جی-20 ٹورنٹو اجلاس 2010

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جی-20 ٹورنٹو اجلاس 2010
2010 G-20 Toronto summit
میزبان ملک کینیڈا
تاریخ جون 26–27، 2010
مقامات Metro Toronto Convention Centre
شہر ٹورانٹو، انٹاریو
اگلا 2009 G-20 Pittsburgh summit
پچھلا 2010 G-20 Seoul summit
ویب سائیٹ Official website

2010ء ٹورانٹو چوٹی جی-بیس ممالک کی چوتھی ملاقات جون 2010ء میں ٹورانٹو میں منعقد ہوئی۔ اس کے ساتھ کی ملاقات انٹاریو کے شمالی شہر ہنٹس ویل میں منعقد کی گئی۔

اس ملاقات پر سخت حفاظتی اقدامات کیے گئے جن پر ایک بلین ڈالر تک کا خرچہ آ سکتا ہے۔ پولیس کو وسیع اختیارات دیے گئے کہ وہ کسی کو اپنا نام پتہ نہ بتانے کے الزام میں گرفتار کر سکتی ہے۔[1][2][3] زیریں شہر ٹورانٹو کو پولیس کی بڑی تعداد محفوظ کرنے میں لگی رہی۔ معمولی شک پر شہریوں کی گرفتاریاں مکمل کر کے سنگین الزامات لگائے گئے۔

26 جون کو مظاہرین اور پولیس کے درمیان معمولی جھڑپیں ہوئیں جس کے بعد پولیس نے "مشتبہ" افراد کو زمین پر گرا کر رسیوں سے باندھ کر گرفتار کرنا شروع کر دیا جن میں سے بیشتر جامعہ ٹورانٹو کے طالب علم تھے۔[4]

شریک ممالک اور ادارے[ترمیم]

رکن نمایندہ عہدہ
Flag of ارجنٹائن ارجنٹائن Cristina Fernández de Kirchner[5] صدر
Flag of آسٹریلیا آسٹریلیا Wayne Swan[6] Deputy Prime Minister
Flag of برازیل برازیل Guido Mantega[7] Finance Minister
Flag of کینیڈا کینیڈا اسٹیفن ہارپر[8] وزیراعظم
Flag of چین چین Hu Jintao[9] صدر
Flag of فرانس فرانس نکولس سرکوزی[10] صدر
Flag of جرمنی جرمنی اینجیلا مرکل[11] Chancellor
Flag of بھارت بھارت منموہن سنگھ[12] Prime Minister
Flag of انڈونیشیا انڈونیشیا Susilo Bambang Yudhoyono[11] صدر
Flag of اطالیہ اطالیہ Silvio Berlusconi[11] وزیراعظم
Flag of جاپان جاپان Naoto Kan[11] وزیراعظم
Flag of میکسیکو میکسیکو Felipe Calderón[13] صدر
Flag of روس روس دمتری میدوی ایدف[11] صدر
Flag of سعودی عرب سعودی عرب عبداللہ بن عبدالعزیز[14][15] شاہ
Flag of جنوبی افریقا جنوبی افریقا Jacob Zuma[11] صدر
Flag of جنوبی کوریا جنوبی کوریا Lee Myung-bak[16] صدر
Flag of ترکی ترکی رجب طیب اردوغان[17][18] وزیراعظم
Flag of مملکت متحدہ برطانیہ ڈیوڈ کیمرن[11] وزیراعظم
Flag of ریاستہائے متحدہ ریاستہائے متحدہ امریکا بارک اوبامہ[11] صدر
Flag of یورپی اتحاد European Commission José Manuel Barroso[18] صدر
یورپی کونسل Herman Van Rompuy[11] صدر
جن ممالک کو مدعو کیا گيا
ملک نمایندہ عہدہ
Flag of ایتھوپیا ایتھوپیا[19] ملس زیناوی[11] وزیراعظم
Flag of ملاوی ملاوی[19] بینگو وا موتھاریکا[11] صدر
Flag of نیدرلینڈز نیدرلینڈز[19] Jan Peter Balkenende[20] وزیراعظم
Flag of نائجیریا نائجیریا[21] Goodluck Jonathan[11] صدر
Flag of ہسپانیہ ہسپانیہ[19] José Luis Rodríguez Zapatero[22] وزیراعظم
Flag of ویت نام ویتنام[19] Nguyen Tan Dung[9] وزیراعظم
بین الاقوامی تنظیمیں
تنظیم نمایندہ عہدہ
افریقی اتحاد بینگو وا موتھاریکا[11][23][24] افریقی اتحاد کے چیئرپرسن
جنوب مشرقی ایشیائی اقوام کی تنظیم Surin Pitsuwan[25] Secretary General
Nguyen Tan Dung[25] Summit President
Financial Stability Board Mario Draghi[26] Chairman
عالمی ادارہ محنت Juan Somavía[27] Director-General
بین الاقوامی مالیاتی فنڈ Dominique Strauss-Kahn[10] Managing Director
NEPAD ملس زیناوی[11] Chairman
انجمن اقتصادی تعاون و ترقی José Ángel Gurría[28] Secretary General
Flag of اقوام متحدہ اقوام متحدہ بان کی مون[29] Secretary General
World Bank Group Robert Zoellick[28] President
عالمی تجارتی ادارہ Pascal Lamy[10] Director-General

