جامعہ دارالعلوم بلتستان غواڑی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اولڈ کیمپس گھربی کھور

یہ ایک مشہور و معروف، سو سالہ پرانی و تاریخی دینی درس گاہ اور اسلامک یونیورسٹی ہے جو گلگت بلتستان کے ضلع گانچھے کےقصبے غواڑی میں واقع ہے۔
اس کی بنیاد ایک مقامی عالم دین مولانا محمد موسٰی رحمۃ اللہ علیہ نے 1318ھ میں رکھی تھی۔ شروع میں اس کا نام دارالحدیث غواڑی تھا۔[1]

اس وقت یہ غواڑی کے محلہ گھربی کھور میں قائم کیا گیا تھا۔ بعد میں اس کے نام و مقام دونوں تبدیل ہوگئے اور اسے جامعہ دارالعلوم بلتستان غواڑی کا نام دیا گیا۔ 2000ء اس کا مین کیمپس دوسری جگہ منجر منتقل کیا گیا، جو اسی قصبے میں ایک اور محلے کا نام ہے، جبکہ پرانی عمارت میں بچیوں کی تعلیم کے لیے اسی اسلامک یونیورسٹی کا وومن کیمپس قائم کیا گیا ہے۔

پس منظر[ترمیم]

علاقہ بلتستان:[ترمیم]

اسلامی جمہوریہ پاکستان کے انتہائی شمال میں کوہ قراقرم اور ہمالیہ کی چند وادیوں پر مشتمل قدیم آبادی ہے۔ یہ انتظامی لحاظ سے چار ضلعوں شگر، کھرمنگ، سکردو اور گانچھے میں منقسم ہے۔ یہاں تقریبا چار لاکھ افراد بستے ہیں۔ ان میں سے تقریبا پندرہ فیصد اہل سنت والجماعت سے تعلق رکھتے ہیں، یہ علاقہ سیاچن گلیشئر، کے ٹو اور دیوسائی میدان وغیرہ کے بنا پر دفاعی و سیاحتی نقطہ نظر سے انتہائی اہمیت کے حامل اور بین الاقوامی مہم جو سیاحوں کی جولا نگاہ ہے۔

دخول اسلام:[ترمیم]

مقامی روایات کے مطابق یہاں آٹھویں صدی ہجری کے آخری عشروں میں نامور مبلغ دین سید علی ہمدانیؒ کی مساعی جمیلہ سے اسلام پھیلا۔ بعد میں ان کا نام لیتے ہوئے متعدد داعی وارد ہوئے اور عوام الناس رفتہ رفتہ فرقہ بندی کا شکار ہوئے اور اولین مبلغ کا اپنا مذہب (شافعی) ناپید ہو گیا۔

تجدید دعوت و توحید:[ترمیم]

تیرویں صدی کے اواخر میں بابا محمد حسین پشاوری رحمۃ اللہ علیہ کے ہاتھوں توحید و سنت کے تبلیغ و تعلیم  کو فروغ حاصل ہوا۔ انہی کے فیض یافتہ عبدالرحیم عبدالعزیز ؒ نے مولانا حافظ عبدالمنان وزیر آبادی  ؒسے سند فراغت حاصل کر لی۔ 1305ھ بمطابق 1884ء غواڑی میں کتاب و سنت کی ترویج کے لئے جدو جہد شروع کی۔ لیکن انہیں مختلف ہتھکنڈوں سے واپس جانے پر مجبور کر دیا گیا۔

جامعہ کی تاریخ[ترمیم]

پہلا مرحلہ:[ترمیم]

کچھ عرصے کے بعد داعی موصوف عبدالرحیم عبدالعزیز ؒ کے بھتیجے مولانا محمد موسی بن علی بن عبدالعزیز کو حصول علم نبوی کا شوق دہلی لے گیا۔ آپ محدث العصر سید نذیر حسین دہلوی سے سند فراغت لیکر 1318ھ 1897ء میں وطن واپس آئے اور محلہ گھربی کھور میں مدرسہ دارالحدیث قائم کیا۔ اسی دور میں کریس ، شگر ، بلغار وغیرہ میں ایسے ہی دینی مدارس قائم ہوئے اور ہر جگہ ان مدارس نے داعی اول کے  منہج و عقیدے کی ترویج میں گرانما خدمات سر انجام دیے۔ لیکن بعد میں غواڑی کا مدرسہ مشن میں کامیابی کے لحاظ سے سب پر فوقیت حاصل کر گیا۔ اور ترقی کے ساتھ ساتھ اس کے نام میں بھی کئی بار تبدیلی آّئی۔

دوسرا مرحلہ:[ترمیم]

