تزک بابری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(بابرنامہ سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
تزک بابری
KhusrauBabur.jpg 

مصنف ظہیر الدین محمد بابر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مصنف (P50) ویکی ڈیٹا پر
ادبی صنف خود نوشت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں طرز (P136) ویکی ڈیٹا پر
ویب سائٹ
کتاب کی ایک تصویر

بابر کی سوانح تزک بابری ایک تاریخی دستاویز ہے۔ یہ سولہویں صدی کے وسط ایشیاء اور فارس کے بارے میں معلومات دیتی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ جدید دور کے افغانستان، بھارت اور پاکستان میں شامل علاقوں کے بارے میں بھی کئی بامعنی باتیں بتاتی ہے۔

پس منظر[ترمیم]

بابر نے اس کتاب کواپنی مادری زبان ترکی میں لکھا تھا۔ اس کا ایک نسخہ 'المنسکی' نے 1857ء میں شائع کیا جبکہ مسز"اے ایس بیورج" نے ایک نسخہ حیدرآباد، دکن سے حاصل کیا اور 1905ء میں شائع کیا۔[1]

یہ کتاب کی زندگی کے حالات و واقعات پر مشتمل ہے۔ اس کتاب کو چغتائی ترکی زبان میں لکھا گیا ہے۔ اور اس کا ترجمہ فارسی زبان میں اکبر کے زندگی میں ہی ایک مغل درباری اور اکبر کے سوتیلے بیٹے عبدالرحیم خان خانہ نے کیا تھا۔

نگار خانہ[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]