حسن حسن زادہ طبری آملی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
آیت اللہ العظمیٰ  ویکی ڈیٹا پر (P511) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
حسن حسن زادہ طبری آملی
(طبری میں: حسن حسن‌زاده آملی ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Hassan Hasanzadeh Amoli02 (1).jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 10 فروری 1929  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 25 ستمبر 2021 (92 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آمل  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران (1979–2021)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی حوزہ علمیہ قم  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ محمد حسین طباطبائی  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان،  فلسفی،  ریاضی دان،  عالم،  مصنف،  ماہر فلکیات،  متصوف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان طبری زبان  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی[2]،  فارسی،  طبری زبان  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک اصولی (اہل تشیع)  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

 

حسن حسن زادہ طبری آملی (21 بہمن 1307 - 3 مہر 1400) علامہ حسن زادہ آملی کے نام سے جانا جاتا ہے[3][4]، ایک آسمانی فلسفی ، فقیہ ، صوفی ، نجومی اور مدرسے کے نصاب کے استاد تھے۔ [5] [6] ان کے مداح انہیں " علامہ "، " زولفنون " اور "علامہ دہر" بھی کہتے ہیں جو ادب ، غیر ملکی علوم ، [7] اور طب میں ماہر تھے[8]۔ انہوں نے فارسی ، طبری اور عربی زبانوں میں نظمیں بھی لکھیں[9]۔[10] [11] حسن زادہ آملی کو 2002 میں پائیدار چہروں کی تیسری کانفرنس میں ایک پائیدار چہرے کے طور پر منتخب کیا گیا تھا۔ [12] ان کا انتقال 3 اکتوبر 1400 بروز ہفتہ 92 سال کی عمر میں ہوا۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے رہبر اعلیٰ سید علی خامنہ ای نے ان کے جسد خاکی پر فاتحہ خوانی کی۔ [13]

زندگی‌نامه[ترمیم]

ایرا لاریجان گاؤں میں حسن زادہ آملی کے گھر کے دروازے پر

سبز چھت والا حجرہ اس کی بیوی کی قبر ہے جو اس کے صحن کے کونے میں مدفون ہے۔

حسن زادہ آملی 1307 ہجری کے آخر میں امیل کاؤنٹی کے گاؤں ایرائی لاریجان میں پیدا ہوئے۔ چھ سال کی عمر میں وہ اسکول گئے اور لکھنا پڑھنا سیکھا۔ اس نے اس زمانے کے اسکولوں میں کچھ عام پرچے پڑھے۔ پھر مدرسہ کے ابتدائی کورس میں داخلہ لیا۔ آپ کے مدرسہ میں داخل ہونے کی تاریخ اکتوبر 1323ھ تھی۔

اس نے امول میں فیلڈ کورس کے تعارفی متن کا مطالعہ محمد غراوی، عزیز اللہ طبرسی، احمد اعتمادی، عبداللہ اشراقی، ابوالقاسم رجائی، مرزا ابوالقاسم فارسیو اور دیگر پروفیسروں سے کیا اور امول میں کچھ تعارفی کتابیں پڑھانا شروع کیں۔ [14]

محمد باقر لاریجانی ان کے داماد ہیں۔ [15]

تہران کی طرف ہجرت[ترمیم]

وہ شہریار 1329 میں تہران آئے اور چند سال حج ابوالفتح اسکول میں گزارے اور مدرسے کی بقیہ کتابیں سید احمد لاواسانی سے پڑھیں۔ آپ نے کئی سال مراوی اسکول میں گزارے اور 13 سال تک محمد طغی آملی اور ابوالحسن شیرانی کی نگرانی میں تعلیم حاصل کی اور ان سے اجتہاد کی اجازت حاصل کی۔

تہران سے قم کی طرف ہجرت[ترمیم]

1342ھ میں آپ نے قم میں قیام کے ارادے سے تہران کو چھوڑا اور قم میں داخل ہونے کے بعد مدرسہ کی تعلیم اور ریاضی کی تکنیک پڑھانا شروع کیا۔ انہوں نے قم میں سید محمد حسین طباطبائی کا استعمال کیا اور ان کی درخواست پر انہوں نے سید محمد حسن الٰہی طباطبائی کو استعمال کیا۔ حسن زادہ آملی نے 17 سال تک سید محمد حسین طباطبائی کے اسباق سے سب سے زیادہ استفادہ کیا۔

تدریس[ترمیم]

