انور جلالپوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انور جلالپوری
وفات 2 جنوری 2018ء
آخری آرام گاہ لکھنؤ، اتر پردیش، بھارت
زبان اردو
نمایاں کام رہرو سے رہنما تک،
گیتانجلی (اردو ترجمہ)،
بھگوت گیتا (اردو ترجمہ)
اولاد تین بیٹے

انور جلالپوری بھارت کے ایک مشہور اردو شاعر تھے۔ انفرادی شاعری سے کہیں زیادہ وہ مشاعروں کی نظامت کے لیے مشہور تھے۔ وہ کافی غور اور انہماک سے دیگر شعرا کا کلام سنتے اور کلام کے مرکزی خیال اور شاعری کے حسن کا کافی خوش اسلوبی سے تذکرہ کرتے۔ اسی وجہ سے وہ کئی قومی مشاعروں میں نظامت انجام دے چکے تھے۔

گنگا جمنی تہذیب[ترمیم]

انور بھارت کی ہمہ مذہبی تہذیب کے علمبر دار تھے۔ انہوں نے رویندرناتھ ٹیگور کی شہرہ آفاق کتاب گیتانجلی کا اردو میں ترجمہ کیا۔ اسی طرح انہوں نے ہندو مت کی مقدس کتاب بھگوت گیتا کا اردو میں ترجمہ کیا۔ ان کی اپنی کتاب رہرو سے رہنما تک بھی چھپ کر منظر عام پر آ چکی ہے۔ انہوں نے بھارتی ٹیلی ویژن کے سیریل اکبر دی گریٹ کے مکالمے بھی لکھے تھے۔[1]

عائلی زندگی[ترمیم]

انور شادی شدہ تھے۔ ان کے تین بیٹے تھے جن میں سے ایک کا نام انہوں نے شاہ کار رکھا تھا۔[1]

انتقال[ترمیم]

28 دسمبر 2017ء کو انور غسل لینے کے لیے حمام کا دروازہ بند کیے۔ جب اچھے خاصے وقت کے گزر جانے کے بعد بھی وہ دروازہ نہیں کھولے، توان کے بیٹے نے دروازہ توڑا اور انہیں زمین پر بے ہوش پایا۔ انہیں فورًا لکھنؤ کے کنگ جارجز میڈیکل یونیورسٹی اسپتال شریک کیا گیا۔ یہیں وہ 2 جنوری 2018ء کو انتقال کر گئے۔ ان کی عمر 70 سال تھی۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]