اناؤ میں جنسی زیادتی کا واقعہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اناؤ میں جنسی زیادتی کا واقعہ
Protests for the Kathua Unnao Rape cases.jpg
کٹھوعہ اور اناؤ کے سانحات کے خلاف مشترکہ احتجاج
مقام اناؤ، اتر پردیش
تاریخ 4 جون 2017ء (2017ء-06-04)
حملے کی قسم آبروریزی اور قتل
اتر پردیش، بھارت کا نقشہ جس میں اناؤ ضلع کی نشان دہی کی گئی ہے۔ مذموم آبرو ریزی کا یہ واقعہ اسی ضلع میں انجام پایا تھا۔

اُنَّاؤ اجتماعی آبرو ریزی معاملہ یا اناؤ جنسی زیادتی کا معاملہ[1] 2018ء کے ایک سنگین اجتماعی آبرو ریزی کے معاملے کا نام ہے جس میں بھارت کی ریاست اتر پردیش کی ایک لڑکی مبینہ طور پر بھارتیہ جنتا پارٹی سے تعلق رکھنے والے ایک ایم ایل اے اور اس کے بھائی کی جنسی ہوس کا شکار ہوئی۔ گوکہ یہ معاملہ 2017ء کا ہے تاہم یہ 2018ء میں اس لیے زور پکڑنے لگا کیوں کہ مظلومہ نے اسی سال ملزم ایم ایل اے کی شناخت کُلدیب سنگھ سینگر اور ان کے بھائی اتُل سنگھ سینگر کی ملزمین کے طور پر شناخت کی۔

مظلومہ کا خاندان اور کُلدیب سنگھ سینگر ایک طویل عرصے سے اناؤ میں دوستانہ تعلقات رکھتے تھے۔ کلدیب پہلے کانگریس میں تھے۔ پھر وہ وقت اور حالات کے حساب سے سیاسی وابستگی بدلتے گئے اور بالآخر سر عام الزام تراشی کے وقت بی جے پی میں رہے۔ مظلومہ نے 2017ء کی ایف آئی آر میں کچھ دیگر افراد پر انگلی اٹھائی تھی، جس کے متعلق اس نے بعد میں بتایا کہ پولیس کے دباؤ کی وجہ سے وہ ایسا کر رہی تھی۔ احتجاج جب زور پکڑنے لگا، تب 5 اپریل کو مظلومہ کے باپ کو گرفتار کیا گیا۔ اس کے بعد مظلومہ نے انصاف کے لیے اترپردیش کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کی قیام گاہ کے سامنے خود سوزی کی کوشش کی۔ مبینہ طور پر ایم ایل اے کے بھائی اور ان کے حامی جیل میں قید بوڑھے شخص کو بے رحمی سے پیٹ ڈالتے ہیں۔ بعد ازاں ان زخموں کی تاب نہ لاکر باپ دم توڑ دیتا ہے۔ ایسے وقت میں میڈیا اور سماجی کارکن یہ امید کر رہے تھے کہ وزیر اعلیٰ آگے آئیں گے اور گلدیپ سنگھ کو گرفتار کریں گے۔ مگر 12 اپریل تک اترپردیش پولیس کوئی گرفتاری عمل میں نہیں لاتی ہے۔ وہ ملزم کا نام ایف آئی آر میں تو لاتی ہے، مگر تمام شواہد کو کم زور قرار دیتی ہے۔ یہ مقدمہ ہنوز زیر تحقیق ہے اور اس کی تحقیق بھارت کا مرکزی تحقیقاتی ادارہ سی بی آئی کر رہا ہے۔[2][3][4][5][6]

حراست اور گرفتاری[ترمیم]

12 اپریل کی رات سے سی بی آئی اور اس کے ایما پر اترپردیش کی پولیس کلدیپ سنگھ کی تلاش اور تعاقب میں رہی۔ یہ سلسلہ صبح تک جاری رہا جب بالآخر 13 اپریل کو ساڑھے چار بجے صبح اسے حراست میں لے لیا گیا۔[7][8] الہ آباد ہائی کورٹ کی ایک پھٹکار کے بعد کہ سنگھ کو معاملے کی سنگینی کے پیش نظر گرفتار کرنا چاہیے، یہ تحویل گرفتاری میں بدل دی گئی۔ تاہم ملزم کا دعوٰی یہی رہا کہ اس نے خود کو قانون کے حوالے کیا۔

کلدیپ سنگھ کا کردار[ترمیم]

