باختر کا ڈیمیٹریس اول

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ڈیمیٹریس اول انیکیٹوس
شہنشاہ
Demetrios I Baktria Tetradrachm 200-185 BC.jpg
ڈیمیٹریس کا سکہ جس نے ہاتھی کی جلد کا سر پہنا ہے۔ دوسری طرف ہرقل کو خود کو تاج پہنا کر اور شیر کی کھال پکڑے ہوئے دکھایا گیا ہے۔
شاہ باختر
ت 200 – تقریباً 167 BCE
پیشرویوتھیڈیمس اول
جانشینیوتھیڈیمس دوم
مملکت يونانی ہند کا بادشاہ
ت. 190-167 قبل مسیح
پیشرووہی پہلا بر سر منصب
جانشینپینٹالین
شریک حیاتاینٹیوکس سوم کی نامعلوم بیٹی (؟)
نسل
شاہی خاندانیوتھڈیمڈ
والدیوتھیڈیمس اول
پیدائشت. 222 قبل مسیح
باختر
وفاتت. 167 قبل مسیح
بھارت

ڈیمیٹریس اول (یونانی: Δημήτριος Α΄)، نیز ڈیمائٹرا؛ سلطنت یونانی باختر/مملکت يونانی ہند (پالی زبان میں یونا، سنسکرت میں "یوانا") کا (200–167 قبل مسیح) کا ایک بادشاہ تھا، جس نے باختر سے لے کر قدیم شمال مغربی ہندوستان تک کے علاقوں پر حکومت کی۔ وہ سلطنت یونانی باختر کے حکمران یوتھیڈیمس اول کا بیٹا تھا اور اس کے بعد 200 قبل مسیح میں اس کے بعد اس نے موجودہ افغانستان و پاکستان مشمولہ وسیع علاقوں کو فتح کیا۔[1]

اسے کبھی جنگ میں شکست نہیں ہوئی اور وہ مرنے کے بعد اپنے جانشین ایگاتھکلیز کے نسبتی سکوں پر آنیکیتوش (ناقابلِ تسخیر) کے طور پر درج تھا۔[2] ڈیمیٹریس اول شاید یوانا دور کا آغاز کرنے والا تھا، جو 186-185 قبل مسیح میں شروع ہوا تھا ، جو اس کے بعد کئی صدیوں تک استعمال ہوتا رہا۔

"ڈیمیٹریس" کم از کم دو اور شاید تین یونانی باختر کے بادشاہوں کا نام تھا۔ زیادہ زیر ڈیمیٹریس دوم ممکنہ رشتہ دار تھا، جبکہ ڈیمیٹریس سوم (ت 100 BCE)؛ صرف شماریاتی شواہد سے جانا جاتا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Demetrius is said to have founded ٹیکسلا (archaeological excavations), and also Sagala in the Punjab, which he seemed to have called Euthydemia, after his father ("the city of Sagala, also called Euthydemia" (Ptolemy, Geographia, VII 1))
  2. No undisputed coins of Demetrius I himself use this title, but it is employed on one of the pedigree coins issued by Agathocles, which bear on the reverse the classical profile of Demetrius crowned by the elephant scalp, with the legend DEMETRIOU ANIKETOU, and on the reverse Herakles crowning himself, with the legend "Of king Agathocles" (Boppearachchi, Pl 8). Coins of the supposed Demetrius III also use the title "Invincible", and therefore are attributed by some to the same Demetrius (Whitehead and al.)