بیوی ہو تو ایسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بیوی ہو تو ایسی
Biwi Ho To Aisi.jpg
پوسٹر
ہدایت کارجے کے بہاری
پروڈیوسرسریش بھگت
تحریرجے کے بہاری
ستارےریکھا
فاروق شیخ
قادر خان
بندو (اداکارہ)
سلمان خان
موسیقیلکشمی کانت پیارے لال
تاریخ نمائش
  • 26 اگست 1988ء (1988ء-08-26)
دورانیہ
189 منٹ
ملکبھارت
زبانہندی
باکس آفس₹22.25 کروڑ (تقریباً)

بیوی ہو تو ایسی 1988ء [1] بالی ووڈ کی ایک فلم ہے، جس کی ہدایتکاری جے کے بہاری نے کی ہے اور اس میں ریختہ، فاروق شیخ اور بندو مرکزی کردار میں ہیں۔ اس فلم کی موسیقی کو لکشمی کانت پیارے لال نے لکھا ہے۔ سلمان خان اور رینو آریا کی یہ پہلی فلم تھی۔

خلاصہ[ترمیم]

کہانی ایک فیملی ڈراما ہے جو مرکزی جوڑی کے ارد گرد گھومتی ہے، اس فلم میں اداکارہ ریکھا اور فاروق شیخ نے کی ہے، جو شادی شدہ جوڑے کا کردار ادا کرتے ہیں۔ یہ فلم اس کے بارے میں ہے کہ شلو نے اپنی شادی شدہ زندگی کی تمام رکاوٹوں پر قابو پانے کے لئے اپنی دبنگ ساس کملا (بندو) کے دل کو جیت لیا۔

کہانی[ترمیم]

بھنڈاری ایک اعلیٰ درجے کا خاندان ہے۔ اس گھر پر کملا (بنڈو) کا بہت زیادہ غلبہ ہے جو بھنڈاری خاندان کی مالکن ہے۔ وہ خاندانی کاروبار کی دیکھ بھال بھی کرتی ہے جبکہ اس کے گھر میں رہنے والے شوہر کیلاش (قادر خان) اور گھر داماد ہیں۔ کملا چاہتی ہے کہ ان کا بڑا بیٹا سورج (فاروق شیخ) ایسی لڑکی سے شادی کرے جس کی معاشرتی حیثیت ان سے ملتی ہو۔

لیکن خواہشات کے برعکس، سورج اپنے دل کی سنتا ہے اور باصلاحیت گاؤں کی شالو (ریکھا) سے شادی کرتا ہے، جس سے کملا کی کوئی خوشی نہیں ہوتی ہے۔ کملا اپنی مزاحیہ سکریٹری (اسرانی) کے ساتھ مل کر شالو کے خلاف نئی نئی ترغیب اپناتی ہے تاکی شالو چھوڈ کر چلی جائے۔

دوسری جانب شالو، کملا کا دل جیتنے لئے فرض شناس بہو بننے کی کوشش کرتی ہے۔ شالو کو اپنے سسر، کیلاش، جو شالو کے ساتھ بیٹی کی طرح سلوک کرتا ہے، اور شالو کو اس کے بہنوئی بہو وکرم عرف کی مکمل حمایت اور تفہیم ہے۔ وکی (سلمان خان)، جو کبھی کبھی اپنی بھابھی پر ڈھائے جانے والے مظالم برداشت نہیں کرسکتا اور اپنی ظالم ماں کے خلاف احتجاج میں آواز اٹھاتا ہے۔ ذلت اور ذاتی حملوں کی کوششوں کے بعد شالو اپنے مقصد سے پیچھے ہٹ جاتی ہے اور اس کی اصل شناخت ظاہر ہو جاتی ہے۔

شالو کے والد اشوک مہرا (بھنڈاری کے خاندانی دوست) نے اس کی اصل شناخت ظاہر کی۔ کملا کو یہ معلوم ہوا کہ شالو مہرا کی آکسفورڈ تعلیم یافتہ بیٹی ہے، جس نے اپنے سسر کیلاش کے ساتھ مل کر، اسے عاجزی اور انسانیت کا سبق سکھانے کے لئے اس خاندان میں شمولیت اختیار کی تھی۔ کیلاش پہلی بار کملا کے خلاف آواز اٹھاتا ہے۔

کملا کو اپنی غلطی کا احساس ہو گیا اور جب سب نے کملا اور گھر چھوڑنے کا فیصلہ کیا تو اہل خانہ کے ساتھ اس کے سلوک پر توبہ کی۔ کملا خلوص دل سے سب سے معافی مانگتی ہے اور خوشی آخر کار بھنڈاری خاندان میں داخل ہوگئی۔

کردار[ترمیم]

نغمہ[ترمیم]

نغمہ ٹی سیریز پر دستیاب ہے۔

تمام موسیقی کے کمپوزر لکشمی کانت پیارے لال.

نمبر شمارعنوانبولPlaybackطوالت
1."میں ہوں پان والی"انجانالکا یاگنک05:09
2."میں تیرا ہو گیا"حسن کمالالکا یاگنک، محمد عزیز07:09
3."میرے دولہے راجہ"سمیر انجانالکا یاگنک05:51
4."پھول گلاب کا"سمیر انجانانورادھا پوڈوال، محمد عزیز06:09
5."ساسو جی تونے میری قدر نہ جانی"سمیر انجانانورادھا پوڈوال05:17
6."سانچہ تیرا نام"سمیر انجانانورادھا پوڈوال04:43
کل طوالت:34:18

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Sumit Joshi. Bollywood through Ages + Affairs of Bollywood Stars Revealed ( Special Edition ). Best Book Reads. صفحات 309–. ISBN 978-1-310-09978-6. 

بیرونی روابط[ترمیم]