بھارت میں اردو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

بھارت میں اردو : اردو کی پیدائش ہندوستان میں ہوئی۔ جب پیدا ہوئی تو ملک بہت ہی وسیع تھا۔ شمالی مغرب میں ایران تو شمالی مشرق میں تھائی لینڈ اس کے حدود تھے۔ رفتہ رفتہ یہ حدود سکڑتے گئے۔ 1947 تقسیمِ ہند کے بعد تو بھارت آج کی شکل کا ہوا ہے۔ پھر بھی یہ ملک اتنا وسیع ہے کہ اس کو آج بھی بر صغیر کا بڑا حصہ تصور کیا جاتا ہے۔

اس وسیع ملک میں لسانی اعتبار سے مختلف طبقات ہیں۔ یہاں کی سرکاری زبان تو ہندی ہے مگر اس کے ساتھ انگریزی بھی دفتری زبان ہے۔ اردو بھارت کی بعض ریاستوں کی سرکاری زبان ہے۔ کل 29 ریاستیں ہیں، ان ریاستوں میں 22 سرکاری زبانیں ہیں۔

اردو بحیثیت سرکاری زبان[ترمیم]

ان ریاستوں کے علاوہ بہت ساری ریاستوں میں اچھے خاصے اردو بولنے والوں کی تعداد ہے۔ مثلاً دہلی، مہاراشٹر، آندھرا پردیش، کرناٹک، اتر پردیش، مدھیہ پردیش، اتراکھنڈ، ہریانہ وغیرہ ریاستیں۔

اردو کے اہم شہر[ترمیم]

بھارت کے درجنوں شہر ایسے ہیں جہاں بڑی تعداد میں اردو بولی جاتی ہے۔ وہ شہر جو کبھی نوابوں کے دار الخلافہ رہ چکے ہیں انہیں اردو کا گہوارہ کہا جاسکتا ہے۔ ایسے شہروں میں ذیل کے شہر اہم ہیں۔

کچھ ایسے شہر جو ثقافتی اعتبار سے ہندی اور اردو بولنے والے یکساں ملتے ہیں، ذیل کے شہر ہیں۔

دور جدید میں بھارت میں اردو کوسموپولس اور میٹرو شہروں میں کافی پھلی پھولی ہے۔ اس کی وجہ اردو بولنے والے احباب شہروں کی طرف منتقل ہوجانا ہے۔ ایسے شہر ذیل کے ہیں۔

اردو فونٹس[ترمیم]

بھارت سرکار کی وزارت انسانی وسائل و بہبود اور انفورمیشن ٹیکنولوجی اور قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان مل کر مشترکہ طور پر اردو فونٹس کو ترقی دینے کی ذمھ دار ہے تاکہ اردو دیگر اداروں پر انحصار سے باہر نکل آئے۔[1]

اردو اور دیگر زبانوں میں لغات[ترمیم]

بھارت کے کئی زبانوں میں اردو کے مشترکہ لغات ہیں۔ جیسے اردو-تیلگو لغات، اردو-ہندی لغات، اردو-مراٹھی لغات، اردو-بنگالی لغات، اردو-کنڑی لغات وغیرہ۔

مثال کے طور پر 1938 میں ورنگل کے عثمانیہ کالیج کے وظیفہ یاب عربی پروفیسر آئی۔ کونڈالا راؤ نے اردو-تیلگو لغات کی تالیف کی۔ پھر اس کے بعد 2009 میں آندھرا پردیش سرکاری تنظیم لسانیات کے صدر اے۔ بی۔ کے۔ پرساد کی نگرانی میں 862 صفحات والی اردو-تیلگو لغات شایع ہوئی۔

اردو میں تراجم ہندو مت کی کتابیں[ترمیم]

ہندو دھرم کی کئی دھارمک کتابیں مترجم ہوئیں، ان میں سے ذیل کی اہم ہیں۔

  • راماین - (مغل سلطان اکبر کے دور میں)
  • مہا بھارت - رزم نامہ (مغل سلطان اکبر کے دور میں)
  • بھگوت گیتا - نغمئہ یزدانی۔ الہ آباد سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر اجے مالوی نے گیتا کو سنسکتر سے اردو میں ترجمہ کیا۔ ان کا کہنا یہ تھا کہ اس طرح کے تراجم سے دو مذہبوں کے پیروکاریں کے درمیان اچھے رشتے قائم ہوں گے اور ہم آہنگی پیدا ہوگی۔[2]
  • گلے بکاولی

تقابلی امتحانات بذریعے اردو[ترمیم]

حکومت ہند کے ماتحت مختلف اداروں کے ذریعے دیگر زبانوں کے ساتھ اردو میں بھی مقابلہ جاتی امتحانات ہوتے ہیں۔

اردو ادب[ترمیم]

دورِ حاضر میں اردو بہت پیچھے رہ گئی ہے۔ ایسے میں، عربی مدارس، اردو مدارس، اردو فروغ ادارے، اردو اخبار، اردو ٹی۔ وی۔ چینلز، مشاعرے، کتب خانے، اردو زبان کے ورثہ کو بچانے میں کوشاں ہیں۔ سیاسی حلقے بھی اردو سیمینار، اردو مشاعرے انعقاد کرنے میں کافی دلچسپی دکھاتے ہیں۔

اردو ادیب[ترمیم]

کلاسیکل اردو ادب کے تمام ادبا ہندوستان کے رہنے والے تھے۔

اردو شعرا[ترمیم]

عصری شعرا میں نامور، جاوید اختر، گلزار زتشی، وسیم بریلوی، منور رانا، راحت اندوری، نامور شعرا ہیں۔

بھارت میں اہم اردو اخبار[ترمیم]

مختلف شہروں سے شایع ہونے والے روزنامے

دہلی[ترمیم]

لکھنؤ[ترمیم]

کانپور[ترمیم]

کولکتہ[ترمیم]

بھوپال[ترمیم]

ممبئی[ترمیم]

حیدرآباد[ترمیم]

بنگلور[ترمیم]

دربھنگہ[ترمیم]

پٹنہ[ترمیم]

چینائی[ترمیم]

بھارت میں جامعیات[ترمیم]

بھارت میں وہ جامعیات جو یا تو مکمل طور پر اردو کی ہیں یا اردو کے شعبہ جات ہیں۔

اترپردیش[ترمیم]

بہار[ترمیم]

مولانا مظہرالحق عربی و فارسی یونیورسٹی پٹنہ بہار [www.mmhapu.com]

مولانا آزاد قومی اردو یونیورسٹی محلہ-چندن پٹٹی ضلع-دربھنگہ [www.manuu.ac.in]

مغربی بنگال[ترمیم]

مدھیہ پردیش[ترمیم]

مہاراشٹر[ترمیم]

کرناٹک[ترمیم]

تلنگانہ میں اردو جامعیات[ترمیم]

آندھرا پردیش کے جامعیات جہاں اردو شعبہ جات ہیں[ترمیم]

تامل ناڈو[ترمیم]

کیرلا[ترمیم]

  • شری شنکراچاریہ سنسکرت یونی ورسٹی (اردو شعبہ)

بھارت میں اردو جامعات[ترمیم]

فروغ اردو کے لیے کوشاں ادارے[ترمیم]

بھارت میں اردو ٹی۔ وی۔ چینل[ترمیم]

بھارت میں اردو ریڈیو اسٹیشنس[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]