حسن زادہ آملی [16] کے پڑھائے گئے کچھ اسباق درج ذیل ہیں:

  • خاجہ کی تفصیل کے ساتھ اشارے کے چار ادوار (صفحہ 253)۔
  • مصباح ایلانس نے آٹھ سال قم کے مدرسے میں نجف آبادی مسجد اور نجف آبادی امامت کے لیے اور تدریس کا دوسرا دور جو 1370 میں شروع ہوا اور 1371 میں اپنے غضب کی وجہ سے بند کر دیا گیا۔ (صفحہ 255)
  • فصیح الحکم داؤد بن محمود قیصری کے چار ادوار کی تفصیل جو انہوں نے اپنے طلباء کے لیے لکھی اور انہوں نے لکھے۔ (صفحہ 255)
  • ابن سینا کی شفا کا ایک مکمل کورس، جس نے پڑھاتے ہوئے کئی نسخوں کو درست کیا اور نوٹ اور حاشیہ شامل کیا (صفحہ 254)۔
  • مدرسہ قم میں گرامر کی تیاری کے چار کورسز، ہر کورس تقریباً چار سال تک جاری رہتا ہے۔ (صفحہ 254)۔
  • "اوکر منالوس" جو قم کے مدرسہ میں تین سال تک جاری رہا (صفحہ 256)۔
  • خاجہ طوسی (صفحہ 257) کی لکھی ہوئی دو کتابیں "اُکَر ثاوذوسیوس و مساکن"۔
  • یوکلڈ کے اصول (صفحہ 257)۔
  • بورڈ کورسز اور ریاضی کے دیگر مضامین (صفحہ 263)۔
  • وقت اور قبلہ جاننے کے اسباق
  • اس کے ساتھ ساتھ کافی اصولوں کی تصحیح اور عربی کاری بھی ابوالحسن شیرانی کی فرمائش پر ان ہی نے کی۔ [17]

آراء[ترمیم]

وحدت وجود[ترمیم]

اس تناظر میں ان کا خیال ہے کہ وحدت الوجود توحیدی مسائل کے بارود میں سے ایک ہے۔ صوفیاء، عرفان، فقہاء اور محدثین حتیٰ کہ فرنگی بھی اس مسئلہ میں داخل ہوئے ہیں۔ اہل حدیث اور مطہری نے بھی احادیث پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان میں عددی وحدت نہیں ہے۔ وحدت الوجود کے معنی میں اس نے کہا کہ ’’دنیا میں صرف ایک ہی سچائی ہے اور وہ خدا ہے اور دیگر مخلوقات کو کچھ نہیں کہا جا سکتا‘‘۔ ... کیونکہ یہ موجود ہے جس کا اثر ہے اور اس نے اس سے کام لیا ہے۔ جب ہم موازنہ کرتے ہیں تو ہم دیکھتے ہیں کہ دوسری مخلوقات اللہ کی اجازت کے سوا کچھ نہیں کر سکتیں۔ » [18]

قرآن کی وحدت اور ثبوت و عرفان[ترمیم]

اس کا خیال ہے کہ قرآن، ثبوت اور تصوف ایک دوسرے سے الگ اور الگ نہیں ہیں۔ [19]

سیاسی نقطہ نظر[ترمیم]

15 جون 1342 سے پہلے آپ نے سید روح اللہ خمینی کی زیارت کی۔ اس وقت خمینی نے علما کو مسلمانوں کے سیاسی مسائل اور سماجی مسائل کو عام لوگوں تک بیان کرنے کا پابند کیا تھا اور حسن زادہ آملی نے بھی اس راہ میں قدم رکھا۔ [20]

خمینی کی تحریک کی ان کی واضح حمایت اور غیر قانونی قوانین کی منظوری، خمینی کی جلاوطنی اور مظاہرین کے قتل کے حوالے سے ہوویدا کو ان کے احتجاجی خطوط، نیز ایران عراق جنگ میں فوجیوں کے ساتھ ان کی موجودگی، ان کی زندگی کے اس پہلو کو ظاہر کرتی ہے۔ [21]

1377 میں سید علی خامنہ ای کے دورہ امول کے دوران، انہوں نے سید علی خامنہ ای کا تعارف لکھ کر کتاب "مین ان دی میسٹیزم" پیش کی۔ [22]

دوسروں کی نظروں میں[ترمیم]

