حسن حبیبی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حسن حبیبی
(فارسی میں: حسن حبیبی ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تفصیل= Habibi in 1980

ایران کے پہلے نائب صدر
مدت منصب
21 اگست 1989 – 26 اگست 2001
صدر ہاشمی رفسنجانی
سید محمد خاتمی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png دفتر قائم ہوا
محمد رضا عارف Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
ایران کی صدارتی انتظامیہ کے نگران
مدت منصب
5 ستمبر 1989 – 3 اگست 1997
صدر ہاشمی رفسنجانی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مصطفی میر سلیم
محمد ہاشمی رفسنجانی Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
وزیر قانون
مدت منصب
15 اگست 1984 – 29 اگست 1989
صدر سید علی خامنہ ای
وزیر اعظم میر حسین موسوی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png محمد اصغری
اسماعیل شوشتری Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
مجلس ایران
مدت منصب
28 مئی 1980 – 28 مئی 1984
ووٹ 1,552,478 (72.7%)
وزیر ثقافت اور اعلیٰ تعلیم
مدت منصب
1 اکتوبر 1979 – 28 مئی 1980
وزیر اعظم مہدی بازرگان
Fleche-defaut-droite-gris-32.png علی شریعتمداری
حسن عارفی Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 29 جنوری 1937  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 31 جنوری 2013 (76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت نهضت آزادی ایران  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ تہران  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان،  وکیل،  سرکاری ملازم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حسن ابراہیم حبیبی (29 جنوری 1937ء- 31 جنوری 2013ء) ایک ایرانی سیاست دان، وکیل، عالم اور صدور اکبر ہاشمی رفسنجانی اور سید محمد خاتمی کے تحت 1989ء سے 2001ء تک پہلے نائب صدر تھے۔ وہ ثقافتی انقلاب کی اعلیٰ کونسل کے رکن اور 2004ء سے 2013ء میں اپنی وفات تک فارسی زبان و ادب کی اکیڈمی کے سربراہ بھی رہے۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

حبیبی 29 جنوری 1937ء کو پیدا ہوئے۔ انہوں نے سوشیالوجی کی تعلیم فرانس میں حاصل کی۔[4][5] انہوں نے قانون اور سماجیات میں پی ایچ ڈی کی۔ جب وہ یونیورسٹی کے طالب علم تھے تو انہوں نے خمینی سے ملاقات کی جب وہ جلاوطنی میں تھے۔[6]

کرئیر[ترمیم]

حبیبی کو آیت اللہ خمینی نے ایران کے ممکنہ آئین کا مسودہ تیار کرنے کی ذمہ داری سونپی تھی جب وہ پیرس میں جلاوطن تھے۔ تنقیدوں کی وجہ سے اس کے ورژن میں بہت زیادہ ترمیم کی گئی اور حتمی متن نومبر 1979ء میں الیکشن کے ذریعے منظور کر لیا گیا۔ ایرانی انقلاب کے بعد، حبیبی کو انقلابی کونسل کا عوامی ترجمان نامزد کیا گیا۔ وہ اسلامی جمہوریہ ایران کے آئین کے پہلے مسودے کے اہم معماروں میں سے تھے، جسے بعد میں آئین کے ماہرین کی منتخب اسمبلی میں مزید بحث کے لیے منظور کیا گیا۔ اسمبلی نے اصل مسودے میں اہم تبدیلیاں کیں، جیسے اسلامی فقہا کی سرپرستی کے خمینی کے تصور پر مبنی "اسلامی جمہوریہ کے رہنما" کے نئے عہدے کو متعارف کروا کر، جس نے پادریوں کو تقریباً لامحدود طاقت فراہم کی۔ ترمیم شدہ ورژن کو 1979ء میں ایک مقبول ریفرنڈم میں منظور کیا گیا تھا۔ 1980ء کے صدارتی انتخابات میں، حبیبی نے عہدے کے لیے حصہ لیا، لیکن بنی صدر کے ستر فیصد کے مقابلے میں صرف دس فیصد ووٹ حاصل ہوئے۔ انتخابی عمل میں حبیبی کو محمد بہشتی کی حمایت حاصل تھی۔ اسی سال انہوں نے اسلامی جمہوریہ پارٹی کے نمائندے کی حیثیت سے پارلیمانی نشست جیتی۔ حبیبی نے وزیر اعظم موسوی کے دور میں وزیر انصاف کے طور پر خدمات انجام دیں۔ وہ 1989ء سے 2001ء تک ایران کے پہلے نائب صدر رہے، آٹھ سال صدر رفسنجانی کے دور میں اور پھر چار سال صدر خاتمی کے دور میں۔ وہ اکیڈمی آف فارسی لینگویج اینڈ لٹریچر کے سربراہ اور ایکسپیڈینسی کونسل کے رکن بھی تھے۔

