جمہوریہ شرقی ترکستان دوم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جمہوریہ شرقی ترکستان دوم
East Turkestan Republic

شەرقىي تۈركىستان جۇمھۇرىيىتى
東突厥斯坦共和國
1944–1949
Flag of East Turkestan
Located in three contiguous prefectures in Xinjiang, or Northwest China. Contiguous, but with three Chinese enclaves.
The Ili, Tarbaghatay, and Altay districts (red) controlled by the 2nd East Turkestan Republic
حیثیتسوویت اتحاد کی زیر حمایت[1][2][3][4]
دار الحکومتیینینگ شہر[5]
عام زبانیںاویغور زبان
قازق زبان
روسی زبان
مذہب
اسلام
حکومتMarxist-Leninist یک جماعت ریاست socialist republic[2][6]
صدر 
• 1944–1946
Elihan Tore
سربراہ 
• 1946–1949
Ehmetjan Qasim
تاریخی دوردوسری جنگ عظیم · سرد جنگ
نومبر 1944
• 
نومبر 12 1944
• 
دسمبر 22 1949
کرنسیسوم[حوالہ درکار]
آیزو 3166 رمز[[آیزو 3166-2:|]]
ماقبل
مابعد
Xinjiang Province, ROC
Xinjiang Provincial Coalition Government, ROC (قیام جولائی 1, 1946)
Xinjiang Province, PRC (از اکتوبر 1949)
موجودہ حصہچین سنکیانگ (زیادہ تر الی قازق خود مختار پریفیکچر)

جمہوریہ شرقی ترکستان دوم (انگریزی: Second East Turkestan Republic) عام طور پر جمہوریہ جمہوریہ مشرقی ترکستان یا جمہوریہ شرقی ترکستان کے طور پر جانا جاتا ہے شمالی سنکیانگ میں ایک قلیل مدتی سوویت حمایت یافتہ ترک سوشلسٹ عوامی جمہوریہ تھی جو 12 نومبر 1944ء سے 22 دسمبر 1949ء تک قائم رہی۔ اس کا آغاز جمہوریہ چین کے صوبے سنکیانگ کے تین شمالی اضلاع الی قازق، تاچینگ اور التای میں انقلاب کے طور پر ہوا۔ 1946ء میں اس نے اپنی آزاد حیثیت کو منسوخ کردیا اور سنکیانگ کی صوبائی اتحاد حکومت میں شمولیت اختیار کی، لیکن درحقیقت خود مختاری کو برقرار رکھا۔ اگست 1947ء میں جمہوریہ شرقی ترکستان کے عہدیداروں نے سنکیانگ کی صوبائی اتحاد حکومت سے دستبرداری اختیار کی اور اپنی آزادی کا دوبارہ اعلان کر دیا۔ سنکیانگ کے باقی حصے کومنتانگ کے ماتحت تھے۔ یہ خطہ اب عوامی جمہوریۂ چین کے شنجیانگ اویغور خودمختار علاقہ شمالی حصے (بنیادی طور پر الی قازق خود مختار پریفیکچر) کا ایک حصہ ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. David D. Wang. Under the Soviet Shadow: The Yining Incident; Ethnic Conflicts and International Rivalry in Xinjiang, 1944–1949. p. 406.
  2. ^ ا ب "Archived copy". 23 اکتوبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2010. 
  3. David Wang. The Xinjiang question of the 1940s: the story behind the Sino-Soviet treaty of اگست 1945
  4. Into Tibet: Thomas Laird. The CIA's First Atomic Spy and His Secret Expedition to Lhasa p. 25.
  5. Forbes (1986), p. 176
  6. Forbes (1986), pp. 178–179