توفیق زیاد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
توفیق زیاد
Dan Hadani collection(990040459130205171).jpg
 

Faction represented in the کنیست
معلومات شخصیت
پیدائش 7 مئی 1929[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ناصرت[1]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 5 جولا‎ئی 1994 (65 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مغربی کنارہ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات ٹریفک حادثہ  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ناصرت  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات حادثہ  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Israel.svg اسرائیل[2]  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت ماکی
حداش  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر[3]،  سیاست دان،  مصنف،  عوامی صحافی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[1]،  عربی[1]،  روسی[1]،  عبرانی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

توفیق زیاد ( (عربی: توفيق زيّاد)‏ , عبرانی: תאופיק זיאד‎ ) 7 مئی 1929 - 5 جولائی 1994) ایک فلسطینی اسرائیلی سیاست دان تھا جو اپنی "احتجاج کی شاعری" کے لیے مشہور تھا۔ [4]


سیرت[ترمیم]

لازمی فلسطین کے دوران ناصرت، فلسطین میں پیدا ہوا، زیاد اپنی جوانی سے ہی کمیونسٹ حلقوں میں سرگرم تھا۔ اس کا نام ابو الامین ('قابل اعتماد') تھا۔ اسرائیلی بندش کے اقدامات کو نظر انداز کرتے ہوئے، اس نے گلیلی میں دیہاتیوں کو متعدد اقدامات کے خلاف اکٹھا کرنے اور ٹیکس بغاوت پر زور دینے میں ایک اہم متاثر کن کردار ادا کیا۔ اسے 24 اپریل 1954 کو عرابہ میں گرفتار کیا گیا تھا، اور نصف سال تک ناصرت میں قید رکھا گیا تھا اور اس وجہ سے اس کی نقل و حرکت کی آزادی پر پابندیاں عائد تھیں۔ [5] اسرائیلی فوجی حکمرانی (1948-1966) کے تحت اسے کئی بار گرفتار کیا گیا اور قید کیا گیا۔ [6] 1962 اور 1964 کے درمیان انہوں نے ماسکو کے ہائر پارٹی اسکول میں تعلیم حاصل کی۔ [7]

وطن واپسی کے بعد، وہ 9 دسمبر 1975 کو ناصرت کے میئر منتخب ہوئے، ڈیموکریٹک فرنٹ آف ناصرت کے رہنما کے طور پر، ایک ایسی فتح جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ اس نے اسرائیلیوں کو "حیران اور پریشان" کر دیا تھا۔ [8] وہ 19 سال تک میئر کے طور پر خدمات انجام دیں گے، جب تک کہ ان کی 1994 میں دفتر میں موت نہیں ہوئی ۔ [9]

رقہ کی فہرست میں 1973 کے انتخابات میں کنیست کے لیے منتخب کیا گیا، زیاد اسرائیلی حکومت پر عربوں کے بارے میں اپنی پالیسیوں کو تبدیل کرنے کے لیے دباؤ ڈالنے کے لیے سرگرم تھا - وہ دونوں اسرائیل کے اندر اور مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں۔ اسرائیلی جیلوں کے حالات اور فلسطینی قیدیوں پر تشدد کے استعمال کے بارے میں اس کی مشترکہ تصنیف ایک رپورٹ اسرائیلی اخبار الحمشمار میں دوبارہ شائع کی گئی۔ اسے توفیق طوبی اور زیاد نے 29 اکتوبر 1987 کو الفاراح جیل کے دورے کے بعد اقوام متحدہ کو بھی پیش کیا تھا۔ اس کے بعد 23 دسمبر 1987 کی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی رپورٹ میں اس کا طوالت سے حوالہ دیا گیا، جہاں اسے "شاید عرب قیدیوں کی طرف سے برداشت کیے جانے والے نفرت انگیز غیر انسانی حالات کو بیان کرنے والی رپورٹوں کی سچائی کا بہترین ثبوت" کے طور پر بیان کیا گیا۔ [10]

