ام الولد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ام ولد فقہ اسلامی میں اُس لونڈی کو کہتے ہیں جس سے مالک کا بچہ پیدا ہو اور اسے مالک اپنی اولاد قرار دیدے
اس صورت میں لونڈی آقا کے مرنے پر خود بخود آزاد ہو جاتی ہے۔ اسلام سے قبل عرب میں یہ دستور تھا کہ اگر آقا اس بات کو تسلیم کر لیتا کہ بچہ اسی سے ہے تو وہ بچہ آزاد ہو جاتا ورنہ ماں کی طرح غلام رہتا۔ شرع اسلامی کی رو سے بچہ پیدا ہونے کے بعد آقا ام الولد کو فروخت نہیں کر سکتا۔ ام الولد کی آزادی کا حکم حضرت عمر نے اپنے دور خلافت میں دیا۔ امام ابوحنیفہ، امام شافعی اور امام حنبل کا بھی یہی مسلک ہے۔
سورہ محمد کی آیت22 کے حکم کو مدنظر رکھ کر سیدنا عمر نے اپنی مجلس شوریٰ کے مشورہ سے ام الولد کی خرید و فروخت کو حرام قرار دیا تھا۔ چنانچہ سیدنا بریدہ کہتے ہیں کہ وہ ایک دن سیدنا عمر کی مجلس میں بیٹھے تھے کہ محلہ میں یکایک ایک شور مچ گیا۔ دریافت کرنے پر معلوم ہوا کہ ایک لونڈی فروخت کی جا رہی ہے جبکہ اس لونڈی کی لڑکی کھڑی رو رہی ہے۔ سیدنا عمر نے اسی وقت یہ مسئلہ اپنی شوریٰ میں پیش کر دیا تاکہ دیکھیں پوری شریعت میں ایسی قطع رحمی کا کوئی جواز نظر آتا ہے؟ سب نے نفی میں جواب دیا تو آپ نے فرمایا کہ اس سے بڑی قطع رحمی کی بات کیا ہوسکتی ہے کہ ایک ماں کو اس کی بیٹی سے جدا کر دیا جائے؟ اس وقت آپ نے یہی آیت تلاوت فرمائی۔ صحابہ نے عرض کیا کہ اس مسئلہ کی روک تھام کے لیے آپ جو مناسب سمجھیں اختیار فرمائیں۔ چنانچہ آپ نے سارے بلاد اسلامیہ میں یہ فرمان جاری کر دیا جس لونڈی سے مالک کی اولاد پیدا ہو جائے وہ اسے فروخت نہیں کر سکتا۔
ام الولد کی فروخت کی تحریم سنت نبوی سے ثابت ہے۔ اس سلسلہ میں درج ذیل احادیث ملاحظہ فرمائیے :۔
سیدنا ابن عباس کہتے ہیں کہ رسول اللہ نے فرمایا کہ جس شخص نے اپنی لونڈی سے مباشرت کی۔ پھر اس سے اس کا بچہ پیدا ہو گیا تو وہ لونڈی اس کے مرنے کے بعد آزاد ہوگی [1]
سیدنا ابن عباس فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ کے پاس ام ابراہیم (ماریہ قبطیہ) کا ذکر کیا۔ تو آپ نے فرمایا : اس کا بچہ اس کی آزادی کا سبب بن گیا [2]
سیدنا ابن عمر فرماتے ہیں کہ نبی نے اولاد والی لونڈیوں کو بیچنے سے منع فرمایا اور کہا کہ وہ نہ بیچی جاسکتی ہیں نہ ہبہ کی جاسکتی ہیں اور نہ ترکہ میں شمار ہوسکتی ہیں۔ جب تک ایسی لونڈی کا مالک زندہ ہے وہ اس سے فائدہ اٹھا سکتا ہے اور جب وہ مر جائے تو وہ لونڈی آزاد ہے [3][4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. احمد۔ ابن ماجہ۔ بحوالہ نیل الاوطار ج 6 ص 231
  2. ابن ماجہ، دارقطنی
  3. موطا امام مالک،کتاب العتق والولاء،باب أمہات الأولاد وجامع القضافي العتاقة
  4. تیسیر القرآن،عبد الرحمن کیلانی،سورہ محمد ،22