بدر میاں داد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بدر میاں داد
معلومات شخصیت
پیدائش 17 فروری 1962[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پاکپتن  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 مارچ 2007 (45 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فنی زندگی
صنف قوالی  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آلات موسیقی ہارمونیم,  ویکی ڈیٹا پر (P1303) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ موسیقار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

بدر میاں داد (ولادت: 17 فروری 1962ء - وفات: 2 مارچ 2007ء) پاکستانی قوالی گلوکار تھے۔ ان کو بدر علی خان کے نام سے بھی جانا جاتا ہے ۔ انہوں نے پاکستان میں کئی البم جاری کئے۔ برطانیہ اور ہندوستانی لیبل کے تحت بھی کئی البم جاری کئے۔

ابتدائی زندگی اور کیریئر[ترمیم]

استاد بدر میانداد 1960ء کی دہائی میں پاک پتن میں قوالوں کے ایک مشہور خاندان میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کے والد استاد میانداد اور دادا استاد دین محمد قوال پنجابی زبان میں معروف قوال تھے۔ وہ استاد نصرت فتح علی خان کے چچا زاد بھائی اور بہنوئی تھے۔[2] بدر میانداد نے اپنے قوالی کیریئر کا آغاز 1975ء میں کیا تھا، اور 1980ء کی دہائی کے وسط تک، انہوں نے کچھ شہرت حاصل کی۔ انہوں نے بالی ووڈ کی فلموں کے لئے موسیقی تیار کیا، جس میں فلم ویرود شامل ہے۔ فلم ویرود کے اداکار سلمان خان تھے۔[2] بدر میاں داد نے متعدد پاکستانی فلموں کے لئے موسیقی بھی مرتب کیا، جس میں چپکے چپکے، لاہوریہ، عبرت شامل ہے۔ لیکن شکن (1994ء کی فلم) اور جنت کی تلاش (1999ء کی فلم) شامل تھیں۔ بدر میاں داد کو 1999 ءکی بہترین فلم کا نگار ایوارڈ ملا۔

مشہور قوالی[ترمیم]

  • جشنِ آمد رسول[2]
  • حسن والوں خدا کے لئے چھوڈ دو، عاشقوں کو جلانا بری بات ہے

وفات[ترمیم]

بدر میاں داد 2 مارچ 2007 ءکو لاہور میں دل کا دورہ پڑنے کی وجہ سے انتقال کرگئے۔ بدر میاں داد دو سال کی قلبی تکلیف ذیابیطس سے پیچیدگیاں اور بلڈ پریشر کی پریشانیوں کے بعد انتقال کرگئے۔ کچھ ماہ قبل، وہ بھی فالج کا شکار گئے تھے۔ وہ پچھلے دو سال سے بستر پر تھے اور ایک سال قبل قوالی گانا چھوڑ دیا تھا۔[2]

بدر میاں داد کے چھوٹے بھائی شیر میانداد خان جو خود قوالی کے ایک مشہور گلوکار بھی ہیں، نے ان کی وفات کے بعد اخباری نامہ نگاروں کو بتایا کہ انہیں پانچ سال قبل دل کا دورہ پڑا تھا اور پھر 2 مارچ 2007 ءکو ایک بار پھر اسے دل کا ایک اور جان لیوا دورہ پڑا تھا، جب ان کی موت ہوگئی۔[2]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب ڈسکوجس آرٹسٹ آئی ڈی: https://www.discogs.com/artist/17596 — بنام: Badar Ali Khan — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ "Qawwal Badar Miandad passes away". Pakistan: Dawn. 3 March 2007. اخذ شدہ بتاریخ 06 جون 2018.