اے کے ہنگل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
اے کے ہنگل

اے کے ہنگل کا پورا نام اوتار کرشن ہنگل تھا۔ ان کی پیدائش ایک کشمیری پنڈت کے خاندان میں سیالکوٹ(اب پاکستانی پنجاب میں) میں 15 اگست 1915 میں ھوئی۔ وہ بچپن میں تھیٹر میں کام کیا کرتے تھے۔ ان کا قیام پشاور میں بھی رہا۔.

انھوں نے کچھ عرصے درزی کاکام بھی کیا۔. ہنگل نے بھارتی آزادی کی جدوجہد میں پرطانوی سامراج کے خلاف فعال حصہ لیا تھا۔ اپنے والد کی ریٹائرمنٹ کے بعد، ان کا کنبہ پشاور سے کراچی منتقل ھوگیا تھا۔. جہان پاکستان میں انھیں جیل میں 3 سال کی قید ھوئی۔

1949 ء میں بھارت کی تقسیم کے بعد ان کو جیل سے رہائی ملی اور وہ ممبئی منتقل ھوگئے۔. ہنگل کا جھکاؤ بائیں بازو کی طرف رہا او وہ تاحیات عملی مارکسٹ رھے۔ وہ شیوسینا کے ایک بہت بڑے ناقد تھے۔ بھربلراج ساہنی اور کیفی اعظمی، کے ساتھ تھیٹر گروپ اپٹا میں کام کرنے لگے۔

1946 میں انھوں نے اپنے فلمی کیرئیر کا آغاز خاصی تاخیر سے 30 سال کی عمر میں بھاسو بھٹیا چاریہ کی فلم " تیسری قسم " سے کیا اور ہنگل نے ہندی فلموں میں اعلی درجے کی اداکاری کی۔

ہنگل نے زیادہ تر بوڑھوں اور عمر رسیدہ کردار ادا کئے۔ فلم "شعلے" مییں ان کا امام مسجد کا کردار ناقابل فراموش ہے۔ انھون نے فلموں میں زیادہ تر مثبت کردار ادا کئے اے کے ہنگل نے 225 فلموں میں کام کیا۔ ان کی پہلی فلم "تیسری قسم اور آخری فلم" ہم سے ہے جہاں" تھی۔ آٹھ (8) ٹیلی وژن کے ڈراموں میں بھی حصہ لیا۔۔ انھوں نے "کاکا" (راجیش کھنہ) کے ساتھ سالہ (16) فلموں میں کام کیا۔

غسل خانے میں گرنے کے سبب ان کی ران کی ھڈی ٹوٹ گئی تھی۔ بھر ان کی کمر کی جراحی ھوئی اور ان کی صحت گرتی رہی۔ 26 اگست، 2011 میں ان کے سینے مین تکلیف اور سانس لینے میں دشواری ھونا شروع ھوئی تو انھیں سینٹا کروس (ممبئی) کے آشا پاریکھ ہسپتال میں داخل کروایا گیا۔ جہان 97 سال کی عمر میں ہنگل صاحب نے اپنی زندگی کی آخری سانسیں لیں۔ ان کو "پون ہنس" آتش خانے میں سبرد آتش کیا گیا۔ ان کے ایک صاحب زادے " وجے" ہین جو ایک زمانے میں فلموں میں عکاسی کیا کرتے تھے۔ جن کا کچھ عرصے پہلے انتقال ھوچکا ہے۔