ترکی داعش تنازع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ترکی داعش تنازع
Turkey–ISIL conflict
بسلسلہ the Spillover of the Syrian Civil War, Civil conflict in Turkey اور Military intervention against ISIL
Rojava Kurdisch kontrollierte Gebiete.jpg
شمالی شام کےخطے جن پر وائے پی جی، آئی ایس آئی ایل، شامی فوج، آزاد شامی فوج کا قبضہ ہے یا جہاں لڑائیاں ہوئیں، جون 2015 کے آخر تک، ترکی کے ساتھ ملنے والی سرحد کے جنوب میں۔
تاریخ11 مئی 2013 – تاحال
(6 سال، 1 مہینا، 1 ہفتہ اور 1 دن)
مقامترکی، سوریہ اور عراق
حیثیت
  • (Supposed) داعش کے ترکی سرزمین یا شہریوں پر حملے، مئی 2013، مارچ اور جون 2014، جون اور (2x) جولائی 2015
  • ترکی کے داعش پر حملے جنوری 2014 میں، اور 23+24+25 جولائی 2015
محارب

Flag of ترکی ترکی

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست عراق اور الشام میں اسلامی ریاست

کمانڈر اور رہنما
Flag of ترکی رجب طیب اردوغان
Flag of ترکی احمد داؤد اوغلو
Flag of ترکی Hulusi Akar
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست ابوبکر البغدادی
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست ابو علاء العفری
ابو علی الانباری
ابو سلیمان الناصر
طاقت
423,299 فوجی اہلکار
182,805 Gendarmes[2]
(2014 شماریات)

آئی ایس آئی ایس فوج: 31,500[3]–100,000[4]

بنکر: 60-70
ہلاکتیں اور نقصانات
4 ہلاک [5][6][7]

200 تا 374 ہلاک
(خودکش بمباروں اور فضائی حملوں میں اپنے لوگوں سمیت)][8][9][10][11][12][13][14]

(سینکڑوں کو گرفتار)[15][16][17][18][19][20]

شہریوں کی ہلاکتوں:
210 شہری ہلاک اور 795 داش کی دشہت کر دی میں زخمی ہوئے۔

ترکی داعش تنازع ترکی اور عراق اور الشام میں اسلامی ریاست نامی تنظیم (داعش، آئی ایس آئي ایس) کے درمیان ہونے والے حملوں اور جھڑپوں کا ایک سلسلہ ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Haber : Suruç patlaması canlı bomba hakkında şok iddia haberi"۔ Internethaber۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  2. "TSK Mevcut Personel Sayısını Açıkladı"۔ Aktif Haber۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. "Islamic State fighter estimate triples — CIA"۔ BBC۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  4. "War with Isis: Islamic militants have army of 200,000, claims senior Kurdish leader"۔ The Independent۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. Andrew Marszal۔ "Turkey tanks open fire on Isil over Syria border after soldier killed"۔ The Telegraph۔ London۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2015۔
  6. "ISIL connection in attack against Turkish security forces"۔ The Daily Sabah Turkey۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 مارچ 2016۔
  7. Turkish soldier killed in cross-border fire from ISIS territory in Syria
  8. "Kilis sınırında IŞİD'le çatışma!"۔ www.haberturk.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  9. Aydın, Çetin۔ "Russian citizen revealed to be suicide bomber who attacked Istanbul police"۔ Hürriyet Daily News۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 جنوری 2015۔
  10. "IŞİD sitesi Suruç eylemini böyle duyurdu"۔ derginokta.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  11. "Flaş iddia: 35 IŞİD teröristi öldürüldü!"۔ http://m.halkgazete.com۔ External link in |work= (معاونت)
  12. "All five ISIS terrorists which martyred Turkish officer were killed: Turkish Armed Forces"۔ DailySabah۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 اگست 2015۔
  13. Operasyonda öldürülen terörist sayısı belli oldu - GÜNCEL Haberleri
  14. Diyarbakır'da operasyon: 7 IŞİD'li öldürüldü - BBC Türkçe
  15. http://www.haber3.com/iki-isidli-tutuklandi-3647142h.htm
  16. Diyarbakır'da 8 IŞİD'li tutuklandı
  17. Konya'da 1 IŞİD'li tutuklandı | Gündem haberleri
  18. 13 IŞİD'li tutuklandı
  19. Türkiye'de 285 IŞİD'li Tutuklandı, Tonlarca Patlayıcı Ele Geçirildi
  20. Gaziantep'te 12 IŞİD'li tutuklandı - YURT haberleri