حوالہ جات[ترمیم]

  1. گلوب اور میل،25 جون 2010ء، "Police given greater arrest powers near G20 security zone "
  2. ٹورانٹو سٹار، 25 جون 2010ء، "Just being near the G20 security zone can get you arrested"
  3. ٹورانٹو سٹار، 25 جون 2010ء، "Man arrested and left in wire cage under new G20 law"
  4. cbc, 26 جون 2010ء، "G20 protest brings violence, arrests"
  5. Sebastián Campanario (26 جون 2010)۔ "Cristina dirá ante las potencias que no hay una sola salida para la crisis"۔ Los Andes (Spanish زبان میں)۔ losandes.com.ar۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2011-04-06۔
  6. Sandra O'Malley (26 جون 2010)۔ "Swan to take International Stage at G20"۔ The Sydney Morning Herald۔ smh.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-27۔
  7. Xavier, Luciana. "G-20 deve definir meta de reform a para aprovação em novembro," Estadão (Brazil). June 26, 2010, retrieved 2011-04-06; Moura, Fabiola. "Brazil Calls 'Draconian' Goal to Halve G-20 Nations' Deficits," Bloomberg Businessweek (US). June 26, 2010, retrieved 2011-04-06.
  8. "Prime Minister's biography"۔ Government of Canada۔ 26 جولا‎ئی 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-04-02۔
  9. ^ ا ب Raveena Aulakh (25 جون 2010)۔ "Are pandas China's G20 gift to Toronto?"۔ Toronto Star۔ thestar.com۔
  10. ^ ا ب پ Romain Gubert (26 جون 2010)۔ "Quatre Français pour rien"۔ Le Point (French زبان میں)۔ lepoint.fr۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  11. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ "The G20 Leaders Make an Entrance; Heads of State are Greeted by Mounties as They Arrive for the Summit"۔ Maclean's۔ macleans.ca۔ 25 جون 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  12. "Packed Schedule Awaits Manmohan Singh in Toronto"۔ Hindustan Times۔ نئی دہلی۔ 26 جون 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  13. "Arriba Calderón a Toronto para participar en Cumbre de G-20"۔ La Crónica de Hoy۔ میکسیکو شہر: cronica.com.mx۔ 26 جون 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  14. Syed Rachid Husain (28 جون 2010)۔ "G20 leaders agree to disagree"۔ Arab News۔ جدہ, سعودی عرب: arabnews.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 2011-03-26۔ |archive-url= is malformed: save command (معاونت)
  15. "Kingdom's G20 participation reflects its stature"۔ arabnews.com۔ 27 جون 2010۔ اخذ شدہ بتاریخ 2011-03-26۔ |archive-url= is malformed: save command (معاونت)
  16. Sewell Chan and Jackie Calmes (26 جون 2010)۔ "We're staying put, Obama warns North Korea"۔ The Sydney Morning Herald۔ smh.com.au۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  17. Okan Haksever (27 جون 2010)۔ "Erdogan Toronto'ya Mavi Marmara dosyasiyla gitti"۔ Dünya Bülteni (Turkey)۔
  18. ^ ا ب "Differences on Economy Set to Play out in Toronto"۔ The Hindu۔ چینائی: thehindu.com۔ 25 جون 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  19. ^ ا ب پ ت ٹ "PM announces participation of key leaders at the Toronto G-20 Summit this June"۔ Government of Canada۔ 8 مئی 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  20. "Balkenende in Canada voor G20-top"۔ RTL Nieuws (Dutch زبان میں)۔ rtl.nl۔ 27 جون 2010۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  21. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ punchng1 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  22. "Zapatero pide ante los líderes de la cumbre imponer "deberes" a los mercados"۔ La Razón (Spanish زبان میں)۔ میدرد: larazon.es۔ 27 جون 2010۔
  23. Mahmood Hasan (4 جولا‎ئی 2010)۔ "Rich man, poor man"۔ The Daily Star۔ ڈھاکہ: dailystar.net۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  24. Les Whittington and Bruce Campion-Smith (25 جون 2010)۔ "G20 set to tackle sharp differences over economic policy"۔ Toronto Star۔ thestar.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  25. ^ ا ب Pradumna B. Rana (6 جولا‎ئی 2010)۔ "How can Asia strengthen its voice at G-20?"۔ The Korea Times۔ koreatimes.co.kr۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔
  26. Bob Davis (28 June 2010)۔ "G-20 Agrees to Cut Debt"۔ The Wall Street Journal۔ New York City: wsj.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-23-12۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  27. "Biography of Juan Somavia, Director-General"۔ International Labour Organization۔ 4 نومبر 2011۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-23۔
  28. ^ ا ب Angel Gurría, OECD Secretary-General (CV). OCED. 
  29. Olivia Ward (26 جون 2010)۔ "Ban Ki-moon at G20 as 'defender of the defenceless'"۔ Toronto Star۔ thestar.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-03-26۔