ترک کردستان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ترک کردستان
Turkeyeh kurdistan.png
 

انتظامی تقسیم
ملک Flag of Turkey.svg ترکی  ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دار الحکومت دیار بکر  ویکی ڈیٹا پر (P36) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
کتاب حقائق عالم کے مطابق ترکی کے کرد آباد علاقے

ترک کردستان یا شمالی کردستان ( کردی: Bakurê Kurdistanê) ترکی کے دائرہ اختیار میں کردستان کا وہ حصہ ہے، جو مشرقی اناطولیہ اور جنوب مشرقی اناطولیہ علاقوں میں واقع ہے، جہاں کرد اکثریتی نسلی گروہ کی تشکیل کرتے ہیں ۔ کرد انسٹی ٹیوٹ آف پیرس کا اندازہ ہے کہ ترکی میں 20 ملین کرد آباد ہیں، جن میں اکثریت جنوب مشرق میں ہے۔[1]

جنوب مشرقی ترکی (شمالی کردستان) کے چار حصوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے کردستان، جو شام (مغربی کردستان)، شمالی عراق ( جنوبی کردستان ) اور شمال مغربی ایران (مشرقی کردستان ) کے حصوں پر مشتمل ہے۔[2][3]

اصطلاح ترک کردستان اکثر کرد قوم پرستی کے تناظر میں استعمال ہوتا ہے، جو ترک قوم پرستی کے حامیوں کے درمیان ایک متنازع اصطلاح بنا دیتا ہے۔ اس کی جغرافیائی حد کے بارے میں ابہام پایا جاتا ہے، اور سیاق و سباق کے لحاظ سے اس اصطلاح کا مختلف معنی ہے۔سائنسی مقالے اور نیوز میڈیا اکثر اس اصطلاح کو استعمال کرتے ہیں۔[4][5][6][7][8][9][10][11]

جغرافیہ اور معیشت[ترمیم]

دائرۃ المعارف بریٹانیکا کے مطابق ترکی کے 81 صوبوں میں سے 13 صوبوں میں کرد اکثریت ہے: صوبہ آدیامان، صوبہ آغری، صوبہ بینگول، صوبہ بتلیس، صوبہ دیار بکر، صوبہ حکاری، صوبہ اغدیر، صوبہ ماردین، صوبہ موش، صوبہ شانلیعرفا، صوبہ سعرد، صوبہ تونجیلی اور صوبہ وان۔[12]

تاریخ[ترمیم]

ترک کردستان، قدیم مشرقی تہذیب کے زرخیز ہلال کا ایک حصہ، جو نوپلیٹک انقلاب (Neolithic Revolution) سے بہت جلد متاثر ہوا جس سے زراعت کا پھیلاؤ ہوا۔

قرون وسطی کے دوران، یہ خطہ مقامی سرداروں کے زیر اقتدار آیا۔ 10 ویں اور 11 ویں صدیوں میں، اس پر کرد مروانیان خاندان کی حکومت تھی۔ چودہویں صدی سے اس خطے کو زیادہ تر سلطنت عثمانیہ میں شامل کیا گیا تھا۔

جدید تاریخ[ترمیم]

عثمانی حکومت نے انیسویں صدی کے اوائل میں اس خطے میں اپنے اختیار پر زور دینا شروع کیا تھا۔ کرد کے آزادانہ ذہنیت سے وابستہ عثمانیوں نے قسطنطنیہ میں ان کے اثر و رسوخ کو روکنے اور مرکزی حکومت کے اختیار میں لانے کی کوشش کی۔

تعلیم[ترمیم]

کرد آبادی کے لسانی حقوق کے بارے میں ترکی میں اہم تنازع ہوا ہے۔ اپنی تاریخ کے مختلف مقامات پر ترکی نے اسکولوں میں کرد کے استعمال سے متعلق ممنوع قوانین نافذ کیے ہیں۔[13]

