال کو کپڑے میں شامل باندھ کر پکا لیتے ہے اور پکنک کا لطف اٹھاتے ہے۔ ان كنڈو کے پانی سے ہائیڈروجن سلفائڈ جیسی گندھ آتی ہے۔ ایسی تسلیم ہے کہ ان پانی كڈو میں شامل غسل کرنے اور پانی پینے سے کئی چرم بیماری ٹھیک ہو جاتے ہے۔ ان نایاب پانی كڈو کو دیکھنے کے لیے سال بھر سیاحوں آتے ہے۔

ساراسور[ترمیم]

امبیکاپور - بنارس روڈ پر 40 کلومیٹر پر بھے سامڈا مقام ہے۔ بھے سامڈا سے بھے یاتھان روڈ پر 15 کلومیٹر کی دوری پر عظیم دریا کے کنارے پر ساراسور نامی مقام ہے۔ یہاں پر عظیم دریا دو پہاڑیوں کے درمیان سے بہنے والی جل دھارا کے طورپر دیکھی جا سکتی ہے۔ اس جل د ھارا کے وسط ایک چھوٹا ٹاپو ہے، جس پر مندر تعمیر کیا گیا ہے جس میں دیوی درگا اور سرسوتی کی مورتیاں نصب ہیں۔ اس مندر کو گگادھام کے نام سے جانا جاتا ہے۔

لكشمن گڈھ[ترمیم]

امبیکاپور سے 40 کلومیٹر دور لكشمگڈھ واقع ہے۔ یہ مقام امبیکاپور - بلاسپور راستے پر مهے شپر سے 03 کلومیٹر۔ کی دوری پر ہے۔ ایسا مانا جاتا ہے کہ اس کا نام بن باس دور میں مسٹر لکشمن جی کے قیام کی وجہ سے پڑا۔ یہ مقام رام گڑھ کے قریب ہی واقع ہے۔ یہاں کے ظاہر سائٹ شولگ (تقریبا 2 فٹ)، کمل پھول گجراج سروس لکشمی جی، پرستر سیکشن شلاپاٹ پر کرشن پیدائش اور پرستر كھڈو پر engraved متعدد كلاكرتیا ہے۔

كندری قدیم مندر[ترمیم]

امبیکاپور - كسمی - سامری راستے پر 140 کلومیٹر۔ دور كدوری گرام واقع ہے۔ یہاں آثار قدیمہ اہمیت کی ایک بڑی قدیم مندر ہے۔ کئی پروو پر یہاں میلے کا انعقاد ہوتا رہتا ہے۔ یہاں کے ظاہر سائٹ - اشٹدھات کی شری رام کی مورتی، بھگوان شو کی مورتی، مسٹر گنیش کی مورتی، مسٹر جگننتھ جی کی كاشٹھ مورتی اور دیوی درگا کی پیتل کے آرٹسٹک مورتی اور قدرتی خوبصورتی ہے۔

آمد و رفت[ترمیم]

سڑک راستہ

چھتیس گڑھ ریاست میں :

  • رائے پور سے امبیکاپور (ضلع ہیڈکوارٹر) - 310 کلومیٹر
  • بلاسپور سے امبیکاپور - 210 کلومیٹر
  • رایگڈھ سے امبیکاپور - 210 کلومیٹر
  • مدھیہ پردیش ریاست میں : انوپ پور سے امبیکاپور - 205 کلومیٹر
  • شمالی ریاست میں : وارانسی سے امبیکاپور - 350 کلومیٹر
  • جھارکھنڈ ریاست میں : رانچی سے امبیکاپور - 368 کلومیٹر
  • اڈیسا ریاست میں : جھارسگڈا سے امبیکاپور - 415 کلومیٹر
ریل راستہ

سرگوجا ضلع ہیڈکوارٹر امبیکاپور 03 جون 2006 سے ریل لائن سے جڑا ہے۔ امبیکاپور شہر کے اہم راستہ دے ویگج روڈ پر واقع گاندھی چوک سے ریلوے اسٹیشن کی دوری تقریبا 5 کلومیٹر ہے۔ یہاں سے ٹے مپو، ٹیکسی وغیرہ سے امبیکاپور شہر آیا جا سکتا ہے۔ امبیکاپور کو پہنچنے والی ٹرینیں :

بلاسپور سے امبیکاپور آنے کے لیے بس اور ٹرین دونوں کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔ بس امبیکاپور تک براہ راست آتی ہے جبكی ٹرین انوپ پور(مدھیہ پردیش) ہوتے ہوئے امبیکاپور تک آتی ہے۔ رائے گڑھ سے امبیکاپور آنے کے لیے بس کی سہولت ہی دستیاب ہے۔

فضائی راستہ

امبیکاپور براہ راست آنے کے لیے فضائی راستہ موجود نہیں ہے، اگر ہوائی راستے سے پہنچنا ہے تو چھتیس گڑھ کے دار الحکومت رائے پور تک ہی ہوائی جہاز سے آیا جا سکتا ہے اس کے بعد رائے پور سے امبیکاپور 310 کلومیٹر کے فاصلے سڑک کے ذریعے طے کیا جا سکتا ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Provisional Population Totals, Census of India 2011; Cities having population 1 lakh and above"۔ Office of the Registrar General & Census Commissioner, India۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل (pdf) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 مارچ 2012۔
  2. "Provisional Population Totals, Census of India 2011; Urban Agglomerations/Cities having population 1 lakh and above"۔ Office of the Registrar General & Census Commissioner, India۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل (pdf) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 مارچ 2012۔