انا الحق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

انا عربی زبان میں ضمیر متکلم کا صیغہ ہے جس کے اُردو معنی میں کے ہیں جبکہ الحق اسم معرفہ ہے جس کے معنی مخصوص سچائی کے ہیں پس انا الحق کا لغوی مطلب ہوا کہ میں ہی حق ہوں، انا الحق بنیادی طور پر ایک صوفیانہ نعرہ ہے جس کو سب سے پہلے حسین بن منصور حلاج نے وضع کیا یہی وہ نعرہ ہے جس کے سبب ابن منصور کو سولی پر چڑھا دیا گیا، انا الحق بنیادی طور پر ایک انتہائی باطنی کیفیت ہے جس کا احساس صرف انہی حق پرستوں کو ہو سکتا ہے جو اس مقام خاردار سے گزرے ہیں بظاہر یہ نعرہ اسلام کے نظریہِ توحید سے متصادم ہے جس کے سبب ابن تیمیہ جیسے علما نے ابن منصور کو زندیق اور گمراہ قرار دیا جبکہ بباطن مطلق حق کی چاہ میں یہ وہ شدید ترین تڑپ کا اظہار ہے جس کا منطقی نتیجہ واصل فی الحق ہو جانا ہے یہ حلول یا اتحاد فی الحق فی نفسہ عین منطقی اور ایک طالبِ حق کی شدید ترین جذباتی مجبوری ہے جو بلا شبہ بارگاہِ ایزدی میں ایک معتبر عذر کے طور پر پیش کیے جانے کے قابل بھی ہے فلہذا جن علما نے آنا الحق کی سطحی تعبیر کو مد نظر رکھ کر ابن منصور کو مطعون ٹھہرایا امید واثق ہے کہ وہ بھی اپنے منطقی تمکن کے سبب قابلِ مواخذہ نہیں ہوں گے.

حوالہ جات[ترمیم]

مقالات یکے از نعمان نیئر کلاچوی