اے بی پی نیوز پر نشر کردہ ایک تحقیقی رپورٹ کے مطابق اناؤ ضلع کا ماکھی گاؤں کلدیپ سنگھ کی دہشت سے کانپتا ہے۔ یہاں وہ جو چاہے کر سکتے تھے۔ وہ بلا وجہ کسی کو بھی سو جوتے مار سکتے تھے اور اس پر کوئی کارروائی نہیں کرتا۔ پولیس اور ضلع انتظامیہ پوری طرح سنگھ کے ساتھ تھا۔ اسی لیے میڈیا میں معاملے کے چھا جانے کے بعد بھی کارروائی خدا خدا کر کے کی گئی۔ اے بی پی نیوز کو کیمرے پر کوئی بھی فرد جان کے خوف کی وجہ سے کچھ بھی کہنے سے انکار کر رہا تھا۔ تاہم تصویر نہیں دکھانے کے وعدے پر لوگوں نے کلدیپ سنگھ کو سنی دیول کی فلم گھاتک کے منفی کردار کاتیا سے کی جو ایک جبری زانی تھا۔ اسے فلم میں سبق سنی دیول سکھاتا ہے، جسے لوگ بر صورت مسئولہ میں لوگ آبرو ریزی کی مظلومہ کے چچا میں تلاش کر رہے ہیں۔ لوگوں کا تو یہ بھی خیال ہے کہ چچا چناؤ میں بھی سنگھ کو ہرا سکتے ہیں۔ واضح رہے کہ 2007ء سے سنگھ اناؤ سے چناؤ جیتتا آیا ہے، حالانکہ وہ اپنی سیاسی وابستگی کئی بار بدل چکا ہے۔ وہ کبھی کانگریس میں رہا ہے تو کبھی بہو جن سماج پارٹی میں۔ موجودہ طور پر وہ بھارتیہ جنتا پارٹی کا ایم ایل اے ہے۔ اسے اس بات کا فائدہ ہے کہ یہی پارٹی ریاست اور مرکز میں حکومت چلا رہی ہے۔[9]

کلدیپ سنگھ نے آبرو ریزی کے الزام سے صاف انکار کیا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ اسے سیاسی سازش کے تحت پھنسایا گیا ہے۔ تاہم میڈیا کے نمائندوں اور سیاسی رہنماؤں نے اسے مورد الزام ٹھہرایا ہے۔ حزب اختلاف کے لوگ اس وجہ بی جے پی کی خوب تنقید بھی کر رہے ہیں۔

2019ء کے واقعات[ترمیم]

جولائی 2019ء تک اگرچیکہ کلدیپ سنگھ قید میں ہی تھا، تاہم مقدمے کی رواں کار روائی شروع نہیں ہوئی۔ مظلومہ کے مطابق کلدیپ سنگھ نے شروع میں اس سے کہا تھا کہ وہ خاموش رہے، ورنہ اس کا پورا خاندان تباہ ہو جائے گا۔ چنانچہ پولیس نے اس کے والد کی ایسی پٹائی کی کہ وہ کافی پہلے ہی انتقال کر گئے تھے۔ مظلومہ کے چچا کو قریب 18 سال پرانے غیر قانونی ہتھیار کے معاملے میں گرفتار کیا گیا۔ 28 جولائی 2019ء کو مظلومہ اپنے چچا سے ایک ایسے قید خانے میں ملنے گئی جہاں انہیں حال ہی میں منتقل کیا گیا تھا۔ لوٹ کر آتے وقت ایک تیز رفتار ٹرک اس کار سے ٹکرا گیا جس میں مظلومہ سفر کر رہی تھی۔ اس واقعے میں مظلومہ اور اس کا وکیل بری طرح زخمی ہو گئے اور انہیں وینٹی لیٹر پر رکھا گیا۔ مظلومہ کی خالہ اور چچی بر سر موقع ہلاک ہو گئے۔ یہ موضوع نزاع ہے کہ یہ ٹکرانا حادثہ تھا یا سازش۔ تاہم ٹکرانے والی ٹرک کی نمبر پلیٹ پر کالک پوت دی گئی تھی۔ واقعے کے احوال کے پیش نظر کلدیپ سنگھ پر قتل کے مقدمے دائر ہوئے۔ مگر اسے سننے کے لیے ججوں کا ملنا بھی مشکل تھا کیوںکہ کلدیپ سنگھ ایک دبنگ قائد سمجھے جا رہے ہیں۔ [10][11] مظلومہ کا وکیل اپنے حادثے سے 15 دن پہلے ایک خط لکھا تھا جس میں الزام تھا کہ اس کی زندگی کو خطرہ ہے اور اس وجہ سے فوری ہتھیار رکھنے کا لائسنس اسے دیا جانا چاہیے۔ یہ خط ضلعی مجسٹریٹ کو لکھا گیا تھا۔[12]

