انور کمال پاشا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انور کمال پاشا
انور کمال پاشا

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 23 فروری 1925(1925-02-23)ء
تاریخ وفات 13 اکتوبر 1987(1987-10-13) (عمر  62 سال)
قومیت Flag of پاکستانپاکستانی
عملی زندگی
تعليم ایم اے
مادر علمی ایف سی کالج لاہور، جامعہ پنجاب
پیشہ فلم ہدایت کار  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
نگار ایوارڈ
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں آئی ایم ڈی بی - آئی ڈی (P345) ویکی ڈیٹا پر

انور کمال پاشا (انگریزی: Anwar Kamal Pasha)، (پیدائش: 23 فروری 1925ء - وفات: 13 اکتوبر 1987ء) پاکستان کے نامور فلم ساز، ہدایت کار اور اردو کے نامور ادیب حکیم احمد شجاع کے بیٹے تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

انور کمال پاشا 23 فروری، 1925ء کو لاہور، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے[1]۔ ان کا تعلق لاہور کے ایک علمی گھرانے سے تھا۔ ان کے والد حکیم احمد شجاع کا شمار اردو کے مشہور ادیبوں میں ہوتا ہے جن کی تحریر کردہ کئی کہانیوں پر برصغیر کے نامور ہدایت کاروں نے فلمیں بنائی تھیں [1]۔ انور کمال پاشا نے ایف سی کالج لاہور سے گریجویشن کی اور بعد میں جامعہ پنجاب سے ڈبل ایم اے کیا[2]۔

انور کمال پاشا نے سرکاری ملازمت کو خیرباد کہہ کر ہدایت کار لقمان کی فلم شاہدہ کے مکالمے لکھ کر فلمی صنعت سے وابستگی اختیار کی، پھر بطور ہدایت کار اپنے والد کے ناول باپ کا گناہ پر فلم دو آنسو بنائی۔ 7 اپریل، 1950ء کو ریلیز ہونے والی یہ فلم پاکستان کی پہلی اردو سلور جوبلی فلم تھی۔ اس فلم میں صبیحہ خانم، سنتوش کمار، شمیم بانو، ہمالیہ والا، شاہنواز،گلشن آرا،اجمل، علاء الدین اور آصف جاہ نے اہم کردار ادا کیے تھے۔[2]

انور کمال پاشا نے مجموعی طور پر 24 فلمیں بنائیں جن میں غلام، قاتل، سرفروش، دلا بھٹی، چن ماہی اور انار کلی کے نام سرفہرست ہیں جبکہ ان کی دیگر فلموں میں گھبرو، دلبر، رات کی بات، انتقام، گمراہ، لیلیٰ مجنوں، وطن، محبوب، سازش، سفید خون، خاناں دے خان پروہنے، پروہنا، ہڈحرام اور بارڈر بلٹ کے نام شامل ہیں۔[2]۔ انہوں نے سماجی موضوعات پر فلمیں بنائیں جن میں اصلاحی پہلو بھی نمایاں ہوتا تھا۔ افلاس، محبت، اخلاقی انحطاط، سماجی رویے اور عورت ان کی فلموں کے موضوعات تھے۔ انہوں نے کئی اداکاروں کی تربیت کی اور بہت سے نئے چہرے متعارف کرائے۔ ان فنکاروں میں صبیحہ خانم، مسرت نذیر، اسلم پرویز، نیئر سلطانہ اور بہار بیگم شامل ہیں۔ اس کے علاوہ انہوں نے موسیقار ماسٹر عنایت حسین اور ماسٹر عبداللہ کو بھی فلمی صنعت میں متعارف کرایا۔[1]

انور کمال پاشا اپنے والد کی طرح ایک اچھے ادیب اور مترجم بھی تھے۔ انہوں نے پرل ایس بک کے مشہور ناول گڈ ارتھ کا اردو ترجمہ بھی کیا تھا۔ انہوں نے فلمی اداکارہ شمیم بانو سے شادی کی تھی۔[2]

اعزازات[ترمیم]

انور کمال پاشا نے فلم وطن کے کہانی نگار کے طور پر نگار ایوارڈ حاصل کیا۔ اس کے علاوہ 1981ء میں انہیں ان کی تیس سالہ فلمی خدمات پر خصوصی نگار ایوارڈ بھی عطا ہوا تھا۔[2]

مشہور فلمیں[ترمیم]

  • باپ کا گناہ
  • دو آنسو
  • غلام
  • قاتل
  • سرفروش
  • چن ماہی
  • انار کلی
  • دلا بھٹی
  • گھبرو
  • دلبر
  • رات کی بات
  • انتقام
  • گمراہ
  • لیلیٰ مجنوں
  • وطن
  • محبوب
  • سازش
  • سفید خون
  • خاناں دے خان پروہنے
  • پروہنا
  • ہڈحرام
  • بارڈر بلٹ

وفات[ترمیم]

انور کمال پاشا 13 اکتوبر، 1987ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ لاہور میں میانی صاحب کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔[2][3]

حوالہ جات[ترمیم]