بی ایس عبد الرحمٰن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بی ایس عبد الرحمٰن
BSA with Former Indian PM.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 15 اکتوبر 1927(1927-10-15)
کیلاکرئی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 7 جنوری 2015(2015-10-07) (عمر  87 سال)
چنائے  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
قومیت بھارتn
نسل Tamil
(Marakkar)
مذہب اسلام
زوجہ Muthu Zulaiha Beevi
Dr. Rahmathunisa Abdul Azeez
اولاد Arif Buhari Rahman
Abdul Qadir Buhari
Ahmed Buhari Rahman
Ashraf Buhari Rahman
Qurrath Jameela
Mariam Habeeb[1]
عملی زندگی
پیشہ Entrepreneur, philanthropist, educationist
کل دولت $5 بلین[2][3][4]

بوہری سید عبدالرحمن (15اکتوبر 1927ء-7جنوری2015ء)ایک ہندوستانی تامل کاروباری، مخیر شخص اور ماہر تعلیم تھے۔ ان کا کاروبار بہت وسیع پیمانہ پر پھیلا ہوا تھا جس میں متحدہ امارات اور تاملناڈو انڈیا میں بحری جہاز اور رئیل اسٹیٹ انشورنس وغیرہ شامل ہیں۔ [5][6]

انہوں نے متعدد اسکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں، ہسپتالوں کی بنیاد رکھی۔ ایک سالانہ اشاعت، 500 بااثر مسلمان جن میں 24 کا تعلق انڈیا سے ہے ان میں سے آپ ایک تھے۔ عبدالرحمن امارات ٹریڈنگ ایجنسی( جو ای۔ ٹی سٹار کے نام سے جانی جاتی ہے) اور ایسکون گروپ دبئی بنیاد تنظیم کے 1973 سے 2015 تک وائس چیئرپرسن تھے۔ وہ بی ایس عبدالرحمن یونیورسٹی (کریسینٹ انجینئری کالج) اور چنائی میں پہلے نجی ملکیت کے انجینرنگ کالجوں کے بانی تھے۔ مشرقی ساحل کی تعمیری اور انڈسٹری، مغربی ایشیا برآمدات اور درآمدات، مغرب ایشیا میری ٹائم، بوہری گروپ اور ہانگ کانگ میں آمانہ سرمایہ کاری اور ٹرانسکر انڈیا کے سربراہ تھے۔ وہ کوئلہ، آئل اور ساحلی توانائی کے نائب صدر تھے۔ انہوں نے عمان انشورنس کمپنی کی مدد کے ساتھ بھارت کا پہلا ہیلتھ انشورنس، سٹار انشورنس اور الائیڈ انشورنس قائم کیا۔ 1962ء میں ایسٹ کوسٹ تعمیرات اور صنعتوں کی بنیاد رکھی گئی جن میں چنائی کی متعدد تعمیرات جن میں گیمینی فلائی اوور، کودامبکام فلائی اوور، چیپوک اسٹیڈیم چنائی سٹی سینٹر، گورنمنٹ جنرل ہسپتال، مرینا لائٹ ہاؤس وغیرہ شامل ہیں۔ 7 جنوری 2015 کو 87 سال کی عمر میں ان کا انتقال ہوا۔ عبدالرحمن نے کئی خیراتی سرگرمیاں جاری رکھیں۔ مختلف خیراتی تنظیموں کو بڑے پیمانے پر پیسوں کا عطیہ دیا کہ مالی طور پر کمزوروں کو معاشی لحاظ سے مضبوط کیا جائے۔ بی۔ ایس عبدالرحمن کائیلاکری تاملناڈو انڈیا میں ایک مڈل کلاس مراکر گھرانے میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد بخاری علیم جنوبی ایشیا میں موتیوں کے تاجر تھے۔ انہوں نے سیکینڈری سطح کی تعلیم سکٹارج اسکول، رامناتھاپورم اور ہمیدیہ اسکول کالئیکاری سے مکمل کی۔ ان کے چار بیٹے اور دو بیٹاں تھیں۔ انہوں نے اپنا کاروبار سری لنکا سے اپنے بڑے بھائی عبدالقدیر کے ساتھ شروع کیا۔ ان کی ایک بہن بھی تھی جس کی حادثاتی موت کے بعد اس کے نام سے اپنے آبائی شہر میں ایک خواتین کے کالج کی بنیاد رکھی جس کا نام تہسیم بی بی عبدالقدیر برائے خواتین کالج رکھا گیا۔ انہوں نے تاملناڈو میں بہت سے اسکولوں اور کالجوں کا آغاز کیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. BSA family
  2. Shivakumar S.۔ "Mr. B.S Abdur Rahman – One Man, Many Missions"۔ Gulf Today۔ Nellaieruvadi.com۔ مورخہ 2010-07-01 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. "Syed M. Salahuddin, Managing Director, ETA Ascon Star Group, awarded the Asian Business Award Middle East for 2007"۔ indiaprwire.com۔
  4. TE Narasimhan۔ "ETA Ascon in talks with PE investors"۔ Business Standard۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. John L. Esposito؛ Ibrahim Kalın؛ Usra Ghazi؛ Prince Alwaleed Center for Muslim–Christian Understanding۔ The 500 Most Influential Muslims۔ Royal Islamic Strategic Studies Centre, Createspace۔ آئی ایس بی این 978-9957-428-37-2۔
  6. "World's 500 'Most Influential Muslims': 24 Indians in the list; Mufti Akhtar Raza Khan, Mahmood Madani in first 50"۔ Two circles.net۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 جنوری 2015۔

بیرونی روابط[ترمیم]