باوا جی سلوئی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
باوا جی سلوئی
معلومات شخصیت
پیدائشی نام غلام احمد
پیدائش 0 دسمبر 1888(1888-12-00)
عینو، پنجاب، پاکستان
وفات 0 دسمبر 1974(1974-12-00)
چوآسیدن شاہ، پنجاب، پاکستان
قومیت ہندوستانیاعوان
عملی زندگی
صنف عالم دین استاذ
موضوعات اردو
مادر علمی ملتان
پیشہ مدرس عالم دین
کارہائے نمایاں سینکڑوں شاگرد
متاثر اہلسنت
P literature.svg باب ادب

باوا جی سلوئی سلوئی ضلع چکوال کو پہچان دینے والے عالم دین مدرس خطیب اور روحانی پیشوا تھے۔

نام[ترمیم]

باوا جی سلوئی کے نام سے اس قدر معروف تھے کہ اکثر لوگ ان کے نام سے واقفیت ہی نہ رکھتے ان کا نام حافظ غلام احمد تھا۔

ولادت[ترمیم]

ان کی ولادت 1888ء موضع عینو ضلع خوشاب میں ہوئی والد کا نام میاں محمد تھا۔

تعلیم و تربیت[ترمیم]

دس سال کی عمر میں انہیں حفظ قرآن کے لیے حافظ نامدار صاحب کے پاس ٹھٹھہ عمر ضلع جھنگ بھیجا گیا حفظ کے بعد درس نظامی کی تکمیل کے لیے ملتان گئے جہاں شیخ الجامعہ غلام محمد گھوٹوی تھے گورمانی ضلع مظفر گڑھ اور جامعہ بگویہ بھیرہ ضلع سرگودھا میں بھی اسباق کی تکمیل کی۔

بیعت[ترمیم]

سلوک میں ان کی بیعت پیر مہر علی شاہ گولڑہ شریف سے تھی بڑی عقیدت کے ساتھ مرشد کے پاس حاضری دیتے پیرو مرشد بھی ان کے پاس سلوئی تشریف لائے تھے سلوئی میں بھیجنے کا اشارہ بھی پیر مرشد نے دیا تھا۔

خدمات[ترمیم]

سلوئی میں دینی تعلیم کے لیے مدرسہ قائم کیا اس علاقے میں سب سے پہلا مدرسہ تھا جس نے قرآن کی تعلیم اور دینی خدمات سر انجام دیں بچوں کے ساتھ مدرسہ میں قیام اور کھانا ان کی سادگی کی علامت تھا ہر جمعہ جھلاری جاکر بچوں کے ساتھ کپڑے دھونا معمول تھا پورے گاؤں کی غمی خوشی میں شرکت ان کی اپنائیت کی پہچان تھی مڈل اسکول کو ہائی اسکول بنوانے میں آپ کا کاوش شامل تھی، سلوئی کا راستہ نہ تھا پہاڑوں کو کاٹ کر راستہ اور پھر سڑک کی تعمیر آپ کے نمایا ں کاموں کی یادگار ہے، سڑک کے لیے چندہ اکٹھا کرنے کے ہر اس شخص کے پاس گئے جس کا تعلق سلوئی سے تھا اور افرادی قوت مہیا کر کے پہاڑی کو کھودنا باواجی سلوئی کا بڑا کارنامہ ہے جو ان کے علاوہ کوئی اور نہ کر سکتا تھا۔ اسی طرح کورنمنٹ ٹرانسپورٹ کی بس چلانے میں بڑا حصہ باوا جی سلوئی کا ہے۔

وفات[ترمیم]

وفات سے کچھ عرصہ پہلے آپ چوآسیدن شاہ تشریف لے گئے جہاں 1974ء میں وفات پائی اور وہیں مدفون ہیں۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. بوڑھا برگد، صفحہ 133، راجا محمد اقبال، رمیل ہاؤس آف پبلیکیشنز راولپنڈی