وفات[ترمیم]

حبیبی کا انتقال 31 جنوری 2013ء کو ہوا۔ انہیں یکم فروری کو تہران میں امام خمینی کے مزار میں دفن کیا گیا۔ نماز جنازہ میں صدر محمود احمدی نژاد سمیت اہم ایرانی سیاسی شخصیات نے شرکت کی۔

کام[ترمیم]

حبیبی متعدد کتابوں کے مصنف ہیں، جن میں خدا (1981)، معاشرہ، ثقافت، سیاست (1984)، اسلام اور ہمارے وقت کا بحران (1984)، حقوق کے آئینے میں: بین الاقوامی حقوق کے نظریات، تقابلی حقوق اور سماجیات ( 1988)، سیکنگ دی روٹس (ترمیم اور ترجمہ) (1994)، کیس ورک آف این ایجز اسٹوڈنٹ (1997)، ون ورڈ آؤٹ آف تھاوزنڈز (2 والیم) (1998-2001) اور جنرل انٹرنیشنل رائٹس (2 والیم) (2003)۔

سیاسی وابستگی[ترمیم]

حبیبی 1960ء کی دہائی میں یورپ میں نیشنل فرنٹ پبلیکیشنز کے ڈائریکٹر تھے۔ اس حیثیت میں، وہ پارٹی کے طلبہ ونگ کے تنظیم پیام دانشجو کی اشاعت اور تقسیم میں شامل تھے۔

حبیبی ایران کی تحریک آزادی کے رکن تھے، اس سے پہلے کہ وہ ایرانی انقلاب کے بعد اسلامی جمہوریہ پارٹی میں شامل ہو گئے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Dana Dabir (7 March 2011). همسران حکومتی؛ از حاشیه تا متن [Governmental spouses; from the margin to the text]. Khodnevis (بزبان فارسی). 04 اگست 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2011. 
  2. اعطای نشان عالی استقلال به آقای حسن حبیبی معاون اول رئیس‌جمهور [Endowing the Excellent Order of Independence to Mr. Hassan Habibi, First Vice President]. مجلس ایران (بزبان فارسی). 26 July 1997. اخذ شدہ بتاریخ 15 اپریل 2016. 
  3. نشان‌های دولتی در روزهای پایانی خاتمی و احمدی‌نژاد به چه کسانی رسید؟. Tasnim News Agency (بزبان فارسی). 24 August 2013. اخذ شدہ بتاریخ 15 اپریل 2016. 
  4. Chehabi، H. E. (Summer 1991). "Religion and Politics in Iran: How Theocratic Is the Islamic Republic?". Daedalus. 120 (3): 69–91. JSTOR 20025388. 
  5. Randjbar-Daemi، Siavush (2013). "Building the Islamic State: The Draft Constitution of 1979 Reconsidered". Iranian Studies. 46 (4): 641–663. doi:10.1080/00210862.2013.784519. 
  6. Paola Rivetti (February 2012). "Islamic Republic: Shaping Iran's politics through the campus" (Chaillot Papers). In Rouzbeh Parsi. Iran: A Revolutionary Republic in Transition. Paris: Institute for Security Studies European Union. ISBN 978-92-9198-198-4. اخذ شدہ بتاریخ 27 جولا‎ئی 2013.