سید علی خامنہ ای کی علالت کے باعث ہسپتال میں داخل ہونے کے دوران حسن زادہ آملی کی عیادت
  • 19 جون 1390 کو قم کی اسلامی حکمت کی سپریم کونسل نے حسن زادہ آملی کو ان کی سائنسی کاوشوں اور خدمات پر اعزاز سے نوازا۔ اس تقریب میں عبداللہ جوادی آملی نے حسن زادہ آملی کی سائنسی شخصیت کی تعریف کی اور کہا: "وہ ضوفن کے دور حاضر کے بزرگوں میں شمار ہوتے ہیں۔ » [23]

وفات[ترمیم]

حسن زادہ آملی کو 3 مہر 1400 (صفر 18، 1443 ہجری) کی صبح امام رضائی امول اسپتال میں دل کی خرابی کی وجہ سے اسپتال میں داخل کیا گیا تھا اور اسی دن رات 9 بجے ان کا انتقال ہوگیا۔ کچھ رپورٹس میں قادرنجاد (ہسپتال کے سربراہ) کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ آملی کی موت کی وجہ دل کی شدید ناکامی تھی۔ [24][25]

حسن زادہ آملی کی تدفین ان کی اہلیہ کی قبر کے پاس ہے۔

ان کی وفات پر اسلامی جمہوریہ ایران کے حکام، اداروں اور قومی و عسکری حکام نے تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ اساتذہ کی سوسائٹی، اساتذہ کی سوسائٹی، علماء کی سوسائٹی، علماء کی سوسائٹی اور مشہور علماء اور تقلید کے ذرائع میں سے سید علی خامنہ ای، نوری ہمدانی، مکارم شیرازی، شبیری زنجانی، سبحانی، مظاہری، محیگ داماد، علوی گورگانی، جوادی آملی،[26] سید حسن خمینی اور سید امر حکیم نے تعزیتی پیغام بھیجا[27]۔[28] [29] ایک تعزیتی پیغام میں، خامنہ ای نے ان کا تذکرہ ایک الہی عالم، توحید کے متلاشی، سائنس دان اور فن کی ذہانت اور نایاب شخصیات میں سے ایک کے طور پر کیا۔ 4 مہر کی شام، اس نے آملی کے جسم پر دعا کی۔

5 مہر کو جنازے کے بعد ان کی میت کو 6 مہر کو گاؤں ایرائی لاریجان میں اور اس قبر میں دفن کیا گیا جو انہوں نے اپنے گھر کے صحن میں اپنی بیوی کے لیے بنائی تھی۔ [30][31]

استادان[ترمیم]

ان کے ممتاز پروفیسروں میں: [32]

طلباء[ترمیم]

خصوصی طلباء - سلوکی: [36]

  • رضا والئی ابو سعید آملی کے نام سے جانا جاتا ہے [37] [38]
  • داؤد صمادی آملی
  • حسن رمضانی
  • مہدی سمندری
  • محمود امامی نجف آبادی
  • یدالله یزدان پناه

وہ لوگ جنہوں نے کسی نہ کسی صورت میں اس سے فائدہ اٹھایا ہے:

  • سید حسن امین [39]
  • اسماعیل منصوری لاریجانی
  • نوراللہ طبرسی۔
  • حیدر ضیائی
  • سید علی حسینی آملی
  • مہدی احدی

آثار[ترمیم]

حسن زادہ آملی نے فقہ، فلسفہ، اخلاقیات، تصوف، مذہبی حکمت، الہیات، حدیث اور انسان، قرآن کی تفسیر، ریاضی اور فلکیات، عربی اور فارسی ادب، طبیعیات، قدیم طب، غیر ملکی اور باطنی کے شعبوں میں کام کیا ہے۔ سائنسز حسن زادہ آملی کی تخلیقات موضوع کے لحاظ سے: [40][41]

صوفیانہ

  1. الهی نامه[42]
  2. تصحیح رساله مکاتبات
  3. تصحیح و تعلیق تمهید القواعد
  4. تصحیح و تعلیق رساله تحفه الملوک
  5. تصحیح و تعلیق شرح فصوص خوارزمی
  6. تصحیح و تعلیق شرح فصوص قیصری
  7. رساله انّه الحق
  8. رساله‌ای در سیر و سلوک
  9. رساله لقاءالله
  10. رساله مفاتیح المخازن
  11. رساله نور علی نور در ذکر و ذاکر و مذکور
  12. شرح طائفه‌ای از اشعار و غزلیات حافظ
  13. شرح فصوص الحکم
  14. عرفان و حکمت متعالیه
  15. قرآن و عرفان و برهان از هم جدایی ندارد
  16. کلمه علیا در توقیفیت اسماء
  17. مشکات القدس علی مصباح الأنس
  18. منشئات
  19. وحدت از دیدگاه عارف و حکیم
  20. ولایت تکوینی

