حرکت دوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

حرکت دوری یا امعائی حرکت (peristalsis) جانداروں کے نالی نما اعضاء (جیسے آنت و معدہ وغیرہ) میں پیدا ہونے والی حرکات کو کہا جاتا ہے، (فعلیات) حرکت دوری؛ ایک نلکی جیسے عضلاتی عضویہ؛ نظام کے سکڑنے اور پھیلنے کی خود کار حرکت، جیسے انتڑیاں جو آہستہ آہستہ فضلے کو آگے بڑھاتی ہیں؛ امعائی حرکت۔[1]

اگر آسان وضاحت کی جائے تو یوں کہا جاسکتا ہے کہ یہ حرکات کچھ ایسی ہوتی ہیں کہ جیسے کوئی کیڑا (مثال کے طور پر کیچوا وغیرہ) رینگتا ہے۔ ان حرکات کا اظہار کرنے والے سب سے نمایاں اعضاء، معدی معوی سبیل سے تعلق رکھتے ہیں جسے عام طور پر غذائی نالی بھی کہہ دیا جاتا ہے۔ اس حلقہ (tract) میں موجود اعضاء ایک طویل نالی کی صورت میں ہوتے ہیں جس میں سے غذا کا گزر واقع ہوتا ہے، ان اعضاء کی دیواروں میں موجود طولی (longitudinal) اور دائری (circular) عضلات یا muscle مربوط طور پر یوں سکڑتے اور پھیلتے ہیں کہ نتیجہ غذا کو دھکیلنے کی صورت میں ظاہر ہوتا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]