امب مندر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
امب مندر
AMB Temple in Soon Sakasar Valley by Usman Ghani.JPG
سلسلہ کوہ نمک میں واقع امب منادر کے دو باقی ماندہ مندر
امب مندر is located in پاکستان
امب مندر
پاکستان میں محل وقوع
متناسقات متناسقات: 32°30′30″N 71°56′12″E / 32.508402°N 71.936538°E / 32.508402; 71.936538
قسم احاطہ مندر
تاریخ
قیام ساتویں- نویں صدی عیسوی
ادوار ہندو کابل شاہی
ثقافتیں پنجابی ہندو

امب مندر (انگریزی: Amb Temples) سکیسر، خوشاب شہر، پاکستان میں واقع وہ منادر ہیں جو اب متروک ہوچکے ہیں۔ یہ مندر سلسلہ کوہ نمک کے مغربی کناروں پر واقع ہیں۔ یہ مندر تقریبا ساتویں صدی عیسوی سے نویں صدی عیسوی کے وسطی زمانہ میں تعمیر کیے گئے جبکہ اُس وقت ہندو کابل شاہی خاندان حکومت کر رہا تھا۔

محل وقوع[ترمیم]

امب مندر امب شریف گاؤں کے قریب سلسلہ کوہ نمک اور وادی سون سکیسر کے پہاڑی سلسلہ میں واقع ہیں۔ اِنہیں منادر کی طرز پر دوسرے ہندو منادر ٹلہ جوگیاں اور کٹاس میں بھی موجود ہیں۔

ہیئت و ساخت عمارت[ترمیم]

امب کے منادر میں سے اب باقی دو ہیں جو تقریباً اپنی اصل ہیئت و ساخت میں موجود ہیں۔ بڑا مندر جو 15 تا 20 میٹر بلند ہے، ایک مربع نما پایہ ستون پر تعمیر کیا گیا ہے۔ کابل شاہی عہد میں تعمیر کیے جانے والے تمام منادر مربع نما پایہ ستون پر تعمیر ہوئے۔ اب اِس بڑے مندر کی تین منزلیں باقی رہ گئی ہیں جن تک رسائی کے لیے اندرونی جانب سیڑھیاں موجود ہیں۔ یہ مندر کشمیری منادر کی طرز پر تعمیر کیا گیا ہے جس کے بیرونی چہار اطراف میں خوبصورت کشمیری طرز کے پھول اور نقاشی اینٹ سے بنائی گئی ہے۔ داخلہ کی محراب بھی نقاشی دار ہے۔ بالائی سطح پر مندر کا تکون نما گوشہ کشمیری منادر سے مختلف ہے۔ امب مندر کی مشابہت کے دوسرے مندر کافرکوٹ میں موجود ہیں جن کا طرز تعمیر اور معماری انداز بالکل ایک جیسا ہی ہے۔ چھوٹا مندر بڑے مندر سے 75 میٹر مغرب کی جانب سلسلہ کوہ نمک کی ایک کھائی سے متصل واقع ہے۔ اِس کی بلندی 7 یا 8 میٹر ہے اور عمارت 2 منزلہ ہے۔ اِس مندر میں سیڑھیاں قدرے چھوٹی ہیں لیکن اِس کا زیادہ تر حصہ منہدم ہوچکا ہے۔ سلسلہ کوہ نمک کے اِس علاقہ میں منادر کی تعمیر کا کام سب سے پہلے کشان سلطنت کے عہد میں شروع ہوا تھا۔

بحالی و مرمت[ترمیم]

انیسویں صدی عیسوی میں انگریز برطانوی مہندس الیگزینڈر کننگھم نے اِس کا دورہ کیا اور 1922ء سے 1924ء کی درمیانی مدت میں اِس کی بحالی کا کام مکمل کیا گیا جس کی نگرانی دیا رام ساہنی نے کی۔ مندر کے نودرات مختلف زمانوں میں لوٹ لیے گئے، بعد ازاں یہ تاریخی نوادرات عجائب گھر، لاہور منتقل کردیے گئے۔ یہ منادر قانون مجریہ برائے تحفظ تاریخی عمارات و آثارِ قدیمہ 1975ء کے تحت محفوظ قرار دیے گئے ہیں۔

نگارخانہ[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]