اندر کمار گجرال

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
اندر کمار گجرال
I K Gujral
I K Gujral
فہرست وزرائے اعظم بھارت وزیراعظم بھارت
عہدہ سنبھالا
21 اپریل 1997 – 19 مارچ 1998
صدر شنکر دیال شرما
کے آر نارائن
پیشرو ایچ ڈی دیوے گوڑا
جانشین اٹل بہاری واجپائی
Minister of Finance
عہدہ سنبھالا
21 اپریل 1997 – 1 مئی 1997
پیشرو P. Chidambaram
جانشین P. Chidambaram
Minister of External Affairs
عہدہ سنبھالا
1 جون 1996 – 19 مارچ 1998
وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڑا
پیشرو Sikander Bakht
جانشین اٹل بہاری واجپائی
عہدہ سنبھالا
5 دسمبر 1989 – 10 نومبر 1990
وزیر اعظم وی پی سنگھ
پیشرو وی پی سنگھ
جانشین Vidya Charan Shukla
ذاتی تفصیلات
پیدائش 4 دسمبر 1919 (1919-12-04)[1]
جہلم، Punjab Province، برطانوی راج
(now in پنجاب، پاکستان، پاکستان)
وفات 30 نومبر 2012 (عمر 92 سال)
گرگاؤں، ہریانہ، بھارت
سیاسی جماعت Janata Dal (1988–1998)
Independent (1998 onwards)
دیگر سیاسی
وابستگیاں
انڈین نیشنل کانگریس (Before 1988)
شریک حیات Shiela Gujral
مادر علمی D.A.V. College،
ہیلے کالج آف کامرس
فارمین کرسچین کالج
مذہب ہندومت

اندر کمار گجرال 4 دسمبر 1919ء کو پاکستان کے شہر جہلم میں پیدا ہوئے۔ آپ بھارت کے 12 ویں وزیراعظم تھے۔ آپ نے برطانوی ہند کی آزادی کے لیے تحریک میں حصہ لیا اور اس سلسلے میں جیل بھی گئے۔ انہوں نے طالب علمی کے زمانے میں کمیونسٹ پارٹی کے رکن کے طور پر سیاست میں حصہ لیا لیکن بعد میں کانگریس جماعت میں شامل ہوئے۔

انتقال کے وقت ان کی عمر 92 برس تھی۔ ان کو 1997 میں وزارت عظمیٰ کے عہدے پر اس وقت فائز کیا گیا جب انڈین نیشنل کانگریس نے یونائٹڈ فرنٹ کی مخلوط حکومت سے اپنی حمایت واپس لے لی اور وزیر اعظم دیوے گوڈا کی حکومت گر گئی۔

’گجرال کے نظریے‘[ترمیم]

ان کے وزیر اعظم کے گیارہ ماہ میں سامنے آنے والے ’گجرال کے نظریے‘ کو یاد کیا جاتا ہے۔ انہوں نے اسی نظریے پر عملدرآمد بطور وزیر خارجہ بھی کیا۔ وہ 1989ء سے 1990ء تک اور پھر 1996ء سے 1998ء تک وزیر خارجہ کے منصب پر تعینات رہے۔
اس نظریے کے تحت انہوں نے بھارت کے اخراجات پر پڑوسی ملکوں کو مراعات دیں تاکہ ان سے تعلقات بہتر بنائے جا سکیں۔
تاہم گجرال کا یہ نظریہ پاکستان پر لاگو نہیں ہوتا تھا اور انہوں نے پاکستان کو کوئی مراعات نہیں دیں۔
پنجاب سے تعلق رکھنے کے باعث وہ اپنی جپھیوں یعنی بغل گیر ہونے کے حوالے سے بڑے مشہور تھے۔ لیکن اسی وجہ سے وہ ایک بار اس وقت مشکل میں پڑ گئے جب عراق کی جانب سے کویت پر حملے کے بعد گجرال کی صدام حسین کے ساتھ بغل گیر ہوتے ہوئے تصویر آئی۔
اندر کمار گجرال مشکل سے مشکل صورتحال سے بخوبی نمٹنے کے لیے مشہور تھے۔ لیکن دیگر وزرائے اعظم کی طرح وہ بھی بھارت کے اندرونی معاملات میں کسی کی مداخلت برداشت نہیں کرتے تھے۔
اسی لیے جب برطانوی وزیر خارجہ رابن کُک نے مسئلہ کشمیر پر مفاہمت کرانے کی پیشکش کی تو گجرال نے نے برطانیہ کو ’تھرڈ ریٹ پاور‘ قرار دیا۔انہوں نے قاہرہ میں مصری دانشوروں کے ساتھ نجی بات چیت میں کہا تھا ’برطانیہ ایک تھرڈ ریٹ پاور ہے۔ اس نے جب ہندوستان تقسیم کیا تو کشمیر بنایا اور اب یہ ہمیں اس کا حل بتانا چاہتا ہے۔‘
سنہ 1980ء میں انہوں نے کانگریس چھوڑ کر جنتا دل میں شمولیت اختیار کی۔

گجرال کی مفاہمتی صلاحیتوں کے باعث ان کی مخالفت نہیں ہوئی۔ اور گجرال نے اس عہدے کو بخوبی نبھایا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Matters of Discretion: An Autobiography by I. K. Gujral

بیرونی روابط[ترمیم]

سیاسی دفاتر
پیشرو 
وی پی سنگھ
Minister of External Affairs
1989–1990
جانشین 
Vidya Charan Shukla
پیشرو 
Sikander Bakht
Minister of External Affairs
1996–1998
جانشین 
اٹل بہاری واجپائی
پیشرو 
ایچ ڈی دیوے گوڑا
وزیراعظم بھارت
1997–1998
Chairperson of the Planning Commission
1997–1998
پیشرو 
Palaniappan Chidambaram
Minister of Finance
1997–1997
جانشین 
Palaniappan Chidambaram