بٹوا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بٹوا

بٹوا (انگریزی:wallet) اس میں کاغذی کرنسی، کریڈٹ کارڈز، اور شناختی دستاویزات (ڈرائیوری لائسنس، شناختی کارڈ، کلب کارڈ، وغیرہ)، تصاویر، ٹرانزٹ پاس، بزنس کارڈز اور اس طرح کی چھوٹی چھوٹی ذاتی اشیاء کو لے جانے کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ بٹوے عام طور پر چمڑے یا کپڑے سے بنے ہوتے ہیں اور وہ عام طور پر جیب کی سائز کے ہوتے ہیں۔

تاریخی پس منظر[ترمیم]

اس لفظ کا آغاز چودھویں صدی کے آخر میں ہوا، جس کا معنی "بیگ" ہے،   ممکنہ طور پر قدیم شمالی فرانسیسی "والٹ" (غیر منظم) سے یا اسی طرح کے جرمن لفظ، "پروٹو" جرمن اصطلاح "دیوار" سے ہے۔  شیکسپیئر کے ابتدائی استعمال نے کچھ ایسی وضاحت کی جس کو ہم اس طرح کے طور پر پہچانیں گے۔[1]  آج کا ایک بیگ۔ "کاغذی رقم لے جانے کے لئے فلیٹ کیس" اس کے جدید معنی کو پہلی بار امریکی انگریزی میں 1834ء میں درج کیا گیا ہے۔[1]

کلاسیکی ماہر اے وائی کیمبل نے، "قدیم ادب میں، بٹوے کے استعمال کیا ہے"  انہوں نے ایک اسکالر کی حیثیت سے کہا کہ "بٹوا غریب آدمی کا(Portable lord) تھا؛ یا غربت کے علاوہ، یہ ایک ایسی چیز تھی جسے آپ نے رزق کے ساتھ اسٹاک کیا تھا۔" انہوں نے پایا کہ بعض اوقات آدمی اس میں سے کھا رہا ہے۔

بٹوا سولہویں صدی عیسوی  میں مغرب میں کاغذی کرنسی کے تعارف کے بعد تیار کیے گئے تھے۔  (پہلی کاغذی کرنسی نئی دنیا میں میساچوسٹس بے کالونی نے 1690ء میں متعارف کروائی تھی۔) کاغذی کرنسی کے تعارف سے قبل، سکے کے بٹوا (عام طور پر معمولی چمڑے کے) سکے کو ذخیرہ کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا تھا۔  ابتدائی بٹوے بنیادی طور پر گائے یا گھوڑے کے چمڑے سے بنے تھے اور اس میں چھپی ہوئی کالنگ کارڈ کے لئے ایک چھوٹا سا پاؤچ بھی شامل تھا۔

خلاصہ[ترمیم]

موجودہ دور میں بٹوا کی مختلف انواع و اقسام وجود میں آچکی ہیں، آئے دن اس میں ترقی ہورہی ہیں، نئے ڈیزائن اور جدید تکنیک سے بٹوا کو مزین و منقش کیا جارہا ہے، غرض کہ بٹوا اب انسانی ضرورت بن چکا ہے تقریباً 80/فیصد سے زائد لوگ اب کسی نہ کسی طرح سے بٹوا کا استعمال کرتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Online Etymology Dictionary entry for "wallet"". 24 دسمبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 ستمبر 2007.