حریدی یہودیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

حریدی یہودیت جسے بعض اوقات خریدی (جمع حریدیت یا خریدیت) بنیاد پرست یہودیت کی ایک بڑی شاخ ہے جو موجودہ دور کے سیکولر رحجان کی نفی کرتا ہے۔ اس کے اراکین کو انتہائی بنیاد پرست یا انگریزی میں الٹرا آرتھوڈاکس کہا جاتا ہے حالانکہ اس کے بہت سے اراکین اس اصطلاح کو منفی سمجھتے ہیں۔[1] حریدی خود کو مصدقہ یہودیوں میں سب سے زیادہ مذہبی گردانتے ہیں[2] تاہم دیگر فرقے اس بات کو تسلیم نہیں کرتے۔[3][4]

حریدی یہودیت دراصل یہودی مذہب میں آنے والی سماجی تبدیلیوں جیسا کہ روشن خیالی، ثقافت، مذہبی رواداری، مذہبی اصلاحات وغیرہ چاہے وہ معمولی ہوں یا انتہائی، یہودی قوم پرستی وغیرہ کے خلاف ردِ عمل کے طور پر سامنے آئی۔[5] جدید راسخ العقیدہ یہودیت نے جدیدیت کو قبول کرنے میں عجلت دکھائی مگر حریدیوں نے یہودی قوانین اور جدیدیت سے دور رہتے ہوئے اپنے رواجوں کو مضبوطی سے تھامے رکھا۔[6] تاہم کئی فرقوں میں پیشہ ورانہ تعلیم اور تجارت کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے اور حریدی اور غیر حریدی یہودیوں کے علاوہ حریدی یہودیوں اور غیر یہودیوں کے مابین تعلقات بھی موجود ہیں۔[7]

حریدی لوگ زیادہ تر اسرائیل، شمالی امریکا اور مغربی یورپ میں آباد ہیں۔ دنیا بھر میں ان کی کل تعداد کا تخمینہ پندرہ سے اٹھارہ لاکھ کے درمیان میں ہے اور چونکہ یہ لوگ بین المذاہب شادی کے خلاف ہیں اور ان کی شرح پیدائش زیادہ ہے، اس لیے ان کی تعداد مسلسل بڑھ رہی ہے۔ اس کے علاوہ بال تشووا تحریک کے نتیجے میں غیر مذہبی یہودی بھی ان میں شامل ہو رہے ہیں۔[8][9][10][11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Lauren Markoe (فروری 6, 2014)۔ "Should ultra-Orthodox Jews be able to decide what they're called?"۔ Washington Post۔ مورخہ 6 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-01-13۔ |archiveurl= اور |archive-url= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت); |archivedate= اور |archive-date= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت)
  2. Tatyana Dumova؛ Richard Fiordo (30 ستمبر 2011)۔ Blogging in the Global Society: Cultural, Political and Geographical Aspects۔ Idea Group Inc (IGI)۔ صفحہ 126۔ آئی ایس بی این 978-1-60960-744-9۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ Haredim regard themselves as the most authentic custodians of Jewish religious law and tradition which, in their opinion, is binding and unchangeable. They consider all other expressions of Judaism, including Modern Orthodoxy, as deviations from God's laws.
  3. Nora L. Rubel۔ Doubting the Devout: The Ultra-Orthodox in the Jewish American Imagination۔ Columbia University Press۔ صفحہ 148۔ آئی ایس بی این 978-0-231-14187-1۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جولائی 2013۔ Mainstream Jews have—until recently—maintained the impression that the ultraorthodox are the 'real' Jews.
  4. Ilan 2012: "One of the main sources of power enabling Haredi Jews' extreme behavior is the Israeli public's widely held view that their way of life represents traditional Judaism, and that when it comes to Judaism, more radical means more authentic. This is among the most strongly held and unfounded myths in Israel society."
  5. For example: Arnold Eisen, Rethinking Modern Judaism، University of Chicago Press, 1998. p. 3.
  6. Batnitzky 2011، صفحات۔ 184–185
  7. Wertheimer, Jack. "What You Don't Know About the Ultra-Orthodox." Commentary Magazine۔ 1 جولائی 2015. 4 ستمبر 2015.
  8. Šelomo A. Dešen؛ Charles Seymour Liebman؛ Moshe Shokeid (1 جنوری 1995)۔ Israeli Judaism: The Sociology of Religion in Israel۔ Transaction Publishers۔ صفحہ 28۔ آئی ایس بی این 978-1-4128-2674-7۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ The number of baalei teshuvah, "penitents" from secular backgrounds who become Ultraorthodox Jews, amounts to a few thousand, mainly between the years 1975–87, and is modest compared with the natural growth of the haredim; but the phenomenon has generated great interest in Israel.
  9. Harris 1992، صفحہ۔ 490: "This movement began in the US, but is now centred in Israel, where, since 1967, many thousands of Jews have consciously adopted an ultra-Orthodox lifestyle."
  10. Weintraub 2002، صفحہ۔ 211: "Many of the Ultra-Orthodox Jews living in Brooklyn are baaley tshuva, Jews who have gone through a repentance experience and have become Orthodox, though they may have been raised in entirely secular Jewish homes."
  11. Returning to Tradition: The Contemporary Revival of Orthodox Judaism, By M. Herbert Danzger: "A survey of Jews in the New York metropolitan area found that 24% of those who were highly observant … had been reared by parents who did not share such scruples. […] The ba'al t'shuva represents a new phenomenon for Judaism; for the first time there are not only Jews who leave the fold … but also a substantial number who "return". p. 2; and: "Defined in terms of observance, then, the number of newly Orthodox is about 100,000." p. 193.