حجۃ اللہ البالغہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

حجۃ اللہ البالغہ[1] شاہ ولی اللہ محدث دہلوی کی مشہور و معروف تالیف ہے جس میں آپ نے نہایت شرح و بسط کے ساتھ احکام شرع کی حکمتوں اور مصلحتوں پر روشنی ڈالی ہے۔ یہ کتاب انسانوں کے شخصی اور اجتماعی مسائل، اخلاقیات، سماجیات او راقتصادیات کی روشنی میں فلاح انسانیت کی عظیم دستاویز کا خلاصہ ہے۔ اس کتاب میں تطبیقی انداز اختیار کیا گیا ہے۔ ایسی احادیث کی تشریح ہوئی ہے جو سرا سر روحانیت سے متعلق ہے جیسے کہ حدیث شریف ہے کہ دجال کبھی بھی مکہ المکرمہ میں داخل نہیں ہو سکے گا۔ دوسری حدیث میں ہے کہ آپ ﷺ فرماتے ہیں کہ میں نے دجال کو طواف کرتے دیکھا۔
یہ دو مختلف بیانات ہیں تو شاہ صاحب نے اس کی تشریح کی ہے وہ اس طرح کہ ہر بندہ بلکہ ہر چیز اللہ تبارک و تعالٰی کی کسی نہ کسی صفت کا مظہر ہوتی ہے تو دجال بھی اسم مضل (یعنی ضلات دینے) کا مظہر ہے یا پھر اسم مضل (راہ سے ہٹانے والا) کا مظہر ہے۔
امام غزالی کی "احیاء العلوم" کی طرح یہ کتاب یھی دنیا کی ان چند کتابوں میں سے ہے جو ہمیشہ قدر کی نگاہ سے دیکھی جائیں گی۔ اس کتاب میں شاہ ولی اللہ نے اسلامی عقائد اور اسلامی تعلیمات کی وضاحت کی ہے اور دلیلیں دے کر اسلامی احکام اور عقائد کی صداقت ثابت کی ہے۔ اصل کتاب عربی میں ہے لیکن اس کا اردو میں بھی ترجمہ ہو گیا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]