یکم اگست 2019ء کو سپریم کورٹ نے اس آبرو ریزی معاملے سے جڑے پانچ مقدموں کو اترپردیش سے دہلی منتقل کرنے کا حکم جاری کیا۔ عدالت علیا نے عصمت دری کی مظلومہ کو 25 لاکھ روپیہ عبوری معاوضہ ادا کرنے کا حکم دیا۔ عدالت نے سنٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن کو 7 دن کے اندر کار حادثے کی تحقیقات مکمل کرنے کا حکم دیا۔ عدالت نے یہ بھی وضاحت کی کہ ایجنسی صرف استثنائی حالات ہی میں مزید 7 دن کی مہلت طلب کر سکتی ہے، مگر یہ بھی استثنائی حالات میں۔اصل آبرو ریزی کے معاملے میں عدالت نے وضاحت کیا کہ مقدمہ اپنے آغاز سے 45 دن کے اندر مکمل ہو جانا چاہیے۔ عدالت نے زور دے کر ہدایت جاری کی کہ مظلومہ، اس کی ماں اور خاندان کے دیگر ارکان کو سنٹرل ریزرو پولیس پولیس فورس کی جانب سے حفاظت فراہم کی جائے اور برسر عہدہ شخص اس بابت عمل آوری کی رپورٹ لازمًا داخل کرے۔[13]

کلدیپ سنگھ کو بی جے پی نے پارٹی سے خارج کر دیا۔[14] اترپردیش کے ریاستی بی جے پی صدر سوتنتر دیو سنگھ نے کار حادثے کے ایک دن بعد ہی یہ دعوٰی کیا گیا کہ کلدیپ سنگھ کو اپریل 2018ء ہی میں پارٹی سے خارج کر دیا گیا۔ وہ مگر تاریخ یا کوئی دستاویزی ثبوت نہیں پیش کر سکے۔ وہ اس بات کا جواب نہیں دے سکے کہ کیوں گلدیپ سنگھ کی بیوی سنگیتا اسی شہ نشین سے اناؤ میں منعقدہ 2019ء کی لوک سبھا ریلی میں یوگی آدتیہ ناتھ کے ساتھ بیٹھی تھی۔ وہ اس بات کا بھی جواب نہیں دے سکے کہ کیوں لوک سبھا انتخابات کے بعد بی جے پی قائد ساکشی مہاراج نے انتخابی کامیابی کے لیے کلدیپ سے جیل میں مل کر ان کا شکریہ ادا کیا۔ [15] کئی متصاد خبروں کے بعد یکم اگست ہی کے دن بی جے پی نے یہ وضاحت کر دی کہ کلدیپ سنگھ کو ریاستی بی جے پی نے معطل کیا تھا، تاہم پارٹی کی مرکزی قیادت نے اسے پارٹی سے خارج کر دیا۔[16]

مظلومہ لکھنؤ کے کنگ جارجز ہاسپٹل میں زیر علاج شریک ہوئی جہاں وہ بے ہوش اور وینٹی لیٹر پر رکھی گئی۔ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس رنجن گوگوئی نے کہا کہ اگر مظلومہ کا خاندان چاہے تو اسے دہلی کے آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس (ایمس) میں شریک کیا جا سکتا ہے۔ تاہم خاندان نے فوری طور پر لکھنؤ کے کنگ جارجز میڈیکل ہاسپٹل میں علاج کو جاری رکھنے کی خواہش ظاہر کی۔[17] 6 اگست کو بگڑتی صحت کے پیش نظر مظلومہ کو ایمس منتقل کر دیا گیا۔ [18]

ملزم سے اظہار ہمدردی[ترمیم]

بلگرام ملاوان کے بی جے پی رکن اسمبلی آشیش کمار آشو نے 2 اگست 2019ء نے کیمرا کے روبرو کلدیپ سنگھ سے اپنی دلی ہمدردی کا مقامی پنچایتی اجلاس میں یوں اظہار کیا:

ہمارا بھائی کلدیپ سنگھ ہمارے بیچ نہیں آ سکا کیونکہ وہ ایک مشکل دور سے گزر رہا ہے۔ ہماری نیک تمنائیں اس کے ساتھ ہیں۔ ہم امید کرتے ہیں کہ وہ برے دور سے اوپر اٹھے گا، اس مقابلہ کر کے آگے آئے گا اور آپ سب کے ساتھ رہے گا اور آپ قیادت کرے گا۔

بی جے پی کے ریاستی ترجمان راکیش ترپاٹھی نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ پارٹی نے ضابطے کی کارروائی کر دی ہے اور ایم ایل اے کا شاید یہی مطلب ہے کہ کوئی بھی شخص قانون سے خاطی قرار دیے جانے تک بے قصور ہے۔ [19] تاہم ترپاٹھی نے "قانون سے خاطی قرار دیے جانے تک بے قصور" کے اصول اور اس کے اسی پارلیمان میں منظور کردہ قانون غیر قانونی سرگرمیوں کی روک تھام قانون [20] سے تصادم پر کچھ بھی کہنے سے گریز کیا۔

