ایا صوفیہ صغری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(ایاصوفیہ اصغر سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
ایاصوفیہ صغری
Küçük Ayasofya Camii
ایا صوفیہ صغری.jpg
ایا صوفیہ صغری دسمبر 2018 صبح
ایا صوفیہ صغری is located in استنبول فاتح
ایا صوفیہ صغری
ایا صوفیہ صغری مسجد، ضلع فاتح، استنبول
بنیادی معلومات
مقاماستنبول, ترکی
متناسقات41°00′10″N 28°58′19″E / 41.00278°N 28.97194°E / 41.00278; 28.97194متناسقات: 41°00′10″N 28°58′19″E / 41.00278°N 28.97194°E / 41.00278; 28.97194
مذہبی انتسابسنی اسلام (موجودہ); یونانی آرتھوڈوکس (اصل)
ملکترکی
سنہ تقدیس1506 سے 1513 (اسلام); c. 536 (عیسائی)
تعمیراتی تفصیلات
نوعیتِ تعمیرچرچ
طرز تعمیربازنطین
سنگ بنیاد532
سنہ تکمیل536
مینار1
مواداینٹیں, گرینائٹ, سنگ مرمر, قدیم نوادرات
یونیسکو عالمی ثقافتی ورثہ
بسلسلہاستنبول کا تاریخی علاقہ
معیارCultural: i, ii, iii, iv
حوالہ356
کندہ کاری1985 (9 اجلاس)


ایا صوفیہ صغری (ترکی: Küçük Ayasofya Camii) جو کہ پہلے ایک یونانی چرچ تھا جو کہ 532 سے 536 عیسوی میں تعمیر ہوا اور عثمانی دور میں ایک مسجد میں تبدیل ہو گیا۔

مقام[ترمیم]

یہ عمارت ضلع فاتح، استنبول میں بحر مارمارہ سے تھوڑے فاصلے پر واقع ہے۔ اب یہ مسجد سرکیسی - ہلالی مضافاتی ریلوے لائن اور ساحلی روڈ ، کینیڈی ایوینیو کے ذریعہ سمندر سے الگ ہوگیا ہے۔

تاریخ[ترمیم]

بازنطینی عہد[ترمیم]

جسٹینین اول کے دور میں ، اس کے بھتیجے جسٹین پر تخت کے خلاف سازش کرنے کا الزام عائد کیا گیا تھا اور اسے سزائے موت سنائی گئی تھی ، جسٹن کے سامنے سینٹس سرجیوس اور باچوس پیش ہوئے اور انہوں نےجسٹین کی بے گناہی پر زور دیا تھا۔ جسٹین کو آزاد کر دیا گیا اور اسے دوبارہ قیصر کے لقب سے بحال کردیا گیا۔شہنشاہ بننے کے بعد شکریہ ادا کرنے کے لئے اس نے چرچ آف سینٹس سیرگیوس اور باچوس کی تعمیر کی جو کہ ایا صوفیہ کی تعمیر سے بھی پہلے کی گئی۔[1]

عثمانی عہد[ترمیم]

1453 میں عثمانی خاندان کے قسطنطنیہ کی فتح کے بعد، سلطان بایزید دوم کے دور تک یہ عمارت چرچ کے طور پر استعمال ہوتی رہی۔ اس کے بعد (1506 سے 1513 کے درمیان) اس کو حسین آغا نے ایک مسجد میں تبدیل کیا۔ پھر اس میں ایک مدرسہ کی تعمیر بھی کی گئی۔[2]

سن 1740 میں وزیر اعظم ہاسی احمد پاشا نے مسجد کو از سر نو تعمیر کیا اور پانی کی فراہمی کا انتظام بھی کیا۔ سال 1831 اور 1763 کے زلزلوں سے ہونے والے نقصان کی مرمت سلطان محمود دوم کے دور میں 1831 میں کی گئی۔ 1762 میں مسجد میں مینار پہلی بار تعمیر کیا گیا تھا۔ مسجد 1940 میں مسمارہو گئی اور 1956 میں اسے دوبارہ تعمیر کیا گیا۔

عمارت کی مستحکم سالمیت کے لئے بڑھتے ہوئے خطرات کی وجہ سے ، اسے کچھ سال قبل خطرے سے دوچار یادگاروں کی یونیسکو واچ لسٹ میں شامل کیا گیا تھا۔ ورلڈ یادگار فنڈ نے اسے 2002 ، 2004 اور 2006 میں 100 انتہائی خطرناک سائٹوں کی اپنی فہرست فہرست میں شامل کیا۔ ایک وسیع بحالی کے بعد جو کئی سال تک جاری رہی اور ستمبر 2006 میں ختم ہوئی ، اسے دوبارہ عوام اور عبادت کے لئے کھول دیا گیا ہے۔

میدان[ترمیم]

اس عمارت کے شمال میں ایک چھوٹا سا قبرستان ہے جس میں مسجد کے بانی حسین آغا کی قبر ہے۔

ایا صوفیہ صغری، مقبرہ حسین آغا، استنبول، ترکی

نگار خانہ[ترمیم]


حوالہ جات[ترمیم]

  1. Runciman, Steven, 1903-2000. (2013). Lost Capital of Byzantium The History of Mistra and the Peloponnese. Tauris Parke Paperbacks. ISBN 978-1-84511-895-2. OCLC 1082034613. 
  2. Müller-Wiener، Wolfgang (1977). Bildlexikon zur Topographie Istanbuls. Wasmuth. ISBN 3803010225.