شاعری[ترمیم]

سمد کے تھیم نے، جو مزاحمت کی ایک شکل کے طور پر ایک بڑا ادبی موضوع بن گیا، زیاد کی شاعری میں ایک اہم کردار ادا کیا۔ [11] [12] وہ خاص طور پر اپنی نظم یہاں ہم رہیں گے : کے لیے مشہور ہیں۔

لدا میں، رملہ میں، گلیل میں،
ہم رہیں گے
آپ کے سینے پر دیوار کی طرح، اور آپ کے گلے میں
شیشے کے ٹکڑے کی طرح

کیکٹس کا کانٹا،

اور آپ کی آنکھوں میں

ریت کا طوفان،


ہم رہیں گے۔

آپ کے سینے پر دیوار،

اپنے ریستوراں میں صاف کریں،

اپنے بار میں مشروبات پیش کریں،

اپنے کچن کے فرش جھاڑو

ہمارے بچوں کے لئے ایک کاٹ چھیننے کے لئے

آپ کے نیلے پنکھوں سے [13]

موت[ترمیم]

زیاد 5 جولائی 1994 کو جلاوطنی سے واپسی پر فلسطین لبریشن آرگنائزیشن کے چیئرمین یاسر عرفات کا استقبال کرنے کے بعد جیریکو سے ناصرت واپس جاتے ہوئے وادی اردن میں ایک تصادم میں ہلاک ہوگیا۔ ان کے پسماندگان میں بیوی اور چار بچے تھے۔ اپنی ناگہانی موت کے وقت، وہ ابھی بھی ناصرت کے میئر تھے، کنیسٹ کے رکن اور "ایک سرکردہ عرب قانون ساز" تھے۔ شفاء عمرو میں ایک گلی کا نام ان کے نام پر رکھا گیا ہے۔

فوٹ نوٹ[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ חה"כ תאופיק זיאד — ناشر: کنیست
  2. ^ ا ب Evidence zájmových osob StB (EZO)
  3. PoetsGate poet ID: https://poetsgate.com/poet.php?pt=560 — اخذ شدہ بتاریخ: 5 اپریل 2022 — عنوان : بوَّابة الشُعراء
  4. Ben Ze'ev 2011
  5. Hatim Kanaaneh, Sumud, crucifixion, and poetry: The life of Palestinian leader Tawfiq Zayyad, Mondoweiss 19 December 2020
  6. Sorek، Tamir (2020). The Optimist: A Social Biography of Tawfiq Zayyad. Stanford University Press. ISBN 978-1-503-61274-7. , pp. 37-40.
  7. Sorek، Tamir (2020). The Optimist: A Social Biography of Tawfiq Zayyad. Stanford University Press. ISBN 978-1-503-61274-7. , pp. 55-56.
  8. 'Rakah Victory in Nazareth,'|, Journal of Palestine Studies Spring-Summer 1976, Vol. 5, No. 3/4 pages=178–180
  9. "Tawfik Ziad, 65, Mayor of Nazareth". The New York Times (بزبان انگریزی). 6 July 1994. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  10. General Assembly (23 December 1987). "Report of the Special Committee To Investigate Israeli Practices Affecting the Human Rights of the Population of the Occupied Territories". United Nations. [مردہ ربط]
  11. Abdelwahab M. Elmessiri, The Palestinian Wedding: Major Themes of Contemporary Palestinian Resistance Poetry, Journal of Palestine Studies Vol. 10, No. 3 (Spring, 1981), pp. 77-99 pp.93-94
  12. Khaled Furani, 'Dangerous Weddings: Palestinian Poetry Festivals during Israel's First Military Rule,' The Arab Studies Journal Vol. 21, No. 1, (Spring 2013), pp. 79-100 pp.81-82
  13. Honaida Ghanim, Poetics of Disaster: Nationalism, Gender, and Social Change Among Palestinian Poets in Israel After Nakba, International Journal of Politics, Culture, and Society March 2009 Vol. 22, No. 1 pp.23-39 p.37

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]