اناؤ کے لوگ بھی کلدیپ سنگھ کے لیے نرم گوشہ بنتے ہوئے دیکھے گئے جیسا کہ ان کے گاؤں کے اسکول کے پرنسپل نے یوں کہا:

رکن مقننہ صاحب (وِدھایک جی) وہی مشکل دور سے گزر رہے ہیں جس سے کہ راجا ہریشچندر اپنے برے دنوں میں گزرے تھے۔ انہیں (ہریشچندر) کو ایک چور اور مجرم قرار دیا گیا تھا، جہاں تک کہ ان کی رسائی ہوئی۔ فطرۃً حادثے کا سارا قصور ودھایک جی کے سر پر بغیر کسی ثبوت کے لاد دیا گیا ہے۔[21]

لڑکیوں کی لفاظت پر سوال کرنے والی لڑکی کے والدین خوفزدہ[ترمیم]

بارہ بنکی میں پولیس اور طالبات کے ایک باہمی ملاقات کے پروگرام میں ایک گیارہویں جماعت کی طالبہ نے پولیس کو اناؤ معاملے کی روشنی میں لڑکیوں کی حفاظت کو لے کر تیکھے سوال کیے، جس کے پولیس جواب نہیں دے سکی۔ اس پر لڑکی اور اس کے والدین کافی خوفزدہ ہو گئے اور لڑکی کو دوبارہ اسکول بھیجنے پر کافی فکرمند ہو گئے۔[22]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://www.urdutahzeeb.com/india/congress-midnight-protest-مارچ-against-unnao-kathua-rape-incidents/
  2. "Unnao rape case: Kuldeep Singh Sengar, BJP MLA accused of raping 18-year-old, is a known political turncoat – Firstpost"۔ www.firstpost.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-12۔
  3. "All that has happened in Unnao rape case, a timeline"۔ Hindustan Times (انگریزی زبان میں)۔ 2018-04-10۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-12۔
  4. "Unnao Rape: FIR Filed Against BJP MLA, Case Transferred to CBI"۔ The Quint (انگریزی زبان میں)۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-12۔
  5. Omar Rashid (2018-04-11)۔ "Allahabad HC takes up Unnao rape case"۔ The Hindu (انگریزی زبان میں)۔ ISSN 0971-751X۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-12۔
  6. Omar Rashid (2018-04-11)۔ "Unnao gang rape case: BJP MLA's wife demands narco test of husband, minor"۔ The Hindu (انگریزی زبان میں)۔ ISSN 0971-751X۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-12۔
  7. "Rape-Accused BJP Lawmaker Kuldeep Singh Sengar Taken In For Questioning By CBI"۔ NDTV.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-13۔
  8. "Allahabad High Court Orders Arrest Of BJP Lawmaker Kuldeep Singh Sengar"۔ NDTV.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-04-13۔
  9. GROUND REPORT from Kuldeep Sengar's village Makhi: Residents are too scared to talk
  10. "Unnao rape and murder: No judge to hear Kuldeep Singh Sengar case"۔ یاہو نیوز۔
  11. "Unnao rape and murder: No judge to hear Kuldeep Singh Sengar case"۔ انڈیا ٹوڈے ویب ڈیسک۔
  12. "Fear I may be killed: Unnao lawyer wrote before crash"۔ ریڈیف۔
  13. "Unnao: SC transfers cases to Delhi, orders Rs 25 lakh compensation"۔ ریڈیف۔
  14. "Rape accused Kuldeep Sengar expelled from BJP"۔ ریڈیف۔
  15. "Suspended Kuldeep Sengar, says BJP, but has no proof"۔ ٹائمز آف انڈیا۔
  16. "'Kuldeep Sengar was suspended by UP BJP, expelled by central leadership': State party chief clarifies on action against Unnao rape accused"۔ فرسٹ پوسٹ ڈاٹ کام۔
  17. "Family refuses to move Unnao rape victim to AIIMS"۔ ریڈیف۔
  18. "Unnao rape victim airlifted to AIIMS in Delhi after SC order"۔ یاہو نیوز۔
  19. "BJP MLA sympathises with Unnao rape accused Kuldeep Singh Sengar"۔ دی ہندو۔
  20. "Elders debate UAPA Bill, voting today"۔ دی ہندو۔
  21. "Despite the outrage, Unnao bats for rape-accused Kuldeep Singh Sengar"۔ دی ہندو۔
  22. "Uttar Pradesh: Schoolgirl speaks up on Unnao incident, family scared"۔ انڈین ایکسپریس۔