بدیا دیوی بھنڈاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بدیا دیوی بھنڈاری
(نیپالی میں: विद्यादेवी भण्डारी خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
تفصیل=

صدر جمہوریہ جمہوریۂ نیپال کی دوسری
آغاز منصب
29 اکتوبر 2015
وزیر اعظم کھڑگا پرساد اولی
پشپا کمار دہل
نائب صدر پرمانند جھا
Fleche-defaut-droite-gris-32.png رام ورن یادو
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
وزارت دفاع
مدت منصب
25 مئی 2009ء – 6 فروری 2011
وزیر اعظم مادھو کمار نیپال
Fleche-defaut-droite-gris-32.png رام بہادر تھاپا
وجے کمار گچھدار Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 19 جون 1961 (58 سال)[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Nepal.svg نیپال  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب ہندو
اولاد 2 (اُوشا کِرن بھنڈاری
نِشا کُسُم بھنداری)
تعداد اولاد 2   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعداد اولاد (P1971) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
تعلیمی اسناد بیچلر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیمی اسناد (P512) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں باضابطہ ویب سائٹ (P856) ویکی ڈیٹا پر

بدیا دیوی بھنڈاری (نیپالی زبان: विद्यादेवी भण्डारी) نیپال کی دوسری اور ملک کی جمہوری تاریخ میں پہلی خاتون صدر ہیں۔[3][4][5][6] وہ سابق نیپالی سیاست دان اور کمیونسٹ پارٹی آف نیپال کی لیڈر رہ چکی ہیں۔ انہیں 549 میں سے 327 ووٹ حاصل کرکے کل بہادر گرونگ کو ہراتے ہوئے صدر منتخب کیا گیا۔ یہ نیپال وزارت دفاع میں سابق وزیر دفاع بھی رہ چکی ہیں۔[7][8]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

دیا دیوی بھنڈاری کی پیدائش 19 جون، 1961ء کو نیپال کے بھوجپور میں رام بہادر پانڈے اور متیھلا پانڈے کے یہاں ہوئی تھی۔ وہ کم عمری میں طالب علمی کی سیاست میں شامل ہو گئیں . یہ اپنے وقت کے ایک کرشماتی اور متاثر کن رہنما کے طور پر بیان کیے گئے کمیونسٹ لیڈر مدن داروغہ کی بھنڈاری بنی۔ تاہم 1993ء میں ایک سڑک حادثے میں ان کے شوہر کی ناگہانی انتقال کے بعد یہ شہ سرخیوں میں آئیں۔

بدیا 1994ء اور 1999ء میں بالترتیب وقت کے وزیر اعظم کرشن پرساد بھٹارائے اور دمناتھ ڈھونگنا کو پارلیمانی انتخابات میں شکست دینے کے بعد دو بار چنی گئیں۔ تاہم 2008ء میں آئین ساز اسمبلی انتخابات کے دوران انہیں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ مادھو کمار نیپال کی قیادت میں وزیر دفاع کے عہدے کے لیے منتخب کی گئیں۔ 2013ء میں دوسری آئین ساز اسمبلی کے انتخابات میں متناسب انتخابی نظام کے تحت انہیں منتخب کیا گیا۔[9]

سیاسی سفر[ترمیم]

بھنڈاری نے طالب علم کی زندگی سے ہی سیاست میں داخلہ پایا۔[10] 1994ء اور 1999ء میں پارلیمانی انتخابات میں منتخب ہوئیں . [11] مادھو کمار نیپال کی کابینہ میں وزیر دفاع بنیں . یہ خیال کیا جاتا ہے کہ بھنڈاری پارٹی اور سابق وزیر اعظم کے پی اولی کی رازدار رہی ہیں۔[11]

خاتون صدر[ترمیم]

نيابانیشور، کھٹمنڈو میں پارلیمانی اسمبلی انتخابات میں، 214 کے مقابلے 327 ووٹوں سے کامیاب ہو کر نیپال کی تاریخ میں پہلی خواتین صدر منتخب ہوئیں۔ نو منتخب پارلیمنٹ کے 597 میں سے صرف 549 ارکان نے ہی ووٹ کا حق استعمال کیا جبکہ 48 غائب رہے۔ کُل پڑے 549 ووٹوں میں سے 8 کو غیر قانونی قرار دیا گیا۔[11] حکمراں سی پی ایم-یو ایم ایل کے علاوہ بدیا کو راشٹریہ پرجا تانترک دل، يوسی پی این (ماؤنواز)، مدھیشی جنادھكار فورم لوک تانترک سمیت کئی دیگر جماعتوں نے حمایت کی جبکہ اپوزیشن نیپالی کانگریس کے کُل بہادر گرونگ اتنی حمایت نہیں جٹا سکے۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

ان کی شادی نیپال کے کمیونسٹ پارٹی کے جنرل سکریٹری و بائیں بازو کے رہنما مدن بھنڈاری سے ہوئی تھی۔[12] مدن بھنڈاری کی سڑک -حادثہ میں موت ہو گئی تھی۔[11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/bhandari-bidya-devi — بنام: Bidya Devi Bhandari — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. اُجْیالو نائٹی
  3. "नेपाल कम्युनिस्ट पार्टी की उपाध्यक्ष विद्या देवी भंडारी बनीं नेपाल की पहली महिला राष्ट्रपति"۔ लाइव हिन्दुस्तान (हिन्दी زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 अक्टूबर 2015۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  4. "विद्यादेवी भण्डारी प्रथम महिला राष्ट्रपति"۔ नागरिक न्यूज़ (नेपाली زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 अक्टूबर 2015۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  5. "विद्यादेवी भण्डारी नेपालको पहिलो महिला राष्ट्रपति"۔ ताजा खबर (नेपाली زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 अक्टोबर 2015۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  6. "एमाले नेतृ विद्यादेवी भण्डारी राष्ट्रपतिमा विजयी"۔ विज (नेपाली زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 अक्टोबर 2015۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  7. "Nepali Times | The Brief » Blog Archive » Enemies within"۔ nepalitimes.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2014-03-22۔
  8. "Related News | Bidya Bhandari | ekantipur.com"۔ ekantipur.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2014-03-22۔
  9. "Women of Nepal"۔ wwj.org.np۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2014-03-22۔
  10. "नेपाल की पहली महिला राष्ट्रपति चुनी गईं भंडारी"۔ दैनिक जागरण۔ २८-१०-२०१५۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ २९-१०-२०१५۔ Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  11. ^ ا ب پ ت "Bidya Devi Bhandari elected first woman President of Nepal"۔ काठमांडू पोस्ट۔ २८-१०-२०१५۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ २९-१०-२०१५۔ Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  12. vidya bhandari elected nepal president