فلسفی

  1. الاصول الحکمیه
  2. الحجج البالغه علی تجرد النفس الناطقه
  3. النور المتجلّی فی الظّهور الظّلّی
  4. ترجمه و تعلیق الجمع بین الرّأیین
  5. ترجمه و شرح سه نمط آخر اشارات
  6. تصحیح و تعلیق شفا
  7. تصحیح و تعلیق اشارات
  8. تقدیم و تصحیح و تعلیق آغاز و انجام
  9. تقدیم و تعلیق راسله اتحاد عاقل به معقول
  10. دررالقلائد علی غررالفرائد
  11. دروس اتحاد عاقل به معقول
  12. رساله اعتقادات
  13. رساله العمل الضابط فی الرّابطی و الرابط
  14. رساله‌ای در اثبات عالم مثال
  15. رساله جعل
  16. رساله رؤیا
  17. رساله مثل
  18. رساله نفس الأمر
  19. رساله نهج الولایه
  20. رساله فی التضّادّ
  21. صد کلمه
  22. عیون مسائل نفس و سرح العیون فی شرح العیون
  23. گشتی در حرکت
  24. گنجینه گوهر روان
  25. معرفت نفس
  26. مفاتیح الأسرار لسلّاک الاسفار
  27. من کیستم
  28. نثرالدّراری علی نظم اللئالی
  29. نصوص الحکم بر فصوص الحکم

کلامی

  1. تقدیم و تصحیح و تعلیق رساله قضا و قدر محمد دهدار
  2. تقدیم و تصحیح و تعلیق کشف المراد فی شرح تجرید الاعتقاد
  3. رساله حول الرؤیه
  4. رساله خیر الاثر در رد جبر و قدر
  5. رساله فی الامامه
  6. فصل الخطاب فی عدم تحریف الکتاب ربّ‌الارباب

تفسیری

  1. انسان و قرآن
  2. تصحیح خلاصه تفسیر المنهج الصادقین

روایی

  1. انسان کامل از دیدگاه نهج البلاغه
  2. تصحیح سه کتاب ابی الجعد، نثراللئالی، طبّ الائمه
  3. تصحیح نهج البلاغه
  4. تکمله منهاج البراعه
  5. رساله‌ای در اربعین
  6. شرح چهل حدیث در معرفت نفس
  7. مصادر و مآخذ نهج البلاغه

رجالی

  1. اضبط المقال فی ضبط اسماء الرجال
  2. وجیزه‌ای در ترجمه و شرح زندگی علامه طباطبایی قدس سرّه

فقهی

  1. تعلیقات علی العروه الوثقی
  2. مجیزه‌ای در مناسک حج

ریاضی و هیوی

  1. استخراج جداول تقویم
  2. تصحیح و تعلیق اکر مانالاوس
  3. تصحیح و تعلیق الدّر المکنون و الجوهر المصون
  4. تصحیح و تعلیق تحریر اقلیدس
  5. تصحیح و تعلیق تحریر اکر ثاوذوسیوس
  6. تصحیح و تعلیق تحریر مجسطی
  7. تصحیح و تعلیق تحریر مساکن ثاوذوسیوس
  8. تصحیح و تعلیق شرح بیرجندی بر بیست باب
  9. تصحیح و تعلیق شرح بیرجندی بر زیج الغ بیک
  10. تصحیح و تعلیق شرح چغمینی
  11. تعلیقه بر رساله قبله مولی مظفر
  12. دروس معرفت اوفاق
  13. دروس معرفه الوقت و القبله
  14. دروس هیئت و دیگر رشته‌های ریاضی
  15. رساله‌ای پیرامون فنون ریاضی
  16. رساله‌ای در مطالب ریاضی
  17. رساله ظلّ
  18. رساله میل کلی
  19. رساله تعیین سمت قبله مدینه
  20. رساله تکسیر دائره
  21. رساله فی الصبح و الشفق
  22. رساله فی تعیین البعد بین المرکزین و الاوج
  23. شرح زیج بهادری
  24. شرح قصیده کنوزالاسماء
  25. سی فصل در دائره هندیه