1395ھ 1974 میں سماحۃ الشیخ ابن باز ؒ  کی خصوصی ہدایت پر الشیخ عبدالرحمان خلیق ؒ اور الشیخ عبدالوہاب حنیف ؒ  یہاں مبعوث ہوئے ۔ ان کے دور میں دارالعلوم بلتستان غواڑی کے مادی وسائل میں خاطر خواہ اضافہ ہوا۔ مدینہ یونیورسٹی میں داخلے کا سلسلہ قائم ہوا۔ بلتستان میں پہلے سے قائم قابل ذکر مدارس میں سے مدرسہ منبع العلوم شگر کے علاوہ باقی تمام مدارس اس کی برانچیں بن گئیں۔ حسب ضرورت نئے برانچ مدارس قائم کیے گئے۔  1982 میں مرکز اسلامی سکردو قائم ہوا۔ [2]

تیسرا مرحلہ:[ترمیم]

نصرت الٰہی ہمرکاب رہی اور بزرگوں کی مخلصانہ دعائیں رنگ لاتی رہیں۔ جامعہ اسلامیہ مدینہ منورہ کے فاضل علماء کی خدمات حاصل رہیں  اور مخلص اہل احسان کا فیاضانہ تعاون برگبار لاتا رہا۔ مرکزی دارالعلوم بلتستان غواڑی کی عمارت توسیع کے باوجود تنگی داماں کا شکوہ رہیں اور مخلص محسنین کے باہمی تعاون سےغواڑی کے علاقہ منجر میں یونیورسٹی کا مین کیمپس قائم کیا گیا۔

کلیات[ترمیم]

جامعہ کے مندرجہ ذیل کلیات الدرسات (Faculties of Studies) قائم کیے گئے ہیں۔

مین کیمس[ترمیم]

1۔ کلیۃ الحدیث:

2000ء کو کلیۃ الحدیث کا افتتاح کیا گیا۔ یہاں مرحلہ متوسطہ(مڈل گروپ) سے آخر تک کے طلبہ کو منتقل کیا گیا۔ جبکہ مرحلہ ابتدائیہ (پرائمری گروپ) کو مناسب کمروں کی فراہمی تک حسب سابق وہاں رکھا گیا۔

2۔ کلیۃ الشریعۃ:

کلیۃ الحدیث کے ساتھ ہی مین کیمپس منجر میں بعد میں کلیۃ الشریعۃ کی شاندار عمارت بھی مکمل ہوئی۔

3۔ کلیۃ القرآن:

اس کلیۃ کے تحت قسم لتحفیظ القرآن قائم ہے جہاں طلبا کو قرآن پاک حفظ کروایا جاتا ہے۔

وومن کیمپس[ترمیم]

4۔ کلیۃ الدراسات الاسلامیہ للبنات:

دارالعلوم کے سابق عمارت میں قائم معہد خدیجۃ الکبری کے نصاب اور نظام میں بہتر ترمیم کے ساتھ اس سے کلیۃ الدراسات الاسلامیہ للبنات کا نام دیا گیا۔ اب وہاں بھی نئے دور کے تقاضوں کے مطابق عمارت بن چکی ہے۔ یہاں پر بچیوں کی تعلیم کے لیے اسی اسلامک یونیورسٹی کا وومن کیمپس قائم کیا گیا ہے۔

جامعہ کی خدمات:[ترمیم]

تعارف[ترمیم]

جامعہ بنیادی طور پر ایک خالص دینی تعلیمی و تبلیغی ادارہ ہے۔ لیکن دعوت و توحید و سنت اور تعلیم کتاب و سنت کے تقاضوں کو پورا کرتے کرتے اس سے بہت سے فلاحی اور رفاہی نوعیت کی خدمات بھی ادا ہو رہی ہے۔ اور تعلیمی، ثقافتی، عدالتی اور فلاحی میدانوں میں کام چلانے کے لئے متعدد ادارے اور کمیٹیاں قائم کی گئی ہیں۔ ان خدمات کی مختصر سی جھلک پیش خدمت ہے۔ [حوالہ 1]

ادارۃ التعلیم:[ترمیم]

یہ ادارہ جامعہ دارالعلوم غواڑی کے چاروں شعبوں پر ہمہ وقت توجہ مرکوز رکھتا ہے۔ تعلیمی، امتحانی، اور ادارتی معاملات کے ایک مربوط نظام کے تحت جامعہ کے تمام امور کی باقاعدہ نگرانی کرتا ہے۔

دارالقضاء والافتاء:[ترمیم]

مقتدر علماء کی کمیٹی ہے جس کے ذریعے مقدمات کا شرعی فیصلہ صادر کیا جاتا ہے۔ سرکاری عدالتیں بھی بعض مقدمات میں فریقین کو اس کمیٹی کی طرف بھیج دیتی ہیں۔ نیز عوام کی طرف سے آنے والے سوالات کا جواب اور فتوی بھی دیا جاتا ہے ۔

