بیخود دہلوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بیخود دہلوی
معلومات شخصیت
پیدائش 21 مارچ 1863[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بھرت پور، راجستھان،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 اکتوبر 1955 (92 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دہلی،  ہندوستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ہندوستان (26 جنوری 1950–)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
تلمیذ خاص فدا خالدی دہلوی،  نازش حیدری  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

بیخود دہلوی (پیدائش: 21 مارچ 1863ء— وفات: 2 اکتوبر 1955ء) اردو کے شاعر تھے۔

سوانح[ترمیم]

بیخود دہلوی کا حقیقی نام سید وحید الدین تھا۔ بیخودؔ تخلص اختیار کرنے سے پہلے ان کا تخلص نادرؔ تھا۔ وہ 21 مارچ 1863ء کو بھرت پور میں پید اہوئے۔ دہلی میں انہوں نے سکونت اختیار کی تھی۔ یہاں پر میں اردو اور فارسی کی تعلیم حاصل کی۔ مولانا حالیؔ سے ’’مہرنیم روز‘‘ اور اساتذہ کے دواوین پڑھے۔ حالیؔ ہی کے ایما پر وہ داغؔ کے شاگرد بنے تھے۔ بیخودؔ اچھے کپڑوں کے پہننے، کھانے کے علاوہ علاوہ خرچ میں کفایت کے قائل نہیں تھے۔ 1948ء میں بھارت کے اس وقت کے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے کچھ وظیفہ مقرر کر دیا تھاجو 150 روپیہ ماہوار وزارت تعلیم حکومت ہند سے ملتا تھا۔ یاد رہنا چاہیے کہ اس وقت وزیر تعلیم مولانا ابوالکلام آزاد تھے۔ بیخود کے دو دیوان’’گفتار بیخود‘‘ اور ’’شہوار بیخود‘‘ چھپ چکے ہیں۔ 2 اکتوبر 1955ء کو دہلی میں ان کا انتقال ہوا تھا۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]