ادبی

  1. امثال طبری
  2. تصحیح کلیله و دمنه
  3. تصحیح گلستان سعدی
  4. تصحیح و اعراب اصول کافی
  5. تعلیقه بر باب توحید حدیقه الحقیقه
  6. تعلیقه بر قسمت معانی مطوّل
  7. دیوان اشعار (کتاب «تنظیم و تصحیح دیوان اشعار علامه حسن‌زاده آملی» مجموعه‌ای است از اشعار وی که توسط سید سعید هاشمی و امیر عباس جلیلی جمع‌آوری شده و انتشارات «الف. لام. میم» آن را منتشر کرده‌است.[43])
  8. قصیده ینبوع الحیات
  9. مصادر اشعار منسوب به امیرالمؤمنین علیه السّلام
  10. تقدیم و تصحیح و تعلیق نصاب الصبیان

آثار متفرقه

  1. تقدیم و تصحیح و تعلیف خزائن
  2. ده رساله فارسی
  3. کشکول
  4. مجموعه مقالات
  5. مصاحبات
  6. هزار و یک نکته
  7. هزار و یک کلمه
  8. رساله رموز کنوز

خود علم کے اسباق[ترمیم]

حسن زادہ آملی کی کتاب خود شناسی کے اسباق، جس میں 153 اسباق ہیں، جن میں خود شناسی، انسانی طاقتوں کی پہچان، برہمیت اور نفس کی اعلیٰ برہمی کی حیثیت کو ثابت کرنے، روح اور جسم کا آپس میں تعلق کے موضوعات شامل ہیں۔ سائنس، سائنس اور اس کے کنٹینر کے درمیان تعلق، منطق، مدیون کے مذہب پر تنقید، مادے کی دنیا، تخیل کی دنیا اور عقل کی دنیا، خواب - خوابوں کی تعبیر اور تعبیر، سائنس اور دنیا کا اتحاد اور معلوم، انسان اور حیوان اور نباتات میں فرق، پورے دماغ اور پوری روح، پہلا کمال اور دوسرا کمال، عملی وجہ اور نظریاتی وجہ، فرشتے، انسانی کامل، بخاری کی روح اور انسانی روح، سائنس اور مشق، فکری علم اور بدیہی علم، تزکیہ نفس، قیامت اور قیامت کے ارتقاء کا جائزہ لیا گیا ہے۔

اشعار[ترمیم]

اسی عمر میں حسن زادہ آملی نے سعدی کی گلستان و بوستان اور جامی کی بہارستان کی کتابوں کا مطالعہ شروع کیا۔ حسن زادہ آملی کی تصانیف میں سے ایک نظم دیوان ہے جس میں تقریباً پانچ ہزار اشعار ہیں اور یہ غزل، چوکڑی، اوڈے اور ترجی بینڈ کی صورت میں لکھی گئی ہیں لیکن زیادہ تر اشعار غزل کی شکل میں ہیں اور لحاظ سے صوفیانہ ہیں۔ ترقی کی. حسن زادہ کی دیوان نظمیں ماضی کے شاعروں جیسے حافظ ، مولوی اور محمود شبستری کے انداز میں لکھی گئی ہیں۔

اس کے بارے میں کام[ترمیم]

فلمیں اور دستاویزی فلمیں۔[ترمیم]

  • حسن کی نظم
  • ایف آئی آر کی داستان
  • علامہ دہر
  • مشہور شخصیات

یادگاری[ترمیم]

تعریف[ترمیم]

  • الہیات میں ایران کا پائیدار چہرہ 2002

ذرائع[ترمیم]

