اے کے رامانوجن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اے کے رامانوجن
معلومات شخصیت
پیدائش 16 مارچ 1929[1][2]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میسور[3]  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 13 جولا‎ئی 1993 (64 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شکاگو  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن امریکی اکادمی برائے سائنس و فنون[4]  ویکی ڈیٹا پر رکن (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ میسور[5]
انڈیانا یونیورسٹی[6]  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ماہرِ لسانیات[7]، مصنف[8]، مترجم[9]، شاعر[10]، فکیلٹی رکن[7]  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[11]، کنڑ زبان، تیلگو، تمل، سنسکرت  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت یونیورسٹی آف شکاگو[8]  ویکی ڈیٹا پر نوکری (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
ساہتیہ اکادمی ایوارڈ  (برائے:The Collected Poems of A. K. Ramanujan) (1999)[6][12]
میک آرتھر فیلو شپ  (1983)[13]
IND Padma Shri BAR.png پدم شری اعزاز برائے ادب و تعلیم  (1976)  ویکی ڈیٹا پر وصول کردہ اعزازات (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

ایٹی پیٹ کرشنسوامی رامانوجن 16 مارچ 1929 کو پیدا ہوئے۔ ان کا انتقال جولائی 1993 کو ہوا۔ انہیں عام طور پراے کے رامانوجن کہا جاتا ہے وہ ہندوستانی ادب کے ایک معروف شاعر اور اسکالر گردانے جاتے ہیں جنھوں نے انگریزی اور کناڈا دونوں زبانوں میں لکھا۔ رامانوجن ایک شاعر ، اسکالر ، مترجم اور ڈراما نگار تھے۔ ان کی علمی تحقیق میں پانچ زبانیں انگریزی ، کنڑا ، تامل ، تیلگو اور سنسکرت شامل ہیں۔ انہوں نے اس ادب کی کلاسیکی اور جدید دونوں اقسام پر کام شائع کیا اگرچہ انہوں نے وسیع پیمانے پر اور متعدد صنفوں میں لکھا ، لیکن ان کی نظموں کو چونکا دینے والی اصلیت ، نفاست اور متحرک فن نگاری کی وجہ سے یاد کیا جاتا ہے۔ انہیں 1999 میں ان کے نظموں کے مجموعے ،" منتخب نظمیں" کے لیے ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ بھی ملا۔

بچپن[ترمیم]

رامانوجن 16 مارچ 1929 کو میسورشہر میں پیدا ہوئے ۔ ان کے والد ، اتیپٹ اسوری کرشناسوامی ، جو ماہر یونیورسٹی میں ماہر فلکیات اور ریاضی کے پروفیسر تھے وہ انگریزی ، کناڈا اور سنسکرت زبانوں میں دلچسپی رکھتے تھے۔ ان کی والدہ گھریلو خاتون تھیں۔

تعلیم[ترمیم]

رامانوجن کی تعلیم مریمورپا ہائی اسکول میسور اور مہاراجا کالج میسور ہوئی تھی۔ کالج میں ، رامانوجن اپنے پہلے تعلیمی سال میں سائنسی مضامین اختیارکئے لیکن بعد میں اپنے والد کی خواہش پر انگریزی کی تعلیم حاصل کرنے لگے۔ رامانوجن 1958–59 میں دکن کالج ، پونے کے فیلو اور 1959–62 میں انڈیانا یونیورسٹی میں فلبرائٹ اسکالر بن گئے۔ انہوں نے میسور یونیورسٹی میں انگریزی میں تعلیم حاصل کی اور انڈیانا یونیورسٹی سے لسانیات  میں پی ایچ ڈی کی سند حاصل کی۔

کیریئر[ترمیم]

رامانوجن نے کوئلن اور بیلگام میں انگریزی کے لیکچرر کی حیثیت سے کام کیا۔ 1962 میں ، انہوں نے شکاگو یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر کی حیثیت سے شمولیت اختیار کی۔ وہ یونیورسٹی کے تمام شعبوں سے وابستہ رہے ، متعدد شعبوں میں تدریس کرتے رہے۔ انہوں نے دوسری امریکی یونیورسٹیوں میں بھی پڑھایا ، جس میں ہارورڈ یونیورسٹی ، وسکونسن یونیورسٹی ، مشی گن یونیورسٹی ، برکلے میں کیلیفورنیا یونیورسٹی اور کارلیٹن کالج شامل ہیں۔ شکاگو یونیورسٹی میں ، رامانوجن نے ساؤتھ ایشین اسٹڈیز پروگرام کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا۔ انہوں نے جنوبی ایشین زبانیں اور تہذیبوں ، لسانیات کے شعبوں میں اور سماجی فکر کی کمیٹی کے ساتھ بھی کام کیا۔ انہوں نے اپنی ساری شاعری امریکا میں بیٹھ کر لکھی لیکن ان کی شاعری کا دل ہندوستان اور ہندوستانی ثقافت ہی رہا۔بہت کم امریکی طرز زندگی ان کی شاعری میں جھلکتا ہے۔ 1976 میں ، حکومت ہند نے انہیں پدم شری سے بھی نوازا

مضامین[ترمیم]

تین سو رامائن: پانچ مثالیں اور تین خیالات تر جمے کے ساتھ

اے کے رامانوجن کے جمع کردہ مضامین

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12093997q — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6b98vqt — بنام: A. K. Ramanujan — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. https://www.outlookindia.com/magazine/story/method-to-the-mad-singer/298087 — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  4. http://southasia.ucla.edu/culture/intellectuals/k-ramanujan-1929-1993-scholar-poet-writer/ — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  5. https://www.thenation.com/article/samskara-ur-ananthamurthy-book-review/ — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  6. ^ ا ب https://indianexpress.com/article/lifestyle/books/man-of-the-word-ayyappa-paniker-5085080/ — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  7. https://thewire.in/politics/remembering-ak-ramanujan — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  8. ^ ا ب https://www.livemint.com/Leisure/zKQlw5onFy0BRykDBXh70K/AK-Ramanujan-a-lonely-hero.html — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  9. https://www.thehindu.com/books/the-hyphen-in-translations/article22642561.ece — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  10. https://www.thehindu.com/books/under-the-ramanujan-tree/article23270993.ece — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018
  11. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12093997q — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  12. http://sahitya-akademi.gov.in/awards/akademi%20samman_suchi.jsp#ENGLISH — اخذ شدہ بتاریخ: 25 فروری 2019
  13. http://www.indiawest.com/news/global_indian/two-indian-americans-named-recipients-of-national-endowment-for-the/article_cc8f50d4-daf1-11e7-9c38-7f3f0e98a265.html — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اگست 2018