متواتر (اصطلاح حدیث)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(حدیث متواتر سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

اصطلاح حدیث میں متواتر ایسی حدیث کو کہتے ہیں جس کو ایک ایسی راویوں (واحد راوی) کی جماعت روایت کرتی ہے جس کا جھوٹ پر اکٹھا ہونا عقلاََ و عادتاََ ناممکن ہو اور دوسری جماعت جو اس پہلی جماعت سے روایت کرتی ہے وہ بھی اس کی طرح کی ہوتی ہے اور یہ وصف سند کے آغاز، وسط اور آخر تک موجود رہتا ہے۔

شرائط تواتر[ترمیم]

  1. اسناد کی کثرت ہو
  2. راویوں کی تعداد اتنی کثیر ہو کہ ان سب کا جھوٹ پر اتفاق کر لینا عادتََا بھی محال ہو اور یہ بھی کہ اس قدر راویوں سے اتفاقی طور پربھی جھوٹ صادر نہ ہو سکتا ہو ۔

راویوں کی کثرت کے بارے میں علماءکے اند ر اختلاف ہے کہ کتنی کثرت ہو نی چاہئیے۔

  • بعض علما نے زناء کے گواہوں کی تعداد (چار) پر قیاس کر کے یہ تعداد کم از کم چار بتائی ہے
  • بعض علما نے لعان پر قیاس کر کے یہ تعداد پانچ رکھی ہے
  • بعض علما کے نزدیک کم از کم دس ہوں (جمع کثرت کے کم از کم عدد کو پیش نظر رکھ کر)
  • بعض نے بارہ کی تعداد بتائی ہے (وبعثنامنہم اثنی عشرہ نقیباََِسے استدلال کرکے)
  • بعض نے چالیس کی تعداد متعین کی ہے (حسبک اللہ ومن اتبعک من الموممنین)
  • بعض نے ستر کی تعداد متعین کی ہے جو دلیل میں واختار موسٰی قوما سبعین رجلا پیش کرتے ہیں

ابن حجر کا کہنا ہے کہ کثرت تعداد کا تعین محض تکلف ہے۔ گو ہر ایک نے یہ تعداد ایک مقرر حد کو پیش نظر رکھ کر بتائی ہے مگر اسے عموم کا درجہ نہیں دیا جاسکتا ہے۔ وہ تعداد جس سے علم یقینی کا فائدہو، کافی ہے۔

  1. سند میں یہ وصف یعنی کثرت ابتداءسے انتہا تک ہر طبقہ میں باقی رہے۔
  2. خبر کا تعلق حِس سے ہو گا، عقل سے نہیں۔ راویوں کو اس حدیث کا علم حواس ظاہری سے ہوا ہو،مثلاََ روایت کرنے والے یہ کہیں �©”ہم نے سُنا“ یا پھر یہ کہ ”ہم نے دیکھا“ وغیرہ اگر ذریعہ عقل ہو تو پھر وہ خبر متواتر نہیں ہے مثلاََ ”کائنات کے وجود میں آنے کی خبر“# خبر مفید اور یقینی علم دیتی ہو۔

متواتر کی اقسام[ترمیم]

حدیث متواتر کی دو اقسام ہیں:

متواترلفظی[ترمیم]

متواتر لفظی میں حدیث کا متن الفاظ کے معاملے میں ایک جیسا ہوتا ہے، اس کے علاوہ اس کے معنی بھی متواتر ہوتے ہیں

متواترمعنوی[ترمیم]

متواتر معنوی میں حدیث کا متن الفاظ کے معاملے میں مختلف ہو سکتا ہے مگر معنی و مقصد ایک جیسا ہی ہوتا ہے۔ تواتر لفظی بہت کم احادیث میں ہے، ہاں اگرحدیثوں کے الفاظ مختلف ہوں؛ لیکن ان سب میں بات ایک ہی کہی گئی ہوتواس قدر مشترک کاتواتر بھی بہرحال قائم اور ثابت ہوگا، یہ تواترمعنوی ہے، کافی حدیثی مواد تواترمعنوی کے درجے کو پہنچتا ہے۔

مشہور تصانیف[ترمیم]

حدیث متواترہ پر مشہور تصانیف ہیں:

علم مصطلح الحديث
متواتر متفق عليہ مشہور عزيز غريب حسن
متصل صحیح منکر
مسند ← من حيث السند علم الحديث من حيث المتن متروک
خبر آحاد ضعيف مدرج
منقطع مضطرب مدلس موقوف منقطع موضوع


حوالہ جات[ترمیم]