بشر بن مروان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بشر بن مروان
معلومات شخصیت
وفات سنہ 694  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بصرہ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Umayyad Flag.svg سلطنت امویہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد مروان بن حکم  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
عملی زندگی
پیشہ سرکاری ملازم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابو مروان بشر بن مروان بن الحكم (650ء کی دہائی–694ء) ایک اموی شہزادہ اور اپنے بھائی خلیفہ عبد الملک کے دور میں عراق کا گورنر تھا۔ بشر بن مروان نے اپنے والد خلیفہ مروان بن الحكم کے ساتھ جنگ مرج راهط‎ کی لڑائی میں شرکت کی۔ مروان نے بشر کو اپنے بھائی عبد العزیز کے ساتھ رہنے کے لئے مصر بھیج دیا۔ 690ء-691ء میں، بشر بن مروان کو کوفہ کا گورنر بنا دیا گیا اور اس کے تقریباً ایک سال بعد، بصرہ کو بشر بن مروان کی حکومت میں شامل کیا گیا، جس کی وجہ سے بشر بن مروان کو عراق پر مکمل اختیار حاصل ہوا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

بشر بن مروان کے والد مروان بن الحکم بنو امیہ سے تعلق رکھتے تھے اور ان کی والدہ قطیہ بنت بشر تھیں، جو بنو كِلاب کے قبیلے بنو جعفر سے تعلق رکھتی تھیں۔[1]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

بشر بن مروان نے 684ء میں جنگ مرج کی لڑائی کے دوران بنو كِلاب کے ایک سردار کو مار ڈالا تھا۔[1] مکہ مقیم حریف خلیفہ عبد اللہ ابن زبیر کے حامیوں کے خلاف جنگ مرج میں امیہ کی فتح نے شام میں قائم خلافت کا مروان بن الحکم کو مستحکم کیا۔[1]

وفات[ترمیم]

بشر بن مروان بصرہ پہنچنے کے وقت سے ہی کسی نامعلوم بیماری[2] یا کسی متعدی بیماری میں مبتلا ہو چکا تھا۔[1][3] کچھ مہینوں کے بعد، 694ء میں، اس کی عمر چالیس کی دہائی میں بشر بن مروان کی وفات ہوگئی۔[1] ان کو بصرہ میں دفن کیا گیا، لیکن کچھ ہی دنوں میں ان کی قبر ایک مخصوص افریقی کی قبر سے الگ ہوگئی تھی جو اسی دن فوت ہو گیا تھا۔[1] بشر بن مروان کی وفات کی خبر سن کر مہلب بن ابی صفرہ کی فوج کے کچھ فوجیوں نے مہلب کا ساتھ چھوڑ کر چلے گئے۔[1] بشر بن مروان کی وفات کے بعد عبد الملک بن مروان نے بشر بن مروان کی جگہ حجاج بن یوسف کو عراق کا گورنر مقرر کیا، یعنی کوفہ اور بصرہ کے مشترکہ صوبے۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج Vaglieri 1960، صفحہ 1242.
  2. ابو الحسن احمد بن یحٰیی بن جابر بن داؤد البلازری جلد 5 صفحہ 171 و 179
  3. ابن کثیر جلد 9 صفحہ 7
  4. Crone 1980، صفحہ 232.