عصری تعلیم[ترمیم]

جامعہ کی سر پرستی میں رائج الوقت سرکاری نصاب تعلیم کے فروغ کے لئے کئی پرگرام چل رہے ہیں:

(۱) بورڈ کے امتحانات:[ترمیم]

جامعہ دارالعلوم بلتستان غواڑی کے قسم البنین(بوائز کیمپس) اور قسم البنات (وومن کیمپس) دونوں میں زیر تعلیم طلباء و طالبات کو مڈل سے میٹرک کی سطح تک بنیادی مضامیں کی تیاری کا موقع اور علمی معاونت فراہم کی جاتی ہے۔

تاریخی اعزاز:[ترمیم]

2002ء میں قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی گلگت کے میٹرک سال اول آرٹس گروپ کے امتحان میں اسی جامعہ کے ہونہار طلباء نے پہلی تین پوزیشنیں حاصل کیں۔ جس پر جامعہ کو خصوصی ایوارڈ سے نوازا گیا۔ ان طلباء میں حاٖفظ زاہد سعید (شاعر شمال)، پروفیسر عبداللہ عبدالرحیم اور فداءاللہ عبدالکریم ناصری بالترتیب فرسٹ، سیکنڈ اور تھرڈ پوزیشن ہولڈر تھے۔ تینوں طالب علموں کا تعلق پڑوسی بستی یوگو سے تھا جو گانچھے کا دوسرا اہم تجارتی و کاروباری مرکز ہونے اور پوری آبادی کے اہلحدیث مکتب فکر سے تعلق رکھنے کے حوالے سے معروف ہے۔

(2)    برنامج المساعدہ التعلیمیہ:[ترمیم]

تعلیمی تعاون یا ایجوکیشنل اسسٹنس پروگرام (The Educational Assistance Program) کے تحت مرکز اسلامی سکردو میں کالج کے ریگولر طلباء کے لیے قیام و طعام اور تعلیمی و تربیتی ماحول فراہم کیا گیا ہے۔

(3) الاثر پبلک سکول :[ترمیم]

جامعہ دارالعلوم کے سر پرستی اور کوشش سے الاثر پبلک سکولز کا سلسلہ قائم کیا گیا ۔ غواڑی میں کامیابی کے بعد اب یہ سکول کریس، یوگو ،کھرفق میں بھی قائم ہو چکے ہیں۔ ان سکولوں کے اخراجات طلبہ کے فیس سے پورے کیے جاتے ہیں۔ کمی بیشی کی صورت میں ادارہ کفالت کرتا ہے۔

لائبریری[ترمیم]

جامعہ دارالعلوم کی مرکزی لائبریری کے علاوہ علاقہ بھر میں درجنوں ذیلی لائبریریاں قائم کی کئی ہیں تاکہ تعلیم یافتہ لوگ اپنے فرصت کے قیمتی لمحات علوم نبوت کی روشنی میں حیات انسانی کا اصل مقصد سمجھنے میں صرف کریں۔ ان لائبریریوں میں اردو، عربی اور انگریزی میں مختلف موضوعات پر کتابیں موجود ہیں۔

مجلہ التراث[ترمیم]

یہ مجلہ جامعہ ہذا کا ترجمان ہے جو اردو زبان میں توحید و سنت کی دعوت اور اصلاح معاشرہ کا درد لیے 1998ء سے ہر چھے ماہ بعد طلوع ہو رہا تھا۔ اب اس کی بڑھتی ہوئی مانگ اور قارئین کرام کے اصرار پر سہ ماہی کر دیا گیا ہے۔ اس رسالے کے ذریعے مقامی تاریخ اور شخصیات پر بھی اچھا خاصہ کام ہو چکاہے۔ عبدالوہاب خان صاحب اس کے ایڈیٹر اور جناب عبدالرحیم روزی سیکریٹری ہیں۔ [3]

تعلیقات[ترمیم]

  1. (شعبہ تعلقات عامہ جامعہ دارالعلوم بلتستان غواڑی کی جانب سے2006ء میں نشر کی گئی پمفلٹ سے نقل کیا گیا ہے )

حوالہ جات[ترمیم]

  1. صدیقی، عنایت اللہ (2002). جماعت اہلحدیث اور غواڑی. مکتبہ الشباب الاسلامی. صفحہ 56. 
  2. "جامعہ دارالعلوم بلتستان غواڑی". اردو مجلس فورم. میری درس گاہ. 26/01/2013. 
  3. روزی، عبدالرحیم (05/05/2012). "ماہنامہ رُشد". محدث فورم. مجلس التحقیق السلامی.