بھٹو خاندان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بھٹو خاندان
نسلیت سندھی مسلمان
موجودہ علاقہ سندھ
ارکان ذوالفقار علی بھٹو
نصرت بھٹو
بینظیر بھٹو
آصف علی زرداری
فاطمہ بھٹو
بلاول بھٹو زرداری
مذہب شیعہ، اسلام

بھٹو خاندان پاکستان کا ایک سیاسی خاندان ہے جس کا تعلق پاکستان پیپلز پارٹی سے ہے۔ بھٹو خاندان پاکستان کے صوبہ سندھ سے تعلق ہے۔‏بہت دنوں کی بات ہےھندوستان کےگاؤں "بھاٹو کالان" ہریانہ میں ایک شہنواز نامی غریب لڑکا رہتا تھا۔ خاندان کسمپرسی کی زندگی گزار رھا مگر لڑکا بہت چالاک تھا اور انگریز بہادر کے گھرکتےگھوڑے نہلانےمالش کرنے کے کام پر مامور ھوا۔ فارغ وقت میں مسلمان حریت پسندوں کی مخبری بھی کرتا تھا۔

‏مسلمان آزادی کیلئےزیر زمین تحریک چلا رہے تھے۔انہوں نے شاہنواز کو اپنے گروہ میں شامل کیا اور ضلعے کے انگریز حاکم پر حملے کا منصوبہ بنایا مگر عین وقت پر سب پکڑے گئے اور انکو سرعام پھانسی دی گئی۔ حیران کن طور پر شہنواز اس دن غائب تھا اور پھر چند دنوں میں اسے جونا گڑھ بھیج دیا گیا

‏جونا گڑھ انگریز بہادر کا سفارشی خط لیکر پہنچنے والے لڑکے نے اپنا تعارف جوناگڑھ کے نواب سے بطور، شاھنواز آف بھاٹو کرایا اور اسے برٹش سرکار کے آرڈر مطابق جوناگڑھ محل کا 'پرسر' مقرر کیا گیا۔ مگر شاھنواز کے ارادے کچھ اور تھے اور بہت جلد اس نے نواب محل میں تانے بانے بن لیے!

‏نوابی چپقلش میں نواب آف جونا گڑھ پر حملہ ھواجس میں شامل شخص کو بھاٹو کی مخبری پر گرفتار کیا گیا۔ نواب نے خوش ہوکر بھاٹو کو محل کی کوتوالی کا انجارج لگا دیا اس طرح شاھنواز کا محل میں آنا جانا آسان ھو گیا۔ ایک محفل میں بھاٹو کو ھندو لکھی بائ پسند آ گئی جو بعد میں خورشید بھاٹو بنی

‏لکھی بائ کا خاندان امیر اور انگریزوں کے قریب تھا اور بھاٹو نے اس موقعے کو ہاتھ سے نا جانے دیا اور اس شادی کے نتیجے میں شاہنواز جونا گڑھ کے دیوان یعنی پرائم منسٹر کا عہدہ پا گیا۔

‏بھاٹوعملی طور پر میدان میں ایک طرف جوناگڑھ اسٹیٹ کا وزیر اعظم دوسری طرف انگریزوں کا پٹھو مکمل طور پر جاسوسی کر رہا تھا۔ تحریک آزادی پاکستان زوروں پر اور جونا گڑھ کو 23مارچ قرارداد مقاصد کے تحت پاکستان میں شامل ھونا تھا جس کی بھاٹو نے سخت مخالفت کی اور ایک خط ھندو اسٹیبلشمنٹ کو لکھا

