انتظام اللہ شہابی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انتظام اللہ شہابی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1892  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
آگرہ،  برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 8 ستمبر 1969 (76–77 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کراچی،  سندھ،  پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مدفن کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام دفن (P119) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ مؤرخ،  سوانح نگار،  تجارت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

مفتی انتظام اللہ شہابی (پیدائش: 1892ء— وفات: 8 ستمبر 1969ء) صاحب تصانیف مؤلف، مؤرخ اور سوانح نگار تھے۔ علاوہ ازیں وہ انجمن اسلامیہ آگرہ کے صدر بھی رہے اور صدر جناح کالج، کراچی کے بانیوں میں شمار کیے جاتے ہیں۔ تھے۔ اُن کی وجہ شہرت تاریخ ملت ہے۔

سوانح[ترمیم]

مفتی انتظام اللہ 1892ء میں آگرہ میں پیدا ہوئے۔ والد مولوی اکرام اللہ شہابی تھے۔[1] ابتدائی تعلیم عربی اور فارسی میں حاصل کی۔ آخری زمانے میں انگریزی اِس قدر سیکھ لی تھی کہ مختلف کتب سے استفادہ کرسکتے تھے۔ متوسطات تک دینیات کی تکمیل کی۔ لکھنے پڑھنے کا شوق بہت تھا۔ بعد ازاں نقشہ نویسی اور انجینرنگ کی تحصیل کی۔ ملازمت کی بجائے تجارت کا پیشہ اختیار کیا۔ مدتِ مدید تک اپنے بہنوئی ارشاد حسین کی شراکت میں جانوروں یعنی شیر اور ہاتھیوں کی خرید و فروخت کرتے رہے۔ یہ مشغلہ دس سال تک یعنی 1925ء تک جاری رہا۔[2]

تصانیف[ترمیم]

مزید پڑھیں: تاریخ ملت

تصنیف و تالیف کا زمانہ 1925ء سے شروع ہوتا ہے جب اُنہوں نے بائبل سوسائٹی کی طرز پر دائرہ معارفِ قرآنیہ قائم کیا اور اِسی کی طرف سے قرآن، حدیث، سیرت پر متعدد رسالے شائع کیے۔ 1945ء میں دہلی آگئے اور نیا کتاب گھر (ناشرین) کے یہاں سوا سو روپئے میں ملازمت اختیار کرلی۔ نیا کتاب گھر سے اُن کی متعدد کتب شائع ہوئیں۔ اِسی زمانہ میں اُن کا تعلق ندوۃ المصنفین سے قائم ہوا جس کے لیے اُنہوں نے سلاطین ہن اور تاریخ ملت کے بیشتر حصے مرتب کیے۔ دہلی سے ماہنامہ ب رہان کی ترتیب میں بھی شریک کار رہے۔ مفتی انتظام اللہ کی پہلی کتاب داعی اسلام تھی جو 1914ء میں شائع ہوئی تھی اور آخری کتاب قافیہ سنجان اکبرآباد تھی جو 1968ء میں شائع ہوئی۔ اپنی تصنیف مشاہیر اکبرآباد میں اُنہوں نے اپنی 129 کتابوں کی نشان دہی کی ہے۔ اِن میں سے اکثر کئی کئی جلدوں میں ہیں اور بعض کے موضوعات بھی بہت متنوع ہیں۔ مشہور تصانیف میں یہ ہیں:

تاریخ ملت۔ بزم آخر۔ چند مسلم سائنس دان۔ حیاتِ ظفر۔ تذکرہ صابر۔ مشاہیر جنگِ آزادی۔ مشاہیر اکبرآباد۔ فاطمہ کا لال۔ ماہتاب اجمیر۔ اسلامی معاشرت۔ قاموس الکتب۔ ایسٹ انڈیا کمپنی اور باغی علما۔ نواب نجیب الدولہ اور جنگ پانی پت۔[3]

ہجرت[ترمیم]

1949ء میں مفتی انتظام اللہ پاکستان ہجرت کرگئے جہاں وہ متعدد علمی و ادبی اداروں سے منسلک ہو گئے۔ پاکستان میں بیس سال کے قیام کے دوران اُنہوں نے تصنیف و تالیف کا کام بالکل نہ چھوڑا اور آخر عمر تک لکھتے رہے۔

وفات[ترمیم]

مفتی انتطام اللہ کا انتقال 77 سال کی عمر میں بروز پیر 8 ستمبر 1969ء کی شام ساڑھے چھ بجے کراچی میں ہوا۔[4] تدفین قبرستان پاپوش نگر، شمالی ناظم آباد ٹاؤن، کراچی میں کی گئی۔[3]

اعتراضات[ترمیم]

چونکہ مفتی صاحب کی سب سے بڑی کمزوری حالات اور حوالہ جات وضع کرنا تھی، اِس کام کے لیے وہ بلا تکلف کسی کتاب کا حوالہ دے دیتے اور لکھ دیتے کہ یہ قلمی کتاب ہمارے خاندان گوپامئو کے کسی کتاب خانے میں موجود ہے۔ حالانکہ نہ وہ واقعہ ہی درست ہوتا اور نہ ہی اُس نام کی کوئی کتاب ہی موجود ہوتی اور نہ گوپامئو میں ایسا کوئی کتاب خانہ موجود ہوتا۔ لوگ اُن پر اعتراضات کرتے تھے مگر وہ پشیماں نہ ہوتے اور کہتے کہ میاں تم اعتراض کرتے رہو، میں اپنا کام کرتا رہوں گا، بعد کے لوگ درست کر لیں گے۔ اکثر خطوط میں یا بیانات میں "یارخاں" کا نام ملتا ہے جو غالباً اُن کا تکیہ کلام تھا اور اِس سے اُن کا اشارہ اپنی طرف ہوتا تھا۔

محقق و ماہر غالبیات مالک رام (متوفی 16 اپریل 1993ء) نے اپنی بابت بھی ایسا واقعہ لکھا ہے کہ: خود میں ایک مرتبہ بہت پریشان ہوا۔ اُنہوں نے اپنی ایک تحریر میں ایک قلمی کتاب کا حوالہ دیا اور لکھ دیا کہ یہ مخطوطہ قلمی ارکاٹ کے کتاب خانے میں محفوظ ہے، چونکہ موضوع سے مجھے دلچسپی تھی، میں نے اپنے بعض مدراسی دوستوں سے استمداد کی۔ مہینوں کی تگ و دو کے بعد راز کھلا کہ سب جعل تھا۔[4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ڈاکٹر منیر سلیچ: وفیات مشاہیر کراچی، صفحہ 84۔ مطبوعہ کراچی
  2. مالک رام: تذکرہ معاصرین، جلد اول، صفحہ 159۔ مطبوعہ دہلی، 2011ء۔
  3. ^ ا ب ڈاکٹر محمد منیر احمد سلیچ: وفیات مشاہیر کراچی، صفحہ 84۔ مطبوعہ کراچی
  4. ^ ا ب مالک رام: تذکرہ معاصرین، جلد اول، صفحہ 160۔ مطبوعہ دہلی، 2011ء۔