مندرجات کا رخ کریں

انگر کرسٹینسن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
انگر کرسٹینسن
 

معلومات شخصیت
پیدائش 16 جنوری 1935ء [1][2][3][4][5][6][7]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وایلے   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 جنوری 2009ء (74 سال)[8][1][9][2][3][4][5]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کوپن ہیگن   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت مملکت ڈنمارک   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر ،  ناول نگار ،  مضمون نگار ،  بچوں کی ادیبہ ،  مصنفہ ،  ڈراما نگار   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ڈینش زبان [10]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل شاعری ،  مضمون   ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
ادب میں امریکا انعام   ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

انگر کرسٹینسن (16 جنوری 1935ء- جنوری 2009ء) [11] ڈینش خاتون شاعرہ، ناول نگار، مضمون نگار اور ایڈیٹر تھیں۔ انھیں اپنی نسل کی سب سے اہم ڈینش شاعرانہ تجرباتی ماہر سمجھا جاتا ہے۔

ابتدائی زندگی اور کیریئر

[ترمیم]

کرسٹینسن ڈنمارک کے مشرقی جٹ جٹلینڈ ساحل پر واقع ویزل قصبے میں پیدا ہوئی، ان کے والد درزی تھے اور ان کی والدہ شادی سے پہلے باورچی تھیں۔ ویزل جمنازیم سے فارغ التحصیل ہونے کے بعد وہ کوپن ہیگن چلی گئیں اور بعد میں آرہوس منتقل ہو گئیں جہاں انھوں نے ٹیچرز کالج میں تعلیم حاصل کی۔ انھیں 1958ء میں اپنا سرٹیفکیٹ ملا۔ اسی عرصے کے دوران کرسٹینسن نے جریدے ہیوڈیکورن میں نظمیں شائع کرنا شروع کیں اور ان کی رہنمائی ڈینش کے مشہور شاعرہ اور نقاد پول بوروم نے کی جن سے انھوں نے 1959ء میں شادی کی اور 1976ء میں طلاق لے لی۔ [12] 1963ء سے 1964ء تک ہولبک لیس کالج برائے آرٹس میں تعلیم دینے کے بعد کل وقتی تحریر کا رخ کیا، اپنے دو بڑے ابتدائی مجموعے، لائس (لائٹ، 1962ء) اور گراس (گراس، 1963ء) تیار کیے، دونوں خود علم کی حدود اور ادراک میں زبان کے کردار کی جانچ پڑتال کرتے ہیں۔ <i id="mwIg">ڈیٹ</i> 1960ء کی دہائی کا ان کا سب سے زیادہ سراہی جانے والا کام اٹ تھا جس نے ایک سطح پر سماجی، سیاسی اور جمالیاتی مسائل کو تلاش کیا لیکن معنی کے بڑے فلسفیانہ سوالات کی زیادہ گہرائی سے تحقیقات کی یہ کام جو تقریبا تاپدیپت ہے، خوف اور محبت اور طاقت اور بے اختیار ہونے جیسے مسائل کی مخالفت کرتا ہے۔ [12]

اعزازات

[ترمیم]

1978ء میں وہ 1994ء میں رائل ڈینش اکیڈمی میں مقرر ہوئی، وہ 2001ء میں اکیڈمی یورپین ڈی پوسی (یورپی اکیڈمی آف شاعری) کی رکن بن گئیں، اکیڈمی آف آرٹس، برلن کی رکن۔ [13] اس نے 1991ء میں گرینڈ پری ڈیس بینیلز انٹرنیشنل ڈی پوسی جیتا۔ اسے 1991ء میں رنگسٹیڈلینڈ ایوارڈ ملا۔ [14] اس نے سویڈش اکیڈمی نورڈک انعام جیتا جسے 'لٹل نوبل' کے نام سے جانا جاتا ہے۔ 1995ء میں یورپی شاعری کا انعام۔ 2001ء میں امریکا ایوارڈ [15] 2006ء میں جرمن سیگ فرائیڈ انسلڈ پریس اور متعدد دیگر اعزازات حاصل کیے۔ ان کے کاموں کا کئی زبانوں میں ترجمہ کیا گیا ہے اور انھیں ادب میں نوبل انعام کے امیدوار کے طور پر اکثر ذکر کیا جاتا تھا۔ [15]

موسیقی

[ترمیم]

مکمل "بٹر فلائی ویلی" کو دو ڈینش موسیقاروں، نیلز روزنگ-شو اور سویڈ نیلسن نے دو بار ترتیب دیا ہے۔ دونوں ورژن، الگ الگ، آرس نووا کوپن ہیگن نے شاعر کی شاعری کے ساتھ ریکارڈ کیے تھے۔

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. ^ ا ب ربط : https://d-nb.info/gnd/119545039  — اخذ شدہ بتاریخ: 27 اپریل 2014 — اجازت نامہ: CC0
  2. ^ ا ب انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس آئی ڈی: https://wikidata-externalid-url.toolforge.org/?p=345&url_prefix=https://www.imdb.com/&id=nm0159794 — اخذ شدہ بتاریخ: 13 اکتوبر 2015
  3. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Inger-Christensen — بنام: Inger Christensen — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  4. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w65r73fp — بنام: Inger Christensen — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  5. ^ ا ب Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/christensen-inger — بنام: Inger Christensen
  6. Babelio author ID: https://www.babelio.com/auteur/wd/119676 — بنام: Inger Christensen
  7. Proleksis enciklopedija ID: https://proleksis.lzmk.hr/15265 — بنام: Inger Christensen — عنوان : Proleksis enciklopedija
  8. http://www.straitstimes.com/Breaking%2BNews/Lifestyle/Story/STIStory_322278.html
  9. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb120150523 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  10. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb120150523 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  11. Charles Lock and Jakob Stougaard-Nielsen (19 February 2009)۔ "Inger Christensen"۔ The Guardian۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2019 
  12. ^ ا ب Jensen, Elisabeth Møller Inger Christensen (1935 - 2009) . Dansk Kvindebiografisk Leksikon.
  13. "Poet Inger Christensen dies: Danish poet Inger Christensen dies at 73", Agence France Presse, as published on the Singapore Straits Times website, retrieved January 7, 2008
  14. "Danish Writer Inger Christensen Dies at Age 73", Associated Press article (no byline given), as published on The New York Times website, January 5, 2009, retrieved January 7, 2009
  15. ^ ا ب