  1. علامه حسن‌زاده آملی دار فانی را وداع گفت + زندگی نامه — اخذ شدہ بتاریخ: 26 ستمبر 2021 — سے آرکائیو اصل فی 26 ستمبر 2021 — شائع شدہ از: 25 ستمبر 2021
  2. Identifiants et Référentiels — اخذ شدہ بتاریخ: 13 مئی 2020
  3. "عیادت نماینده وزیر بهداشت از علامه حسن زاده آملی". دنیای اقتصاد. 
  4. "ماجرای زندانی شدن علامه حسن‌زاده آملی در عالم مکاشفه". خبرگزاری فارس. 
  5. "زاده آملی مصاحبه بااستاد آیت‌الله حسن‌زاده آملی/ قسمت اول". 25 ستمبر 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  6. "هیئت مصاحبه بااستاد، آیت‌الله حسن‌زاده آملی/ قسمت دوم". 24 ستمبر 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  7. "علامه ذوالفنون: تجلیل از مقام علمی علامه حسن‌زاده آملی". 15 نومبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  8. "علامه ذوالفنون: تجلیل از مقام علمی علامه حسن‌زاده آملی". 15 نومبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  9. "دیوان اشعار حسن زاده آملی - ویکی‌نور، دانشنامهٔ تخصصی". 
  10. متن کامل ابیات طبری علامه حسن زاده آملی آرکائیو شدہ 2017-07-30 بذریعہ وے بیک مشین مشکلات ولایت
  11. "چهره‌های ماندگار ایران". 
  12. "اقامه نماز رهبر انقلاب بر پیکر آیت‌الله حسن‌زاده آملی". 
  13. "⚫️ حسن زاده مسافرت کرد ⚫️ گفتاری از علامه: آقایان داریم خداحافظی می‌کنیم | خبرگزاری بین‌المللی شفقنا". 
  14. "آرکائیو کاپی". 24 نومبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  15. از شرح دفتر دل، باب یازدهم، جلد ۲، شارح صمدی آملی.
  16. "نسخه آرشیو شده". ۸ دسامبر ۲۰۱۵ میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ ۶ دسامبر ۲۰۱۵. 
  17. http://www.ebnearabi.com/367/سؤالات-شاگردی-از-استاد-حسن-زاده-آملی.html
  18. بررسی دیدگاه‌های عرفانی علامه حسن زاده در گفتگو با یدالله یزدان پناه، هفته نامه پنجره، شماره 83. اسفند 1389
  19. "عالم و عارفی که در کلام و عمل کنار مردم و انقلاب بود". 
  20. اسناد انقلاب اسلامی، ج 3، 158-188. 
  21. حسن‌زاده آملی، انسان در عرف عرفان، ۱۳۸۰ش، ص۷. 
  22. http://www.tabnak.ir/fa/news/169537/تجليل-از-مقام-علمي-آيت‌الله-حسن‌زاده-آملي
  23. "علامه حسن‌زاده آملی دار فانی را وداع گفت | خبرگزاری بین‌المللی شفقنا". 
  24. "iribnews.ir". 
  25. "تجلیل مراجع‌تقلید و علما در پیام‌های تسلیت خود از علامه حسن‌زاده آملی". 
  26. "پیام‌های تسلیت مسئولان در پی درگذشت آیت‌الله "حسن‌زاده آملی"". 
  27. https://www.irna.ir/news/84484271/شخصیت-ها-و-مقامات-رحلت-آیت-الله-حسن-زاده-آملی-را-تسلیت-گفتند
  28. https://www.irna.ir/news/84484271/شخصیت-ها-و-مقامات-رحلت-آیت-الله-حسن-زاده-آملی-را-تسلیت-گفتند
  29. "دفن حسن زاده آملی". 
  30. "محل دفن علامه حسن زاده آملی در منزلش". 
  31. "بایگانی‌های اساتید". 
  32. قاضی، سید مهدی آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ hawzah.net (Error: unknown archive URL) حوزه نت
  33. http://hekmateislami.com/showdata.aspx?dataid=5130&siteid=1
  34. "⚫️ حسن زاده مسافرت کرد ⚫️ گفتاری از علامه: آقایان داریم خداحافظی می‌کنیم | خبرگزاری بین‌المللی شفقنا". 
  35. "آرکائیو کاپی". 04 دسمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2022. 
  36. عکس/ علامه حسن‌زاده آملی و ابوسعید آملی آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ farsnews.com (Error: unknown archive URL) فارس نیوز
  37. "⚫️ حسن زاده مسافرت کرد ⚫️ گفتاری از علامه: آقایان داریم خداحافظی می‌کنیم | خبرگزاری بین‌المللی شفقنا". 
  38. "چشم‌انداز آینده فلسفه خیلی درخشان نیست". 30 سپتامبر 2020 میں اصل |archive-url= بحاجة لـ |url= (معاونت) سے آرکائیو شدہ. 
  39. "مجمع عالی حکمت اسلامی". 
  40. "کتابنامه علامه حسن زاده آملی". 
  41. "الهی نامه - اثر آیت الله حسن زاده آملی". 
  42. "«تنظیم و تصحیح دیوان اشعار علامه حسن‌زاده آملی» منتشر شد". خبرگزاری کتاب ایران. 

بیرونی روابط[ترمیم]