امین کامل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

امین کامل (1924–2014) کشمیری شاعری کی ایک بڑی آواز تھی اور زبان جدید میں غزل کے اہم نقاد تھے۔[1] غزل پران کے اثر و رسوخ کو ان کے ہم عصر اور بعد کی نسلوں نے بڑے پیمانے پر قبول کیا۔ [2] کامل ، شاعر ہونے کے علاوہ مختصر کہانیاں اور ایک ناول بھی لکھ چکے ہیں اور ادبی تنقید کا کام بھی کرتے ہیں۔ انہوں نے ریڈیو کے لیے متعدد ڈرامے اور موسیقی بھی لکھی ہے۔ صوفی شاعری کا ان کا تنقیدی تدوین شدہ مجموعہ (صوفی شیر ، 3 جلدیں ، 1964–65) ابھی تک ایک حتمی عبارت ہے جسے وسیع پیمانے پر سراہا گیا ہے۔۔ کامل اعلی صلاحیت کے عالم کے طور پر بھی جانے جاتے ہیں۔ کامل نے ہمیں نظم کی شکل میں کچھ یادگار اشعار بھی دیے ہیں۔ بحیثیت نقاد انھوں نے وسیع پیمانے پر اپنی پہچان کرائی ہے۔ ٹیگور کے ڈاک گھر کا ان کا ترجمہ اور اسی طرح اردو شاعر اقبال کی شاعری کا کشمیری زبان میں ترجمہ بہت اہم کام ہے۔ کامل جنوبی کشمیر کے ایک گاؤں کپرین میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے پنجاب یونیورسٹی سے آرٹس میں گریجویشن کی اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے لا کی ڈگری لی۔ انہوں نے 1947 میں بار میں شمولیت اختیار کی اور 1949 تک سری نگر کے سری پرتاپ کالج میں لیکچرر مقرر ہونے تک قانون کی پریکٹس جاری رکھی۔ وہ اس وقت کی ترقی پسند مصنفین کی تحریک سے بہت قریب سے وابستہ تھے

شاعری[ترمیم]

کامل کشمیری غزل کے ماہر ہیں اور اس کا اردو اور فارسی ہم منصبوں سے ممتاز ایک اہم وجود م بنانے میں کردار رہا ہے۔ ان کی شاعری احساس کی تازگی ، اظہار کی پختگی اور فنی جدت طرازی کی علامت ہے جو ان کی شاعری کو انفرادیت کا رنگ دیتی ہے۔

موت[ترمیم]

امین کامل 30 اکتوبر 2014 کو جمعرات کی صبح جموں میں انتقال کر گئے۔ ان کی عمر 90 سال تھی۔ ادبی مارکر کامراز ، لٹریری فورم بانڈی پورہ ، حکمران جماعت نیشنل کانفرنس ، پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی سمیت متعدد ادبی اور سیاسی تنظیموں نے اپنے الگ الگ بیانات میں امین کامل کے انتقال پر تعزیت کی ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Modern Indian Literature, an Anthology (By K. M. George)
  2. Shafi Shauq and Naji Munawar, History of Kashmiri Literature, University of Kashmir, Srinagar.