2014ء میں، متعدد کرد غیر سرکاری تنظیموں نے اور دو کرد سیاسی جماعتوں نے تمام مضامین میں کرد زبان میں تعلیم کے حق کو فروغ دینے کے لئے شمالی کردستان میں اسکولوں کے بائیکاٹ کی حمایت کی۔ اگرچہ ترک معاشرے میں کرد شناخت زیادہ قابل قبول ہوچکی ہے، لیکن ترک حکومت نے صرف اسکولوں میں کرد زبان کو اختیاری کے طور پر پیش کرنے کی اجازت دی ہے۔ حکومت نے دیگر مطالبات کو ماننے سے انکار کردیا ہے۔ کئی جنوب مشرقی شہروں میں، کردوں نے کردی زبان میں کلاسیں پڑھانے کے لئے نجی اسکول قائم کیے ہیں لیکن پولیس ان نجی اسکولوں کو بند کر رہی ہے۔[14]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The Kurdish Population by the Kurdish Institute of Paris, 2017 estimate. "The territory, which the Kurds call Northern Kurdistan (Bakurê Kurdistanê), has 14.2 million inhabitants in 2016. According to several surveys, 86% of them are Kurds... So in 2016, there are about 12.2 million Kurds still living in Kurdistan in Turkey. We know that there are also strong Kurdish communities in the big Turkish metropolises like Istanbul, Izmir, Ankara, Adana, and Mersin. The numerical importance of this "diaspora" is estimated according to sources at 7 to 10 million... Assuming an average estimate of 8 million Kurds in the Turkish part of Turkey, thus arrives at the figure of 20 million Kurds in Turkey."
  2. Khalil، Fadel (1992). Kurden heute (بزبان جرمن). Europaverlag. صفحات 5,18–19. ISBN 3-203-51097-9. 
  3. Kurdish Awakening: Nation Building in a Fragmented Homeland, (2014), by Ofra Bengio, University of Texas Press, p. 1.
  4. de Vos، Hugo; Jongerden، Joost; van Etten، Jacob (2008). "Images of war: Using satellite images for human rights monitoring in Turkish Kurdistan". Disasters 32 (3): 449–466. doi:10.1111/j.1467-7717.2008.01049.x. PMID 18958914. 
  5. Nevo، E; Beiles، A; Kaplan، D. "Genetic diversity and environmental associations of wild emmer wheat, in Turkey". Heredity 61: 31–45. doi:10.1038/hdy.1988.88. 
  6. Van Bruinessen، M. "Between guerrilla war and political murder: The Workers' Party of Kurdistan". Middle East Report 153: 40–50. doi:ڈی او ئي. 
  7. Deborah، Rund; Tirza، Cohen; Dvora، Filon. "Evolution of a genetic disease in an ethnic isolate: beta-thalassemia in the Jews of Kurdistan". Proceedings of the National Academy of Sciences of the United States of America 88 (1): 310–314. doi:10.1073/pnas.88.1.310. PMID 1986379. 
  8. van Bruinessen، Martin. "Kurds, Turks and the Alevi revival in Turkey.". Middle East Report 200 (200): 7–10. doi:10.2307/3013260. 
  9. E. Fuller، Graham. "The Fate of the Kurds". Foreign Affairs 72 (2): 108–121. doi:10.2307/20045529. 
  10. MICHAEL، GUNTER. "The Kurdish Question in Perspective". World Affairs 166 (4): 197–205. doi:10.3200/WAFS.166.4.197-205. 
  11. Davis، P.H.. "Lake Van and Turkish Kurdistan: A Botanical Journey". The Geographical Journal 122 (2): 156–165. doi:10.2307/1790844. 
  12. "Kurdistan | region, Asia". Britannica.com. اخذ شدہ بتاریخ 10 دسمبر 2017. 
  13. Hassanpour, Amir (1996). "The Non-Education of Kurds:A Kurdish Perspective". International Review of Education. 42 (4): 367–379. Bibcode:1996IREdu..42..367H. doi:10.1007/bf00601097. S2CID 145579854.
  14. "Kurdish identity becomes more acceptable in Turkish society". 

بیرونی روابط[ترمیم]