بیدو خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بیدو خان
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش صدی 13  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 4 اکتوبر 1295  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تبریز  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Mongolia.svg منگولیا  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
خان (منگول سلطنت)   ویکی ڈیٹا پر منصب (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دفتر میں
1295  – 1295 
در ایل خانی سلطنت 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png  
غازان خان  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
دیگر معلومات
پیشہ حاکم  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

بیدو خان ایران کا چھٹا ایلخانی حکمران تھا۔ یہ طراغائی کا بیٹا اور ہلاکوخان کا پوتا تھا۔ بیدو خان صفر 694ھ/اپریل 1295ء میں ایران کے تخت پر بیٹھا۔ اس کے پیشرو گیخاتو خان کو 694ھ/1295ء میں گلا گھونٹ کر مار دیا گیا۔ اس کے بعد باغیوں نے بیدو خان کو تخت نشینی کی دعوت دی مگر اس کا دوسرا چچیرا بھائی غازان خان جو ارغون خان کا بیٹا اور گیخاتو خان کا بھتیجا تھا، اس سے مقابلے کے لیے خراسان سے لشکر لے کر چچا کا بدلہ لینے کے لیے میدان میں نکل آیا۔ لیکن دونوں میں ایک عارضی سی صلح ہو گئی۔ کچھ عرصے بعد جب دوبارہ لڑائی شروع ہوئی تو اس کا فیصلہ غازان خان کے حق میں ہو گیا اور غازان نے نوروز کی تحریک (تحریک نوروز ) سے جو غازان کا سپہ سالار تھا اسلام قبول کر لیا اور اس طرح اسے مسلمانوں کی حمایت حاصل ہو گئی۔ بیدو خان کے طرف داروں نے اس کا ساتھ چھوڑ دیا اور جب وہ بھاگنے کی فکر میں تھا تو اسے قتل کر دیا گیا۔ بیدو خان نے کل سات ماہ حکومت کی۔ بعض کے نزدیک اس نے بھی اسلام قبول کر لیا تھا۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مکمل اسلامی انسائیکلوپیڈیا،مصنف؛مرحوم قاسم محمود،ص-413