‏اس خط کے نتیجے میں جونا گڑ ریزیڈینسی کو پاکستان کے متوقع نقشے سے الگ کر دیا گیا اور انڈیا میں شامل کر دیا گیا۔ مسلمان بپھرگئےگورا پلٹن پر حملہ کر دیا ،بھاٹو ساب کو موت نظر آئ تو فورا" ممبئ لکھی بائ یعنی اپنےسسرال پہنچےجہاں کچھ دن چھپے رہے پھر دوستوں کی صلاح پرمسلم لیگ کے ارکان بن گئے ‏اس وقت تک جناح ساب کے علم میں نا تھا موصوف بھاٹو جو اب بھٹو تھےکتنا بڑا چھرا پاکستان کی پیٹھ میں گھونپ چکے تھے! ممبئ سےکراچی تشریف آوری ہوئ۔مسلم لیگ میں خوب چندہ دیا ،ان زیوارات ھیرے موتیوں کو بیچ بیچ کر جو جوناگڑھ سے چرا لائے تھے!کراچی کے ایک کیفے میں حاکم زرداری سے ملاقات ھوئ!

‏کسی مسلم لیگی نے پہچان لیا،بات ہاتھاپائ تک پہنچی، جناح ساب کو تب علم ہوا کہ وہ جوناگڑھ بھاٹو یہی بھٹو ہےمگر موقع کی نزاکت جان کرکچھ نا کہا البتہ نجی محفل میں سخت نا پسندیدگی کا اظہار کیا،ایک موقع پر جب جناح ساب سے سندھی میں بات کی تو جھڑکی کھائ کہ سب نہیںسمجھتے اس لیے اردو بولیں!

‏اس واقعے نےشاھنوازکو ڈرا دیا کراچی سے گوٹھ لاڑکانو منتقل ھوگیا- تاریخ بتاتی"شیتو" نامی ھندو جو مغل بادشاہ اورنگزیب کے دورمیں ٹیکس بچانے کے لیئےمسلمان ھوا اسے یہ زمین دی گئی اور وہی شاہنواز بھٹو کا لکڑ دادا تھا!یہ خان کب کیسے ہوئے اللہ جانتا!

‏کہتے؛جونا گڑھ کےسمیٹےخزانے اورانگریزوں کی وفاداری نے بہت ساتھ دیا اور کالان کا بھاٹو لاڑکانو کا سرشاھنواز بھٹو خان بہادر بن گیا۔

سرشاھنواز بھٹو نے جوناگڑھ کو بیچا

پھر انکےصاحبزادے ذو الفقار نے مشرقی پاکستان ۔۔۔۔بنگال ہی ڈبو دیا !

لوگ معاف کر بھی دیں

تاریخ معاف نہیں کرتی

انا للہ !

شجرہ نسب[ترمیم]

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
غلام مرتضیٰ بھٹو
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
شاہ نواز بھٹو
(1888 – 1957)
 
خورشید بیگم
(لکھی بائی)
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
نواب نبی بخش خان بھٹو
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
ممتاز بیگم صاحبہ بھٹو
 
محمد مصطفےٰ خان بہادر
 
ذوالفقار علی بھٹو
(1928 – 1979)
 
نصرت اصفہانی بھٹو
(1929 – 2011)
 
امداد علی بھٹو
 
سکندر علی بھٹو
 
 
 
 
 
 
 
 
معشوق بھٹو
 
 
ممتاز علی خان بھٹو
(1933- )
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
شاہنواز بھٹو
(1958 – 1985)
 
ریحانہ فصیح الدین بھٹو
 
صنم بھٹو
(1957- )
 
ناصر حسین
 
فوزیہ فصیح الدین بھٹو
 
مرتضیٰ بھٹو
(1954 – 1996)
 
غنویٰ بھٹو
 
بینظیر بھٹو
(1953 – 2007)
 
آصف علی زرداری
(1955- )
 
امیر بخش بھٹو
 
علی حیدر بھٹو
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
سسی بھٹو
 
 
 
شاہ میر حسین
 
آزادی حسین
 
فاطمہ بھٹو
(1982- )
 
ذوالفقار علی بھٹو جونیر
 
بلاول بھٹو زرداری
(1988- )
 
بختاور زرداری
 
آصفہ زرداری
 
 


  کوئی ذاتی رشتہ داری نہیں (صرف شادی کے بعد رشتہ داری ہوئی)


مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]