بھگت سین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بھگت سین
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 1400
تاریخ وفات 1490ء
زوجہ بی بی صاحب دیوی
اولاد بھائی نائی
والدین بھائی مکند رائے
ماتا جیوانی
پیشہ رایل باربر سماج

بھگت سین ایک سکھ مذہبی شخصیت تھے جو چودھویں صدی کے آخر اور پندرہویں صدی کے اوائل میں گزرے۔

بھگت سین ریوا کے بادشاہ راجا رام کے درباری حجام تھے۔[1][2]

حیات[ترمیم]

اُس دور کا رحجان مذہب اور عقیدت مندی کی طرف تھا اور سین کو رامانند کی مذہبی شاعری پڑھنے کی ذمہ داری پسند تھی اور اپنی زندگی کو انہوں نے انہی اصولوں پر ڈھال لیا تھا۔

ہندو عقیدے کے مطابق بھگوان نے سین کا ایسے خیال رکھا ہے جیسے گائے اپنے بچھڑے کا خیال رکھتی ہے۔ انہوں نے نیک لوگوں کی صحبت قبول کی ہے اور اس میں خوش رہے ہیں۔ وہ ان کی رسومات ادا کرتے رہے ہیں اور ان کے عقیدے میں سنتوں کی سیوا کرنا بھگوان کی سیوا کرنے کے برابر ہے۔

بھگت مل میں سین کا سنتوں سے لگاؤ واضح دکھایا گیا ہے۔ ایک روز وہ بادشاہ راجا رام کے دربار جا رہے تھے کہ انہیں مقدس لوگ راستے میں ملے۔ ان کے نزدیک نیک لوگوں کی خدمت ان کا اولین فریضہ تھا، سو انہوں نے ان لوگوں سے بات شروع کی۔ ان کے لیے جل پانی کا بندوبست کیا اور ان کی روحوں کو بھی خوش کر دیا۔ تاہم اس دوران وہ اپنی درباری ذمہ داریوں سے غافل رہتے اور بادشاہ ان پر خفا ہوتا۔

روایات کے مطابق ایک سنت نے ان کو بادشاہ کے غیظ اور سزا سے بچانے کے لیے بھگوان کی منشا سے ان کا روپ دھار لیا اور دربار جا کر روزمرہ کی ذمہ داریاں سر انجام دیں۔ جب سین فارغ ہو کر بادشاہ کے پاس پہنچے اور تاخیر پر معذرت چاہی تو بادشاہ نے حیرت سے پوچھا کہ ابھی تو آپ اپنی ذمہ داریاں بروقت سر انجام دے کر گئے ہیں، پھر معذرت کیسی؟ سین نے جواب دیا کہ وہ میں نہیں تھا۔ اس پر بادشاہ ان کی کرامت کا قائل ہوا اور ان کے پیروں پر گر پڑا اور انہیں اپنا گرو مان لیا۔

مشہور لوگ[ترمیم]

سین سماج کا مشہور مؤرخ جسوندر سنگھ کھمبرا ہے۔ اس نے ست گرو سین پر چھ کتب چھاپی ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Page 2750, The Indian Encyclopaedia: Gautami Ganga-Himmat Bahadur, Subodh Kapoor, Genesis Publishing Pvt Ltd, 2002
  2. Page 238, Selections from the Sacred Writings of the Sikhs, Orient Blackswan, 01-Jan-2000