امین فہیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
امین فہیم
تفصیل= امین فہیم

وزیر چیمبرز آف کامرس
مدت منصب
3 نومبر 2008ء – 16 مارچ 2013ء
صدر آصف علی زرداری
وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی
راجہ پرویز اشرف
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مبشر حسن
- - - Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 4 اگست 1939  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ضلع مٹیاری  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 21 نومبر 2015 (76 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجۂ وفات ابیضاض  ویکی ڈیٹا پر وجۂ وفات (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر طرزِ موت (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نسل پاکستانی
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  ویکی ڈیٹا پر سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ سندھ  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مخدوم محمد امین فہیم پاکستان کے ایک سیاست دان، روحانی پیشوا اور شاعر تھے۔ پاکستان پیپلز پارٹی کی تعمیر و ترقی میں ان کا اہم کردار ہے۔

پیدائش اور تعارف[ترمیم]

4 اگست، 1939ء کو پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر حیدرآباد کے ضلع مٹیاری کے علاقے ہالہ میں پیدا ہوئے۔ وہ آگے چل کر پاکستان پیپلزپارٹی کے سینئر وائس چئیرمین کے عہدے پر فائز ہوئے۔ وہ مخدوم طالب المولی کے بڑے فرزند اورجانشین تھے۔

مخدوم امین فہیم نے ابتدائی تعلیم’ہالا‘سے حاصل کی اور1957ء میں میٹرک ہالاہائی اسکول سے کیا۔

1958ء میں مخدوم امین فہیم نے سندھ یونیورسٹی سے پولیٹیکل سائنس میں بی ایس آنرز کیا۔ مخدوم امین فہیم نے 1970ء کے عام انتخابات کے دوران پیپلز پارٹی کی سیاست میں قدم رکھا اور ٹھٹھہ سے کامیاب ہو کر سندھ اسمبلی کے رکن بنے۔

مخدوم امین نے آٹھ انتخابی مرحلے کامیابی سے عبور کیے اور نا قابل شکست رہے۔ وہ 1977ء،1988ء،1990ء،1993ء،1997ء،2002ء،2008ء اور 2013ء تک مسلسل آٹھ مرتبہ قومی اسمبلی کے رکن رہے۔

مخدوم امین فہیم پانے نصرت بھٹو کی قیادت میں آمرجنرل ضیاء الحق کے کٹھن دور کا جوانمردی سے مقابلہ کیا اور ہمیشہ فوجی جبر کے سامنے سینہ سپر رہے مخدوم امین فہیم کو فوجی آمر جنرل پرویز مشرف نے وزیر اعظم کے عہدے کی پیشکش کی جو انہوں نے ٹھکرا دی۔ مشرف سے قبل تین مرتبہ انیس سو اٹھاسی، نوے اور ترانوے میں تین بار انہیں وزیر اعظم کی پیشکش ہوئی جو انہوں نے قبول نہ کی۔ مخدوم امین فہیم بے نظیر بھٹو کے دونوں ادوار میں وفاقی وزیر کے عہدے پر کام کرتے رہے۔ 1988ء سے اگست 1990ء تک آپ وزیر اطلاعات رہے۔ اس کے قبل دسمبر1988سے مارچ 1989ء کے دورانیے میں وزارت ریلوے کے ذمہ داربھی رہے۔ بعد ازاں جنوری 1994ء سے نومبر1996تک آپ وزیر ہاؤسنگ اینڈ ورکس رہے۔ نومبر2008ء میں مخدوم امین فہیم کو وزارت معیشت وتجارت کا قلمدان دیا گیا۔

مخدوم امین فہیم ’’سروری جماعت ‘کے روحانی پیشوا ہونے کے ناطے مخدوم امین فہیم کے دنیا بھر میں لاکھوں عقیدت مند ہیں۔ مخدوم امین فہیم کوسیاست کے علاوہ شاعری سے خاص شغف تھا۔

وہ کہتے تھے کہ ’’میں مولانا رومی،شاہ عبد اللطیف بھٹائی اور سچل سرمست کا پرستار ہوں۔ میری زندگی پر ان کی شاعری کا گہرا اثر ہے۔ میں نے ان کی شاعری سے محبت اور وفا کا درس سیکھا ہے۔ ‘‘

سیاست[ترمیم]

پاکستان پیپلز پارٹی سے تعلق تھا اور سینیئر رہنما تھے۔ 1977ء سے 2013ء تک مسلسل انتخابات میں ناقابل شکست رہے۔ امین فہیم آٹھ مرتبہ رکن قومی اسمبلی پاکستان منتخب ہوئے تھے۔ وفاقی وزیر بھی رہے۔

روحانی پیشوا[ترمیم]

سروری جماعت کے روحانی پیشوا تھے۔

وفات[ترمیم]

21 نومبر 2015ء کراچی پاکستان کے ایک نجی ہسپتال میں خون کے کینسر کی وجہ سے انتقال کر گئے۔

حوالہ جات[ترمیم]