ایران بھارت تعلقات

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ایران بھارت تعلقات
نقشہ مقام Iran اور India

ایران

بھارت

ایران بھارت تعلقات سے مراد بھارت اور ایران کے دوطرفہ تعلقات ہیں۔ آزاد بھارت اور ایران نے 15 مارچ 1950ء کو سفارتی تعلقات قائم کیے۔ سرد جنگ کے عرصے میں، جمہوریہ بھارت اور ایران کی سابق شاہی ریاست مختلف سیاسی مفادات کی وجہ سے الگ الگ اتحاد بنائے رکھے، غیر وابستہ ایران نے سوویت اتحاد کے ساتھ مضبوط فوجی روابط کو فروغ دیا جب کہ ایران نے امریکا کے ساتھ قریبی تعلقات کا اظہار کیا۔[1] 1979ء کے انقلاب ایران کے بعد، ایران اور بھارت کے درمیان میں تعلقات عارضی طور پر مضبوط ہوئے۔ البتہ، پاکستان کے لیے ایران کی مسلسل حمایت اور ایران عراق جنگ کے دوران میں بھارت کے عراق سے قریبی تعلقات نے بھارت ایران تعلقات کو پنپنے نہ دیا۔[2] 1990ء کی دہائی میں، بھارت اور ایران دونوں نے طالبان حکومت کے خلاف صف آرا شمالی اتحاد کی حمایت کی۔ دونوں ممالک اشرف غنی کی قیادت میں وسیع پیمانے پر امریکا کی حمایت یافتہ اور طالبان مخالف حکومت کی حمایت میں تعاون کرتے ہیں۔ دونوں ممالک کے دسمبر 2002ء میں ایک دفاعی تعاون کے معاہدے پر دستخط کیے۔[3]

اقتصادی نقطہ نظر سے، ایران بھارت کو خام تیل مہیا کرنے والا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے، جو روزانہ 425,000 تیل مہیا کرتا ہے، نتیجتا بھارت ایران کی تیل اور گیس کی صنعت میں سب سے بڑے غیر ملکی سرمایہ کاروں میں سے ایک ہے۔[4] 2011ء میں، بھارت اور ایران 12 بلین امریکی ڈالر تیل کی تجارت کر رہے تھے، وہ ایران کے خلاف وسیع اقتصادی پابندیوں کی وجہ سے روک دی گئی تھی اور بھارتی تیل کی وزارت کو مجبور کیا گیا وہ وہ بقایا رقم ترکی کے ذریعے بینکاری نظام سے ادا کرے۔[5][6]

جغرافیائی نقطہ نظر سے، اگرچہ دونوں ملکوں کے کچھ مشترکہ اسٹریٹجک مفادات ہیں، لیکن بھارت اور ایران بنیادی خارجہ امور متعلقہ مسائل میں بالکل مختلف ہیں۔بھارت نے ایران کے جوہری منصوبے کے خلاف سخت مخالفت کا اظہار کیا ہے، اس کے باوجود دونوں ممالک طالبان کی مخالفت کرتے ہیں، بھارت ایران کے برعکس افغانستان میں نیٹو افواج کی موجودگی کی حمایت کرتا ہے۔[7] بی بی سی ورلڈ سروس کے 2005ء کے پول کے مطابق 71% ایرانی بھارت کے متعلق مثبت رائے رکھتے ہیں اور 21% منفی، باقی ساری دنیا کے مقابلے میں یہ بھارت متعلقہ جذبات کی سب سے اچھا تناسب ہے۔[8] اس کے علاوہ، پاکستان اور بھارت دونوں ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات کی وجہ ایران ان دونوں ممالک کے درمیان میں ثالثی کرتا رہتا ہے۔[9]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Prakash Nanda۔ Rising India: Friends and Foes۔ Lancer Publishers, 2008۔ آئی ایس بی این 978-0-9796174-1-6۔
  2. Shireen Hunter۔ Iran's foreign policy in the post-Soviet era: resisting the new international order۔ ABC-CLIO, 2010۔ آئی ایس بی این 978-0-313-38194-2۔
  3. Zeb، Rizwan (12 فروری 2003). "The emerging Indo-Iranian strategic alliance and Pakistan". CACI Analyst. http://www.cacianalyst.org/publications/analytical-articles/item/7799-analytical-articles-caci-analyst-2003-2-12-art-7799.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 21 اگست 2013. 
  4. "Iran's major oil customers, energy partners"۔ tehrantimes.com۔ 7 جون 2009۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولائی 2017۔
  5. Jay Solomon؛ Subhadip Sircar (29 دسمبر 2010)۔ "India Joins U.S. Effort to Stifle Iran Trade"۔ Wall Street Journal magazine۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جنوری 2011۔
  6. "India paid $5 bn Iran oil debt in full: central bank, AFP, 4 ستمبر 2011"۔ google.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولائی 2017۔
  7. "India's Iran calculus"۔ فارن پالیسی (رسالہ) magazine۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جنوری 2011۔
  8. BBC World Service Poll GlobeScan
  9. Dawn.com (4 دسمبر 2016)۔ "Iran offers to mediate between Pakistan and India"۔ dawn.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولائی 2017۔

مزید پڑھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

سفارت خانہ

مزید مطالعہ