بیپسی سدھوا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بیپسی سدھوا
Bapsi sidhwa 2008.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 11 اگست 1938 (83 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی[2]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
Flag of the United States (1795-1818).svg ریاستہائے متحدہ امریکا
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ناول نگار[2]،  مصنفہ،  منظر نویس  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[3]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نوکریاں ماؤنٹ ہولیوک کالج،  رائس یونیورسٹی،  یونیورسٹی آف ہیوسٹن،  کولمبیا یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں کریکنگ انڈیا،  واٹر  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

بیپسی سدھوا (11 اگست 1938ء) ایک پاکستانی امریکی [4]گجراتی پارسی نسل کی مصنفہ ہیں۔[5] جو امریکا میں مقیم ہیں۔ بیپسی سدھوا ایک معذور خاتون ہیں۔ ان کی وجہ شہرت ان کے ناول، آئس کینڈی مین، جنگل والا صاحب (کرو ایٹر) وغیرہ ہیں۔

ان کے انگریزی نالوں پر کینیڈی بھارتی فلم ساز دیپا مہتا نے فلمیں بنائیں ہیں، 1991ء کے ناول آئس کینڈی مین پر 1998ء میں فلم ارتھ بنائی اور ان کے ناول واٹر پر 2006ء میں اسی نام سے فلم بنائی۔ بیپسی پر ایک دستاویزی فلم بپسی: سیلنس آف مائی لائف کے نام سے اس وقت زیر تکمیل ہے، جو 2021ء میں پیش کی جائے گی۔[6]

پس منظر[ترمیم]

بیپسی سدھوا ایک گجراتی پارسی خاندان میں پشوتان اور تہمینہ کے ہاں پیدا ہوئیں۔ جو اس وقت کراچی میں مقیم تھے سدھوا کے والدین بعد وہ لاہور منتقل ہو گئے۔[7] دو سال کی عمر میں پولیو کا شکاڑ ہوئیں اور 9 سال کی عمر کے، 1947ء کے متعلق ان کے ناول آئس کینڈی مین میں لینی نامی کردار کے ان دنوں کے حقیقی واقعات کی عکاسی کرتے ہیں۔[8] سدھوا نے 1957ء میں لاہور کے کنیرڈ کالج برائے خواتین سے بی اے مکمل کیا۔[4]

19 سال کی عمر میں شادی کی اور ممبئی چلی گئیں، اس سے 5 سال قبل ان کو طلاق ہو چکی تھی، دوبارہ موجودہ شوہر نوشیر سے شادی کی اور لاہور منتقل ہو گیئں۔ پاکستان میں ناول نگاری کا آئاز کرنے سے قبل ان کے تین بچے تھے۔ ان کی ایک بیٹی،[9] امریکی ریاست اریرزونا میں ریاستی نمائندے کی امیدوار ہیں۔[10]

سدھوا اس وقت ہوسٹن، امریکا میں مقیم ہیں اور خود کو ایک پاکستانی پنجابی پارسی کہلواتی ہیں۔ ان کی مادری زبان گجراتی اور گھر کی زبان اردو تھی جب کہ انگریزی میں لکھتی ہیں۔۔[11][12] وہ لکھنے پڑھنے کا کام انگریزی میں سہولت سے کرتی ہیں، لیکن اردو اور گجراتی میں بیت چیت بھی باآسانی کر لیتی ہیں، اس کے علاوہ سدھوا بوقت ضرورت گجراتی یا اردو سے انگریزی میں لفظی ترجمہ استعمال کرتی ہیں۔[11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://books.google.fr/books?id=C6VlAgAAQBAJ&lpg=PA241&ots=Z-fcoSnSSX&dq=Bapsi%20Sidhwa%20august%201938&hl=fr&pg=PA241#v=onepage&q=Bapsi%20Sidhwa%20august%201938&f=false
  2. ^ ا ب عنوان : The Feminist Companion to Literature in English — صفحہ: 982
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb123725964 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. ^ ا ب
  5. Sharma، Pranay (جون 2, 2014). "Those Nights In Nairobi". آؤٹ لک. 
  6. "Bapsi Sidhwa". 
  7. Sharma، Pranay (جون 2, 2014). "Those Nights In Nairobi". آؤٹ لک. 
  8. "Bapsi Sidhwa". www.litencyc.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2018. 
  9. Allen، Howard. "Worldly Lessons". Tucson Weekly (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2018. 
  10. "Meet Our Candidates: Mohur Sidhwa for State Representative, LD 9". Planned Parenthood Advocates of Arizona (بزبان انگریزی). 2012-07-11. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2018. 
  11. ^ ا ب Jussawalla، Feroza F.؛ Dasenbrock، Reed Way (1992). Interviews with Writers of the Post-colonial World. یونیورسٹی پریس آف مسیسپی. صفحہ 214. ISBN 978-0-87805-572-2. 
  12. Deshmukh، Ajay Sahebrao (2014). Ethnic Angst: A Comparative Study of Bapsi Sidhwa & Rohinton Mistry. Partridge Publishing. صفحہ 247. ISBN 978-1-4828-4153-4. Gujarati is the first language of Bapsi Sidhwa and most Parsis.