حبیب اللہ مختار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حبیب اللہ مختار
معلومات شخصیت
پیدائش 28 اپریل 1944  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دہلی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 نومبر 1997 (53 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
چانسلر (3rd )   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
1991  – 1997 
در جامعہ العلوم الاسلامیہ بنوری ٹاؤن 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مفتی احمد الرحمٰن 
عبدالرزاق اسکندر  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
سیکرٹری جنرل (5 )   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
29 اپریل 1991  – 1 نومبر 1997 
در وفاق المدارس پاکستان 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مفتی احمد الرحمٰن 
محمد حنیف جالندھری  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ العلوم الاسلامیہ بنوری ٹاؤن
جامعہ کراچی
جامعہ اسلامیہ، مدینہ منورہ
دارالعلوم کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ محمد يوسف بنوری،  مفتی ولی حسن ٹونکیؒ،  مولانا عبدالرشید النعمانی،  محمد ادریس میرٹھی  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ عالم،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مولانا ڈاکٹر محمد حبیب اللہ مختار (پیدائش: 28 اپریل 1944 - 2 نومبر 1997) ایک پاکستانی اسلامی اسکالر اور مصنف تھے۔ جس نے جامعہ العلوم الاسلامیہ کے چانسلر اور وفاق المدارس العربیہ ، پاکستان کے جنرل سکریٹری کے طور پر خدمات انجام دیں۔[1]

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

حبیب اللہ مختار 1944 میں دہلی میں حکیم مختار حسن خان کے ہاں پیدا ہوئے تھے۔ تین سال کی عمر میں ، وہ اپنے کنبے کے ساتھ دہلی سے کراچی ہجرت کر گیا۔ انہوں نے ابتدائی دینی تعلیم دارالعلوم کراچی سے حاصل کی اور 1959 میں جامعہ العلوم الاسلامیہ سے درس نظامی حاصل کیا۔ 1966 میں ، محمد یوسف بنوری کے کہنے پر وہ جامعہ اسلامیہ، مدینہ منورہ میں داخل ہوئے اور چار سال وہاں تعلیم حاصل کی اور 1970 میں واپس آئے۔ پھر انہوں نے 1973 میں اسلامک اسٹڈیز میں ایم اے حاصل کیا اور 1981 میں کراچی یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کیا۔ اسی دوران ، انہوں نے دارالفتاح جامعہ العلوم الاسلامیہ میں درس و تدریس کا سلسلہ جاری رکھا۔[2][3][4]


ملازمت اور درس و تدریس[ترمیم]

ابتدائی سے لیکر درس نظامی کی آخری بڑی کتاب تک جامعہ العلوم الاسلامیہ میں ہر اہم کتاب ان کے زیر انتظام تھا۔ 1991 میں ، جامعہ کے دوسرے چانسلر ، مولانا مفتی احمد الرحمن کے انتقال کے بعد ، باہمی رضامندی سے مولانا حبیب اللہ مختار کو یہ ذمہ داری سونپی گئی۔ اسی کے ساتھ ہی ، وفاق المدارس العربیہ ، پاکستان کے جنرل سکریٹری کا عہدہ بھی خالی تھا۔ اس عہدے کا چارج سنبھالنے کے لیے مولانا حبیب اللہ مختار بھی منتخب ہوئے تھے۔[2]

ادبی کام[ترمیم]

انہوں نے بہت ساری کتابیں تصنیف کیں اور درجنوں عربی کتابوں کا اردو میں ترجمہ کیا.[5][6]. شامل؛

  • اسلام میں بچوں کی پرورش[7]
  • یقین و ایماں
  • مومن کا ہتھیار

وفات[ترمیم]

مختار کو 2 نومبر 1997 کو اپنے ڈرائیور محمد طاہر کے ساتھ گولی مار کر شہید کر دیا گیا تھا۔[3][8] انہیں اپنے شیخ اور سرپرست علامہ بنوری اور مفتی احمد الرحمٰن کے ساتھ جامعہ بنوری ٹاؤن کے احاطے میں سپرد خاک کر دیا گیا۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. "General secretaries ناظم اعلیٰ". wifaqulmadaris.org. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  2. ^ ا ب "حضرت مولانا ڈاکٹر حبیب اللہ مختار شہید رحمۃ اللہ علیہ". جامعہ العلوم الاسلامیہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  3. ^ ا ب پ مفتی غلام مصطفیٰ رفیق (8 November 2019). "مولانا ڈاکٹر محمد حبیب اللہ مختار شہیدؒ". jang.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  4. Mufti Waqas Rafi (1 November 2016). "02 نومبریوم شہادت.... مولانا ڈاکٹر حبیب اللہ مختار شہیدؒ". juraat.com. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  5. مفتی غلام مصطفیٰ رفیق (2 November 2018). "مولانا ڈاکٹرمحمدحبیب اللہ مختارشہید رحمہ اللہ علیہ". jang.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  6. "Maulana Habibullah Mukhtar". archive.org. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  7. "Bringing up children in Islam / Muhammad Habibullah Mukhtar ; translated by Rafiq ʻAbdurrahman.". nlb.gov.sg. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021. 
  8. "KARACHI: MQM slams killing of religious scholar". dawn.com. 11 July 2005. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2021.