بسنتی دیوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بسنتی دیوی
(بنگالی میں: বাসন্তী দেবী ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 23 مارچ 1880  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آسام،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 7 مئی 1974 (94 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of India.svg ہندوستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات چترنجن داس  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ فعالیت پسند،  سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک تحریک آزادی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

بسنتی دیوی (23 مارچ 1880ء - 7 مئی 1974ء) ہندوستان میں برطانوی راج کے دوران تحریک آزادی کی ایک کارکن تھیں۔ وہ ایک حریت پسند چترنجن داس کی بیوی تھیں۔ 1921ء میں داس کی گرفتاری اور 1925ء میں موت کے بعد، اس نے مختلف سیاسی اور سماجی تحریکوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور آزادی کے بعد سماجی کام جاری رکھا۔ انہیں 1973ء میں پدم وبھوشن سے نوازا گیا۔

زندگی اور سرگرمیاں[ترمیم]

بسنتی دیوی 23 مارچ 1880ء کو برطانوی نوآبادیاتی دور حکومت میں آسام میں ایک بڑے زمیندار کے دیوان برادناتھ ہلدار کے ہاں پیدا ہوئیں۔ بسنتی نے لوریٹو ہاؤس، کلکتہ میں تعلیم حاصل کی، جہاں سترہ سال کی عمر میںان کی ملاقات چترنجن داس ہوئی بعد ازاں وہ دونون رشتہ ازدواج میں بندھ گئے ۔[2] دونوں کے تین بچے 1898 اور 1901 کے درمیان پیدا ہوئے۔[3]

اپنے شوہر کی پیروی کرتے ہوئے، بسنتی دیوی نے سول نافرمانی کی تحریک اور تحریک خلافت جیسی مختلف تحریکوں میں حصہ لیا اور 1920ء میں انڈین نیشنل کانگریس کے ناگپورمیں ہونے والے اجلاس میں بھی حصہ لیا۔ اگلے سال، وہ داس کی بہنوں ارمیلا دیوی اور سنیتا دیوی کے ساتھ مل کر خواتین کارکنوں کے لیے ایک تربیتی مرکز "ناری کرما مندر" کی بنیاد رکھی ۔ [4]1920-21 میں، انہوں نے جلپائی گوڑی سے تلک سوراج فنڈ کے لیے سونے کے زیورات اور 2000 سونے کے سکے جمع کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ [5]1921 میں عدم تعاون کی تحریک کے دوران، انڈین نیشنل کانگریس نے ہڑتالوں اور غیر ملکی اشیاء پر پابندی لگانے کی کال دی۔ کولکتہ میں، پانچ رضاکاروں کے چھوٹے گروپوں کو کولکتہ کی سڑکوں پر کھڈی( ہاتھ سے )کاتا ہوا کپڑا بیچنے کے لیے مقرر گیا تھا۔ داس، جو مقامی تحریک کی سرکردہ شخصیت تھے، نے اپنی اہلیہ بسنتی دیوی کو ایسے ہی ایک گروپ کی قیادت کرنے کا کہا۔ دیوی سبھاش چندر بوس کے انتباہ کے باوجود سڑکوں پر نکل آئیں تاکہ اس سے انگریزوں کو ان کی گرفتاری پر اکسایا جائے ، اور وہی ہوا۔ اگرچہ اسے آدھی رات تک رہا کر دیا گیا تھا، لیکن اس کی گرفتاری نے بڑے پیمانے پر احتجاج کو تحریک دی۔ کولکتہ کی دو جیلیں انقلابی رضاکاروں سے بھری ہوئی تھیں اور مزید مشتبہ افراد کو حراست میں لینے کے لیے عجلت میں حراستی کیمپ بنائے گئے تھے۔ 10 دسمبر 1921 کو پولیس نے داس اور بوس دونوں کو گرفتار کر لیا۔[6]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://timesofindia.indiatimes.com/city/dehradun/only-woman-jagar-singer-basanti-devi-bisht-picked-for-padma-shri/articleshow/56784859.cms — اخذ شدہ بتاریخ: 3 مارچ 2018
  2. Ray, Bharati (2002). Early Feminists of Colonial India: Sarala Devi Chaudhurani and Rokeya Sakhawat Hossain. Oxford University Press. صفحہ 142. ISBN 9780195656978. 
  3. Smith, Bonnie G. (2008). The Oxford Encyclopedia of Women in World History. Oxford University Press. صفحات 42–43. ISBN 9780195148909. 
  4. R. S. Tripathi, R. P. Tiwari (1999). Perspectives on Indian Women. APH Publishing. صفحات 136, 140. ISBN 9788176480253. 
  5. Chatterjee, Srilata (2003). Congress Politics in Bengal 1919–1939. Anthem Press. صفحہ 34. ISBN 9780857287571. 
  6. Bose, Sugata (2013). His Majesty's Opponent: Subhas Chandra Bose and India's Struggle against Empire. Penguin UK. ISBN 9788184759327.