جاپان میں اردو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اردو اور جاپانی زبانوں کے تعلیمی متون کا موازنہ

اردو زبان کا تعارف جاپان میں 1663ء میں ہوا تھا۔ اس سال ناگاساکی میں ایک ہندوستان سے ایک کشتی اُتری تھی۔ اس کے ملاح کو آج بھی جاپانی مؤرخین "مُوْر" یا مسلمان کے طور پر جانتے ہیں۔[1]

قدیم ترین کتبہ[ترمیم]

1796ء میں ناگاساکی علاقے سے اردو میں لکھا گیا ایک کتبہ ملا ہے جس سے اس زبان کے جاپان میں اس دور میں کسی حد تک استعمال کیے جانے کا ثبوت ملا ہے۔[1]

اردو کی تعلیم گاہیں[ترمیم]

ارادہ جاتی تعلیم کے علاوہ ٹوکیو یونیورسٹی آف فارین اسٹڈیز (ٹُفس)، اوساکا یونیورسٹی اور ڈائٹوبُنکا یونیورسٹی اور کیوٹو یونیورسٹی میں اردو پڑھائی جاتی ہے۔ ان میں ٹوکیو یونیورسٹی آف فارین اسٹڈیز دسمبر 2008ء میں اردو تعلیم کے سو سال مکمل کرچکی ہے۔[1][2]

اردو کے لیے کام کرنے والی چند اہم جاپانی شخصیات[ترمیم]

جاپان میں پہلا اردوپندرہ روزہ[ترمیم]

پاکستانی نژاد محمد زبیر جاپان میں پہلا اردو پندرہ روزہ "پاک شِنْبُن" جاری کرچکے ہیں۔[2]

ہائیکو شاعری کو اردو میں قبولیت[ترمیم]

جاپان اور اہلِ جاپان سے ربط کی وجہ سے ہائیکو شاعری بھی اردو ادب کا ایک اہم حصہ بن گئی ہے۔[3]

جاپانی تاریخ پر اردو میں کتب[ترمیم]

جاپان کے ساتھ پاکستان کے سفارتی تعلقات کے ساٹھ سال مکمل ہونے کے موقع پر 2013ء جاپانی تاریخ پر اردو میں ضخیم کتب کا رسم اجرا پاکستان کے شہر کراچی میں جاپان کے قونصل عمومی اکیرا اُوچی نے کیا تھا۔ ان کتب کے مصنفین کا تعلق دونوں ملکوں سے ہے۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]