حافظ ابراہیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حافظ ابراہیم
Hafez Ibrahim.JPG
پیدائش 24 فروری 1872(1872-02-24)
دیروط، محافظہ اسیوط، مصر
وفات جون 21، 1932(1932-60-21) (عمر  60 سال)
قومیت مصری Flag of مصر

حافظ ابراہیم (1871ء تا 1932ء) 20ویں صدی کے مصر کے عربی زبان کے شاعر ہیں۔ انہیں “شاعر النیل“ کہا جاتا ہے۔ غریب عوام کی سیاسی آواز بننے کی وجہ سے انہیں عوامی شاعر کے لقب سے بھی یاد کیا جاتا ہے۔ [1] انہوں نے اپنی شاعری میں عام مصریوں کے مسائل کو موضوع بنایا مثلاً خواتین کے حقوق، غربت، تعلیم اورسلطنت برطانیہ کی تنقید وغیرہ۔[1][2]

حافظ ابراہیم ان مصری شعرا میں شمار ہوتے ہیں جنہوں نے 19ویں صدی کے اواخر میں کلاسیکی عربی شاعری کو جلا بخشی اور کلاسیکی عروض و قوافی کو استعمال کرتے ہوئے ایسے معانی اور تاثرات پیش کئے جو عام کلاسیکی شاعر کے لئے بالکل انجان تھے۔ حافظ ابراہیم کو سیاسی اور سماجی شاعر کہا جاتا ہے۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ان کی ولادت 1817ء میں دیروط مصر میں ہوئی۔ ان کے والد مصری انجئنر تھے اور والدہ ترکی النسل تھیں۔[3][2] والد کے انتقال کے بعد بعمر چار برس وہ اپنے ماموں کے پاس طنطا چلے گئے اور ابتدائی تعلیم حاصل کی۔ اس کے بعد قاہرہ کا رخ کیا جہاں ثانوی تک کی تعلیم مکمل ہوئی۔ والدہ کے انتقال کے بعد وہ واپس طنطا آگئے اور مشہور وکیل ابو شادی کے ساتھ رہنے لگے جہاں ان کا تعارف بیشتر ادبی کتابوں اور مصری قومی تحریک کے نامور قائدین سے ہوا۔[2]

زندگی[ترمیم]

1888ء میں حافظ نے ملٹری اکیڈمی یں داخلہ کیا اور تین برس بعد لفٹنینٹ بن کر نکلے۔ وزارت داخلہ میں ان کی تقرری ہوئی اور 1896 میں انہیں سوڈان بھیج دیا گیا۔ وہاں انہوں نے دیگر مصری مظاہرین کے ساتھ سوڈان مخالف تحریک میں حصہ لیا جس کے نتیجہ میں ان کا مکورٹ مارشل ہوا اور انہیں مصر واپس بھیج دیا گیا۔[2] 1911ء میں انہیں مصری قومی کتب خانہ کا صدر مقرر کیا گیا اور وزیر تعلیم نے انہیں بیگ کے خطاب سے نوازا اور اس طرح ان کی مالی پریشانی دور ہو گئی اور معاشی حالات مستحکم ہوئے۔ اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہوا کہ یہ عظیم شاعر شعر و ادب پر توجہ دینے لگا۔ اس دوران میں انہوں نے اپنے ہم خیال اور جدید کلاسیکل شاعری کے شاعرا احمد شوقی اور محمود سامی بارودی سے ملاقات کی اور ان کے ساتھ مل کر کلاسیکل شاعری کو بنا سنوار کر نئے انداز میں پیش کیا۔[2]

ادبی خدمات[ترمیم]

  • البسوك الدماء فوق الدماء [4]
  • يا سيدي و إمامي [4]
  • شكرت جميل صنعكم ۔[4]
  • مصر تتكلم عن نفسها ۔[4]
  • لي كساء أنعم بہ من كساء۔[4]
  • قل للرئيس ادام اللہ دولتہ ۔[4]
  • وکٹر ہیوگو کی بد نصیب (ناول) کا ترجمہ، 1903[5]

یادگار[ترمیم]

الجزيرة (القاهرة) میں فاروق ابراہیم نے حافظ ابراہیم کا ایک مجسمہ نصب کیا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Lesley Lababidi، Cairo's Street Stories: Exploring the City's Statues, Squares, Bridges, Gardens, and Sidewalk Cafés، American University in Cairo Press، صفحہ 80، آئی ایس بی این 977416153X
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Mustafa Kabha، "Ibrahim, Hafiz"، Dictionary of African Biography، اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس، صفحہ 127، آئی ایس بی این 0-19-538207-2
  3. Muḥammad Muṣṭafá Badawī، A critical introduction to modern Arabic poetry، Cambridge University Press، صفحہ 42، آئی ایس بی این 0-521-29023-6، Hafiz was of mixed origin: his father was an Egyptian engineer and his mother Turkish.
  4. ^ ا ب پ ت ٹ ث poems
  5. Abdellah Touhami, Étude de la traduction des Misérables (Victor Hugo) par Hafiz Ibrahim، Université de la Sorbonne nouvelle, 1986