توران امیر سلیمانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
توران امیر سلیمانی
Queen Touran.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1904  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 24 جولا‎ئی 1995 (90–91 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیرس  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات رضا شاہ پہلوی  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ ہمسر ملکہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

توران امیرسلیمانی ( فارسی: توران امیرسلیمانی‎، پیدائش قمر الملوک امیرسلیمانی، (قمر الملوک قمرالملوک امیرسلیمانی ); 4 فروری 1905ء - 24 جولائی 1995ء) ایک ایرانی ملکہ اور رضا شاہ کی تیسری بیوی تھیں، جن سے ان کا ایک بیٹا تھا جس کا نام غلام رضا پہلوی تھا۔ [1]

سوانح[ترمیم]

توران قمر الملوک امیرسلیمانی 1905ء میں پیدا ہوئیں۔ ان کے والد عیسیٰ خان مجد السلطانیہ، مجد الدولہ ( ناصر الدین شاہ قاجار کے کزن) کے بیٹے تھے۔

انھوں نے تہران کے ناموس ہائی اسکول سے ڈپلومہ حاصل کرنے تک اپنی تعلیم جاری رکھی۔ 1922ء میں، انھوں نے رضا خان سے شادی کی، جو اس وقت جنگ کے وزیر تھے۔ اگلے سال انھوں نے اپنے اکلوتے بیٹے غلام رضا پہلوی کو جنم دیا۔ [2] اس جوڑے نے کچھ ہی عرصے بعد طلاق لے لی۔ [2] اس کی وجہ یہ تھی کہ رضا خان اسے مغرور شخصیت کا مالک سمجھتے تھے۔ [3]

طلاق کے بعد، امیرسلیمانی نے دوبارہ شادی کرنے سے گریز کیا اور اپنے بیٹے غلام رضا کے ساتھ شاہی رہائش گاہوں میں سے ایک میں رہنے لگے۔ 1945ء میں، رضا شاہ کی موت کے ایک سال بعد، اس نے ایک مشہور تاجر ذبیح اللہ ملک پور سے شادی کی۔ رضا شاہ کی بیوہ اور ملکہ ماں، تدج الملوک نے اس شادی کو بہانے کے طور پر امیر سلیمانی کو اس کے سابق شوہر کی طرف سے دی گئی رہائش گاہ سے باہر نکالنے کے لیے استعمال کیا۔ [4]

1979ء میں ایرانی انقلاب کے بعد، امیرسلیمانی ایران چھوڑ کر جرمنی چلی گئیں اور بعد کے سالوں میں پیرس میں ریٹائرمنٹ ہوم میں منتقل ہونے سے پہلے وہ جرمنی چلی گئیں۔ وہ 24 جولائی 1995ء کو وہیں انتقال کر گئیں اور انہیں cimetièreقبرستان تیہ پاریس میں دفن کیا گیا۔ ان کے بیٹے کو 2017 ء میں اس کی موت کے بعد انکے ساتھ ہی دفن کیا گیا تھا۔

ایران میں امیرسلیمانی کا گھر تہران کے ظفرانیہ محلے میں پسیان اور اسماعیلی کے سنگم کے جنوب مغرب میں واقع تھا۔ اس جائداد کو 19 جولائی 2016ء کو امام خمینی ریلیف فاؤنڈیشن نے اس سے پہلے کہ اسے کسی نجی مالک کو فروخت کر دیا جائے اور اسے مکمل طور پر منہدم کر دیا جائےجزوی طور پر تباہ کر دیا تھا۔ [5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Niloufar Kasra. "The Lonely Queen at Reza Shah's Court". Institute for Iranian Contemporary Historical Studies (بزبان الفارسية). اخذ شدہ بتاریخ 19 اپریل 2021. 
  2. ^ ا ب James Buchan (2013-10-15). Days of God: The Revolution in Iran and Its Consequences. Simon and Schuster. صفحہ 46. ISBN 978-1-4165-9777-3. 
  3. Janet Afary (2009). Sexual Politics in Modern Iran. Cambridge: Cambridge University Press. صفحہ 194. ISBN 978-1-107-39435-3. 
  4. Jalal Andarmanizadeh؛ Mokhtar Hadid (1999). Pahlavis (Pahlavi dynasty according to documents). 2. Tehran: Institute for Iranian Contemporary Historical Studies. صفحہ 6. 
  5. "آلبوم عکس:خانہ ملکہ توران همسر سوم رضا شاہ در تهران 'تخریب' شد" ["Photo Album: The house of Queen Turan, Reza Shah's third wife, was 'destroyed' in Tehran]. BBC Persian (بزبان الفارسية). 19 جولائی 2016. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولائی 2020.